اسم مبارک احمداورمحمدکے معجزے

'سیرت سرور کائنات ﷺ' میں موضوعات آغاز کردہ از مفتی ناصرمظاہری, ‏فروری 24, 2014۔

  1. مفتی ناصرمظاہری

    مفتی ناصرمظاہری کامیابی توکام سے ہوگی نہ کہ حسن کلام سے ہوگی منتظم اعلی

    پیغامات:
    1,731
    موصول پسندیدگیاں:
    207
    صنف:
    Male
    جگہ:
    India
    اسم مبارک احمداورمحمدکے معجزے

    مفتی ناصرالدین مظاہری
    عجیب وغریب درخت:
    مشہورسیاح ابن بطوطہ نے دوران سیاحت عجیب وغریب چیزوں کا مشاہدہ کیا تھا لکھتا ہے کہ دہ پٹن بڑا شہر ہے جس کی جامع مسجد کے سامنے ایک بڑا درخت کھڑا ہے، اس کے پتے انجیر کے پتوں کے مشابہ ہیں لیکن اس سے ذرانرم ہیں اس درخت کے گردایک دیوار بنی ہوئی ہے ایک محراب بھی ہے میں نے وہاں دورکعتیں اداکی ہیں اس درخت کو درخت شہادت کہتے ہیں ۔
    لوگ بیان کرتے ہیں کہ ہرخریف کے موسم میں اس درخت سے ایک پتہ پہلے ذرد ہوتا ہے پھرسرخ ہوتا ہے اس کے بعد گرپڑتا ہے اوراس پتے پر لاالہ الا اللّٰہ محمد رسول اللّٰہ لکھاہوتا ہے، فقیہ حسن اوردوسرے ثقہ لوگوں نے گواہی دی ہے کہ ہم نے اس پتہ کودیکھا ہے اورکلمۂ طیبہ لکھا ہواپڑھاہے، جب یہ پتہ گرتا ہے تواس کانصف حصہ تو مسلمان لے لیتے ہیں اورنصف حصہ راجہ کے خزانہ میں رکھاجاتا ہے، اس پتہ سے بہت سے بیماروں کو شفاہوتی ہے، اسی پتہ کودیکھ کر راجہ کو مل مسلمان ہواتھا اوراس نے یہ جامع مسجد بنوائی تھی۔ ( سفرنامہ ابن بطوطہ )
    عجیب وغریب پھل:
    بعض مشائخ سے مروی ہے فرماتے ہیں کہ میں ہندوستان گیاوہاں ایک شہر میں پہنچا وہاں ایک درخت تھا جس کے پھل بادام کے مشابہ تھے اس کے دو چھلکے ہوتے تھے جب انہیں توڑاجاتا تھا تو اس کے اندرایک لپٹا ہوا سبز ورق نکلتا تھا جب اسے کھولا جاتا تھا تو اسکے اندر فطری طور پرسرخ روشنائی سے لاالہ الااللّٰہ محمدرسول اللّٰہ لکھاہوتاتھا اوراہل ہند اس سے تبرک حاصل کرتے تھے ،جب بارش رک جاتی تھی تواس کے وسیلہ سے طلب باران کرتے تھے اوراس کے پاس گڑگڑاکررویاکرتے تھے ۔(عجائب الامصار)
    عجیب وغریب مچھلی:
    ابویعقوب صیادفرماتے ہیں کہ جب میں شکارکی خاطر ایلہ میں تھا تو میں نے ایک مچھلی شکار کی جس کے دائیں جانب لاالہ الا اللہ اوربائیں جانب محمدرسول اللہ لکھاہواتھا میں نے جب یہ دیکھاتو اسے دوبارہ دریامیں ڈال دیا۔
    پراناپتھر:
    شفامیں مذکورہے کہ ایک بہت پراناپتھرملاجس پرلکھاہواتھامحمدتقی مصلح امین’’محمدمتقی اصلاح کرنے والے اورامانت دارہیں‘‘
    لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ:
    زہریؒ سے روایت ہے کہ ایک پتھرپریہ عبارت لکھی ہوئی تھی:
    ’’باسمک اللہم جاء الحق من ربک بلسان عربی مبین لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ وکتبہ موسیٰ بن ہارون‘‘
    اے اللہ تیرے نام کے ساتھ واضح عربی زبان میں تیرے رب کی طرف سے حق آیا،اللہ کے سواکوئی معبودنہیں محمدصلی اللہ علیہ وسلم اللہ کے رسول ہیں،اوراس کوموسیٰ بن عمران نے لکھا‘‘
    خراسان کا ایک بچہ :
