الغزالی

نومبر
30
by محمدداؤدالرحمن علی at ‏12:23 PM
(206 مناظر / 0 پسند کردہ)
0 تبصرہ جات
*"دوست تین طرح کے ہوتے ہیں!"*

✍ شيخ *محمد بن صالح العثیمین* رحمه الله فرماتے ہیں کہ دوستوں کی *تین* قسمیں ہیں :

❶ *صديق منفعة :*
*- جس کی دوستی صرف فائدے تک ہو -*

اس کی دوستی تب تک ہوتی ہے جب تک وہ آپ کے مال اور منصب وغیرہ سے فائدہ اٹھا سکے. جب وہ فائدہ منقطع ہو گیا تو دوستی بھی ختم ؛ تو کون تو میں کون ؟! اور اکثریت انہی کی ہے ...
آپ خود دیکھیے کہ آپ کی کسی سے گہری دوستی ہو. آپ کے خیال میں وہ آپ کا سب سے معزز دوست ہو اور آپ اس کے بہترین دوست ہوں. ایک دن وہ آپ سے پڑھنے کیلیے آپ کی کتاب مانگتا ہے. آپ کہتے ہیں کہ بھائی کل مجھے خود اس کتاب کی ضرورت ہے. اسی بات پر وہ آپ سے غصہ ہو جاتا ہے اور دشمنی پر اتر آتا ہے. کیا یہ آپ کا دوست ہے؟! نہیں، یہ فائدے کا دوست ہے.

❷ *صديق لذة :*
*- جس کی دوستی محض موج مستی ہو -*

ایسا دوست جس کی دوستی صرف وقت گزاری کیلیے ہے. گپ شپ، پیار محبت کی باتیں اور رَت جگے بس. نہ آپ کو کوئی فائدہ پہنچاتا ہے اور نا آپ اس سے کوئی فائدہ لے سکتے ہیں. یہ دوست وقت کا ضیاع ہے. اس سے بھی بچیں.

❸ *صديق فضيلة :*
*- جس کی دوستی باعثِ شرف ہے -*

جو آپ کو خوبصورت کام کرنے پر...
نومبر
30
by محمدداؤدالرحمن علی at ‏12:22 PM
(183 مناظر / 0 پسند کردہ)
0 تبصرہ جات
کہتے ہیں ایک بدو کسی شہری بابوکا مہمان ہوا۔ میزبان نے ایک مرغی ذبح کی۔ جب دسترخوان بچھ گیا تو سب آموجود ہوئے۔ میزبان کے گھر میں کل چھ ( 6 ) افراد موجود تھے ؛دو میاں بیوی، دو ان کے بیٹے اور دو بیٹیاں۔ میزبان نے بدو کا مذاق اڑانے کا فیصلہ کرلیا۔

میزبان: آپ ہمارے مہمان ہیں۔ کھانا آپ تقسیم کریں۔

بدو: مجھے اس کا کوئی تجربہ نہیں لیکن اگر آپ کا اصرارہے تو کوئی بات نہیں۔ لائیے! میں ہی تقسیم کر دیتا ہوں۔

بدو نے یہ کہہ کر مرغی اپنے سامنے رکھی، اس کا سرکاٹا اور میزبان کی طرف بڑھاتے ہوئے کہا ”آپ گھر کے سربراہ ہیں لہذا مرغی کا سر، ایک سربراہ کو ہی زیب دیتا ہے“۔ اس کے بعد مرغی کا پچھلا حصہ کاٹا اور کہا ”یہ گھر کی بیگم کے لیے“۔ پھر مرغی کے دونوں بازو کاٹے اور کہا ”بیٹے اپنے باپ کے بازو ہوتے ہیں۔ پس بازوبیٹوں کے لیے“۔ بدو نے بیٹیوں کی طرف دیکھا اور کہا ”بیٹیاں کسی بھی خاندان کے وقار کی بنیاد ہوتی ہیں اورسارے خاندان کی عزت ان کے وقار پر کھڑی ہوتی ہے“۔ یہ کہہ کر مرغی کے دونوں پاؤں کاٹے اورمیزبان کی بیٹیوں کو دے دیے۔ پھر مسکراکر کہنے لگا ”جو باقی بچ گیا ہے وہ مہمان کے لیے“۔

میزبان کا شرمندگی سے برا...
ستمبر
26
70435472_2165240383768569_7311638662695878656_n.jpg
by محمدداؤدالرحمن علی at ‏2:22 PM
(274 مناظر / 1 پسند کردہ)
0 تبصرہ جات
حفاظت کی دعاؤں میں ایک بہت ہی اہم دعا

جو حضور اکرم ﷺ نے اپنے خادمِ خاص حضرت انس رضی اللہ عنہ کو سکھلائی تھی، اس کی برکت سے وہ ہر قسم کے مظالم اور فتنوں سے محفوظ رہے،حضرات علماء و طلباء و مبلغینِ اسلام اور تمام اہلِ اسلام صبح و شام اس دُعا کو پڑھا کریں ، اِن شاء اللہ انہیں کسی قسم کی کوئی تکلیف نہیں پہنچے گی.

ابنِ عساکر نے اپنی تاریخ میں یہ واقعہ روایت کیا ہے کہ ایک دن حضرت انس رضی اللہ عنہ حجاج بن یوسف ثقفی کے پاس بیٹھے تھے، حجاج نے حکم دیا کہ ان کو مختلف قسم کے چار سو گھوڑوں کا معائنہ کرایا جائے، حکم کی تعمیل کی گئی، حجاج نے حضرت انس رضی اللہ عنہ سے کہا: فرمائیے ! اپنے آقا یعنی حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس بھی اس قسم کے گھوڑے اور ناز و نعمت کا سامان کبھی آپ نے دیکھا؟ فرمایا: بخدا! یقینا میں نے حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس بدرجہا بہتر چیزیں دیکھیں اور میں نے حضور اکرم ﷺ سے سنا کہ آپ ﷺ فرماتے تھے: جن گھوڑوں کی لوگ پروَرِش کرتے ہیں ، ان کی تین قسمیں ہیں :
ایک شخص گھوڑا اس نیت سے پالتا ہے کہ حق تعالیٰ کے راستے میں جہاد کرے گا اور دادِ شجاعت دے گا، اس...​