    خراسان میں ایک بچہ پیداہواجس کے دائیں پہلوپرلاالہ الااللہ اوربائیں پہلوپرمحمدرسول اللہ لکھاہواتھا۔
    گلاب کا پھول :
    ہندوستان کے ایک شہرمیں یک دفعہ گلاب کاایک پھول پایاگیاجس پرلاالہ الااللہ محمدرسول اللہ لکھاہواتھا۔
    سرخ پھول:
    علامہ ابن مرزوق نے عبداللہ بن صوحان سے یہ ذکرکیاہے کہ ہم بحرہندکے تھپیڑوں میں گھرے ہوئے تھے کہ سخت طوفان نے ہمیں آلیا،اس طرح ہم ایک جزیرے میں پہنچ گئے وہاں ہم نے سرخ گلاب کاایک پھول دیکھاجس کی خوشبوسونگھنے میں نہایت عمدہ اوروہ پھول دیکھنے میں بڑادلکش تھااس میں سفیدرنگ سے لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ لکھاہواتھااورایک سفید رنگ کاپھول تھاجس پرزردرنگ سے یہ لکھاہواتھا’’برأۃ من الرحمن الرحیم الی جنات نعیم لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ‘‘۔
    سیاہ رنگ کاپھول:
    تاریخ ابن عدیم میں علی بن عبداللہ ہاشمی الرفی سے منقول ہے کہ انہوں نے ہندکی کسی بستی میں ایک سیاہ رنگ کابڑاپھول دیکھاجس کی خوشبوبڑی نفیس اورخوش کن تھی اس پرسفیدرنگ میں یہ تحریرتھالاالہ الااللہ محمدرسول اللہ ۔ابوبکرالصدیق،عمرالفاروق۔
    راوی کہتے ہیں کہ مجھے اس میں شک ہواکہ کہیں یہ مصنوعی تونہیں ،تومیں نے اس کواندازہ کرنے کے لئے ٹٹولااورغورکیاتووہ مصنوعی چیزکی طرح نہیں کھلا،وہ یقیناًقدرتی امرتھا،اس بستی میں اس قسم کی کئی چیزیں موجودتھیں اوروہاں کے باشندے پتھرکوپوجتے تھے وہ اللہ تعالیٰ کونہیں پہچانتے تھے۔
    سبزرنگ کاپتہ :
    عبداللہ بن مالک کہتے ہیں میں ہندکی سرزمین میں داخل ہواتوایک شہرکی طرف ہولیا،جس کونمیلہ یاثمیلہ کہاجاتاہے میں نے وہاں ایک بہت بڑادرخت دیکھاجس پربادام کی طرح کاچھلکے دارپھل لگاہواتھاجب میں نے اس کاایک دانہ توڑاتواس سے ایک سبزرنگ کاپتہ نکلاجس میں سرخ رنگ میں یہ تحریرتھا’’لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ ‘‘اہل ہنداس کوبطورتبرک استعمال کرتے اورجب بارش نہ ہوتی تواس کے توسل سے دعامانگتے اوردعاقبول ہوتی۔
    لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ:
    علامہ یافعی یمنی نے اپنی کتاب روض الریاحین میں کسی کتاب سے نقل کیاہے :اس نے سرزمین ہندمیں ایک درخت دیکھاجس پربادام کی طرح چھلکے دارپھل تھا،جب اس نے توڑاتواس سے تروتازہ ایک سبزرنگ کاپتہ نکلا،جس پرجلی حروف سے سرخ رنگ میں یہ تحریرتھا’’لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ‘‘وہاں کے لوگ اس سے برکت حاصل کرتے تھے۔
    کہتے ہیں کہ میں نے یہ واقعہ ابویعقوب الصباء سے بیان کیاتوانہوں نے کہاکتناعظیم امرہے اس کے بعدانہوں نے خوداپنا واقعہ بیان کیا۔
    حیرت انگیزمچھلی:
    ابویعقوب الصباء کہتے ہیں میں نہرابلہ پرشکارکررہاتھاکہ ایک مچھلی میرے جال میں آئی جس کے دائیں پہلوپر لاالہ الااللہ اوربائیں پہلوپرمحمدرسول اللہ لکھاہواتھا۔جب میں نے یہ ماجرادیکھاتواس نام پاک کی تعظیم کی وجہ سے اس کوپھردریامیں ڈال دیا۔
    خوش قسمت مچھلی:
    علامہ مرزوق نے قصیدہ بردہ کی شرح میں کسی شحص کے حوالہ سے نقل کیاکہ وہ جب مچھلی کے شکارسے واپس آیاتواس میں ایک مچھلی ایسی تھی جس کے ایک کان کی لوپرلاالہ الااللہ اوردوسرے کان کی لوپرمحمدرسول اللہ لکھاہواتھا۔
    عجیب وغریب تربوز:
    ایک جماعت سے منقول ہے کہ انہوں نے ایک تربوزدیکھاجس میں سفیدرنگ کی قدرتی کئی لکیریں تھیں اورہرایک لکیرکی ایک طرف عربی رسم الخط میں اللہ اوردوسری جانب عزاحمدلکھاہواتھا۔اوریہ تحریراتنے واضح خط میں تھی کہ کوئی بھی خط سمجھنے والااس میں شک نہیں کرسکتا۔
    اسم محمدﷺ:
    ایک شخص نے نو سال یاسات سال میں آٹھ سوایسے دانے دیکھے جن میں واضح خط کے ساتھ سیاہ رنگ میں تحریرتھا’’محمد‘‘
    حیرت انگیزپتے:
    ابن طغربک السیاف کی کتاب’’النطق المفہوم‘‘میں کسی کے حوالہ سے منقول ہے کہ اس نے ایک جزیرہ میں بہت بڑادرخت دیکھاجس کے پتے بڑے اورخوشبودارتھے جن کی رنگت میں سرخ اورسفیدکتابت واضح تھی اورقدرتی ہونے کابین ثبوت تھی،جس کواللہ تعالیٰ نے اپنی قدرت سے بنایا،ہرپتے میں تین سطورتھیں،پہلی پرلاالہ الااللہ دوسری پرمحمدرسول اللہ اورتیسری پران الدین عنداللہ الاسلام تحریرتھا۔
    آسمان پراسم محمدﷺ:
    * ۱۹۲۶ء میں الہ آباد میں، ۱۹۲۷ء میں جبل پور، بھوپال ،بریلی اور ساگر میں،۱۹۲۸ء میںآگرہ ،پرتاپ گڑھ ،فرید پور، اورامرتسر میںآسمان پرنورانی قلم سے اسم گرامی محمدلکھا دیکھا گیا ۔
    * الہ آبا د میں اس منظر کا نظارہ کرنے والے خوش نصیبوں کا کہنا ہے کہ ۲ ؍فروری ۱۹۲۶ء کو غروب آفتاب کے بعد آسمان پر ایک سیدھا چمکتا ہوا خط نہایت تیزی کے ساتھ مثل بجلی کے ظاہر ہوا ،اس کے بعد اس میں حرکت پیدا ہوئی ،جس سے پہلے ’’میم‘‘ پھر’’ح‘‘ پھر ’’میم‘‘ اور’’د ‘‘بنا اوراس طرح بخط عربی محمد صلی اللہ علیہ وسلم کانام مبارک آسمان پر جگمگا اٹھا ،یہ صورت تقریباً ۱۵؍منٹ قائم رہی ۔
    * بھوپال میں اس واقعہ کامشاہد ہ کرنے والوں کا بیان ہے کہ ۸؍فروری ۱۹۲۷ء کو بعد نماز مغرب انہوں نے دیکھا کہ آسمان کی مغربی سمت میں جہاں ایک چمکدار ستارہ شام سے نکلتا ہے ،اس ستارہ کے قریب اوربہت ہی روشن ستارہ ٹوٹا جس سے ایک روشن سی لکیر بن گئی جو رفتہ ترتیب پاکر نام محمد صلی اللہ علیہ وسلم میں تبدیل ہوگئی ،یہ کیفیت تقریباً نصف گھنٹہ تک قائم رہی (شہادت کائنات )
    * ۱۹۶۷ء میں نواب شاہ میں ایسا ہی ایک واقعہ پیش آیا ، مئی کے پہلے عشرہ میں ایک روزغروب آفتاب کے کافی دیربعد مغرب کی طرف آسمان پر روشنی کی تیز شعائیں نظر آئیں جو دیکھتے دیکھتے اسم مبارک محمدصلی اللہ علیہ وسلم میں تبدیل ہوگئیں ، یہ ایمان افروز نظارہ بھی تقریباً ۲۰ ؍منٹ تک نظر آیا اورعام لوگوں نے مشاہدہ کیا (روزنامہ مشرق لاہو ر ۱۰؍مئی ۱۹۶۷ء )
    بچے کی آنکھ میں اسم محمد:
    یمن ایک عربی ملک ہے وہاں پرایک بچہ پیداہواجس کی آنکھ کی سفیدپتلی میں سیاہ رنگ سے عربی رسم الخط میں اسم مبارک ’’محمد‘‘لکھاہواہے۔
    یہ ایک ایسی سچائی ہے جس کومختلف ویب سائٹوں نے نہ صرف بیان کیاہے بلکہ بچہ کی اس آنکھ کافوٹوبھی ڈاؤن لوڈکررکھاہے۔
    اسی جیساایک واقعہ پاکستان کے ایک گاؤں ’’محل‘‘میں بھی پیش آیاتھا،جس کی تفصیلات انٹرنیٹ پرتلاش کی جاسکتی ہیں۔
    چاندکے نیچے اسم محمد:
    اردومحفل نامی ایک اردوفورم پراظہارالحق نامی ایک صاحب لکھتے ہیں کہ کچھ دن پہلے میں مسجدکی طرف جارہاتھا،آسمان صاف تھا، میں نے چاندکے نیچے صاف طورپراسم گرامی’’محمد‘‘لکھاہوادیکھالیکن میرے پاس کیمرہ نہیں تھاکہ میں اس منظرکومحفوظ کرپاتا۔اسی ویب سائٹ پراس واقعہ کی شمشادنامی ایک صاحب نے تصدیق بھی کی ہے اورلکھاہے کہ میں نے بھی اس منظرکودیکھاتھا۔
    درخت کے سایہ سے اسم محمد:
    اسی ویب سائٹ پرشاکرالقادری صاحب لکھتے ہیں کہ میرے شہرمیں ایک درخت تھاجس کی شاخ کاسایہ قریب کی دیوارپر پڑتاتھا، ایک دن چمکداررات میں لوگوں نے یہ منظردیکھاکہ شاخوں سے چھن کرچاندکی جوروشنی دیوارپرپڑرہی تھی اس سے صاف اورنمایاں طورپراسم گرامی’’ محمد‘‘لکھاہواتھا۔
    کئی دنوں تک لوگوں نے یہ پرکیف منظردیکھالیکن افسوس کہ کسی نے اس شاخ کوتوڑدیااوراس وہاں کی پتیوں کومسل دیااس بارے میں شہرکے ایک امام صاحب نے بھی خصوصی کرداراداکیا۔کیونکہ انھیں شرک کااندیشہ محسوس ہورہاتھا۔
    بکری کے کان پراسم محمد:
    شاکرالقادری صاحب نے خوداپناواقعہ لکھاہے کہ میرے پاس ایک چھوٹی سی بکری تھی جوتین سال تک میرے یہاں پرورش پاتی رہی ۔ ایک دن ایک حیرت انگیزانکشاف ہواکہ اس بکری کے دائیں کان پرصاف اورواضح طورپراسم مبارک’’محمد‘‘لکھاہواہے۔
    اس بکری نے تین بچے دئے لیکن زچگی کے وقت مرگئی ،میں نے برکت اورثبوت کے لئے اس کاکان اپنے پاس محفوظ کرلیااوراس واقعہ کومشتہرکرنامناسب نہ سمجھا۔
    چاندکے گرداسم ’’محمد‘‘:
    پاکستان ہی کاایک اورواقعہ ہے کہ چندسال قبل غالباً۱۱؍ربیع الاول کی رات تھی،جب بہت سے لوگوں نے چاندکے گردخوبصورت اندازمیں تین طرف اسم مبارک’’محمد‘‘لکھاہوادیکھاتھااس کی تفصیلات بھی نیٹ پرموجودہیں۔
    احدپہاڑپراسم محمد:
    بعض ثقہ لوگوں نے بیان کیاکہ احدپہاڑمیں ایک جگہ پرکچھ شگاف ہوگئے ،ان شگافوں کوغورسے دیکھنے پرمعلوم ہواکہ صاف لفظوں میں اسم گرامی ’’محمد‘‘لکھاہواہے۔اس کافوٹواورویڈیوبعض ویب سائٹس نے ڈاؤن لوڈبھی کردیاہے۔
    ہرانسان کی ہڈیوں کے ڈھانچے میں اسم محمد:
    حیرت اس وقت مزیدہوتی ہے جب اسلام یاشارع اسلام کے تعلق سے دشمنان اسلام گواہی دینے لگیں اسی کو’’الفضل ماشہدت بہ الاعداء‘‘کہاگیاہے۔
    چنانچہ بعض ماہرین جسمیات نے گواہی دی ہے کہ ہرانسان کاہڈیوں کاجوڈھانچہ ہے وہ اسم’’محمد‘‘ہے،جس کوشک ہووہ ڈھانچے کوسیدھالٹادے پھراس کولفظوں میں پڑھنے کی کوشش کرے۔تصدیق ہوجائے گی۔
    کرۂ ارض میں اسم مبارک’’محمد‘‘:
    چندسال پہلے ایک ماہرارضیات مظاہرعلوم( وقف) سہارنپورکے ناظم ومتولی حضرت مولانامحمدسعیدی مدظلہ کی خدمت میں حاضرہوئے اورانہوں نے دلائل سے ثابت کیاکہ دنیاکاموجودہ نقشہ جومطبوعہ شکل میں بازاروں میں ملتاہے اس کودیدہ ودانستہ الٹاشائع کیاگیاہے،اگراس کوسیدھاکرکے شائع کردیاجائے توصاف اورواضح لفظوں میں ’’محمد‘‘بن جاتاہے،پھرانہوں نے ایساکرکے دکھلایابھی۔
    عجیب وغریب بھیڑ:
    ’’الخرج آن لائن‘‘نامی ویب سائٹ نے ایک عجیب وغریب بھیڑکانہ صرف فوٹوشائع کیاہے بلکہ لکھا ہے کہ یہ بھیڑجس کارنگ سیاہ ہے مگراس کے بائیں پہلوپرسفیدرنگ سے’’محمد‘‘لکھاہواہے۔ماہرین نے تحقیق کے بعدتصدیق کی ہے کہ یہ قدرتی امرہے۔
    سمندرکی تہوں میں اسم گرامی ’’محمد‘‘:
    مخملیات نامی عربی ویب سائٹ (www.mbc66.com)نے گوگل ارتھ کے ذریعہ سمندروں کے رازجاننے کی کوشش کی ، توانھیں ایک ایساحیرت انگیزسچ نظرآیاجس نے ہرصاحب دل ودماغ کواسلام کی سچائی جاننے اورماننے پرمجبورکردیا۔
    سمندرکی تہ پرجب گوگل ارتھ کے ذریعہ ماہرین کی نظرگئی توانھیں بھی صاف لفظوں میں’’محمد‘‘نظرآیا۔اورمذکورہ ویب سائٹ پراس روح پرورمنظرکی تصویربھی ڈاؤن لوڈکی ہے۔
    بہرحال دولفظوں میں اس پورے مضمون کاخلاصہ یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ نے عرش وقلم ،لوح وکرسی ،بروبحر،زمین وآسمان حتی کہ جنت کے درختوں کے پتے،ستاروں کی کہکشاؤں،چاندکی چاندنی اوراشجاروانہارکے جھرنوں ہرجگہ اپنے حبیب اورمحبوب کاعکس جمیل کمال جمال کے ساتھ ودیعت فرمادیاہے اورعاشقان رسول کوہرجگہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے نام نامی کی جھلکیاں نظرآتی ہیں۔چنانچہ
    * ۔۔۔ساق عرش پر۔۔۔لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ
    *۔۔۔لوح محفوظ پر۔۔۔لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ
    *۔۔۔جنت کے ہردروازے پر۔۔۔لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ
    *۔۔۔ہرصاحب ایمان کے سینوں میں۔۔۔لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ
    *۔۔۔ہرکلمہ گوکی زبانوں پر۔۔۔لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ
    *۔۔۔ہرمؤمن کے ذہن ودماغ میں۔۔۔لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ
    *۔۔۔ہرمذہب وملت کی کتابوں میں ۔۔۔لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ
    *۔۔۔درخت کے ہرپتہ پر۔۔۔لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ
    *۔۔۔سمندروں کے ہرقطرے میں۔۔۔لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ
    *۔۔۔دریاؤں کے ہرذرے میں۔۔۔لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ
    *۔۔۔پہاڑوں کے ہرپتھرپر۔۔۔لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ
    *۔۔۔باغات کے ہرپتہ پر۔۔۔لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ
    *۔۔۔پھول کی ہرپتی پر۔۔۔لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ
    *۔۔۔پھلوں کی ہرتازگی میں۔۔۔لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ
    *۔۔۔ہرانسان کی سانس والی نالی میں۔۔۔لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ
    *۔۔۔ہرانسان کے سینہ میں ۔۔۔لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ
    *۔۔۔حضرت آدم علیہ اسلام نے جب آنکھ کھولی توسامنے۔۔۔لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ
    الغرض عاشق صادق کواب بھی اپنے سامنے۔۔۔ لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ ۔۔۔اپنے اوپر۔۔۔لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ۔۔۔اپنے دائیں ۔۔۔لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ ۔۔۔اپنے بائیں ۔۔۔ لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ۔۔۔ہرسو۔۔۔ہرکو۔۔۔ہرجو۔۔۔ لاالہ الااللہ محمدرسول اللہ نظرآتاہے۔۔۔کیوں کہ یہی توہمارامتاع حیات ۔۔۔اور۔۔۔یہی ہماری زندگی کااثاثہ ہے۔
    لاالہ الااللّٰہ محمدرسول اللّٰہ
    محمدداؤدالرحمن علی، بنت حوا اور عامر نے اسے پسند کیا ہے۔
  2. مفتی ناصرمظاہری

    مفتی ناصرمظاہری کامیابی توکام سے ہوگی نہ کہ حسن کلام سے ہوگی منتظم اعلی

    پیغامات:
    1,731
    موصول پسندیدگیاں:
    207
    صنف:
    Male
    جگہ:
    India
    جگمگ جگمگ نام محمدﷺ
    مفتی ناصرالدین مظاہری
    حضرت محمدمصطفی صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات گرامی جس طرح نوع انسانی کے لئے رحمت ورأفت ہے اسی طرح آپ کے اسمائے سامی بھی امت کے لئے سراپارحمت ہیں چنانچہ بہت سی روایات اوراسلاف کے اثراس سلسلہ میں کتابوں میں موجودہیں جن سے اسم گرامی محمدواحمدکے فضائل اورمحاسن کااندازہ ہوتاہے ۔ جدیددورسے مرعوب ہوکرنئے اوربے معنیٰ نام رکھنے سے بہترہے کہ اپنے بچوں کے نام اپنے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے ذاتی نام محمداوراحمدرکھنے چاہئیں کیونکہ ان ناموں کی برکت کامظاہرہ دنیامیں بھی ہوتاہے اوراصل فائدہ تومرنے کے بعدظاہرہوگا۔
    اس سلسلہ میں سب سے پہلے حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ کی روایت پیش کروں گا:
    ’’جس گھرمیں محمدنام کاکوئی شخص ہوتاہے توحق تعالیٰ شانہ اس گھروالوں کی ہردن ورات برکت کے ساتھ نگہداشت فرماتے ہیں۔
    حضرت ابوہریرۃ رضی اللہ عنہ نقل فرماتے ہیں کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشادفرمایا:جس گھرمیں میرانام ہوگاتواس میں فقرداخل نہ ہوگا۔
    حضرت ابوامامہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ حضوراقدس صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:جس کے کوئی بچہ پیداہواوروہ بطوربرکت اس کانام محمدرکھے تووہ اوراس کابچہ دونوں جنت میں جائیں گے۔
    حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:قیامت کے دن اللہ تعالیٰ دوبندوں کواپنے سامنے گھڑاکریں گے اورپھرجنت میں داخل کرنے کاحکم صادرفرمائیں گے۔وہ دونوں عرض کریں گے کہ اے ہمارے رب ہم کس وجہ سے جنت کے مستحق ہیں ہم نے کوئی ایساکام نہیں کیاجس کابدلہ جنت ہے ،حق تعالیٰ شانہ ارشادفرمائیں گے کہ اے میرے بندو!جنت میں چلے جاؤ!میں نے قسم کھالی ہے کہ دوذخ میں احمدیامحمدنام کاکوئی شخص داخل نہ ہوگا۔
    اسی جیساایک ارشادحضرت حسن بصریؒ کاہے جس میں اللہ تعالیٰ اس بندے کوعاردلائے گااورفرمائے گاکہ تم نے اپنانام میرے حبیب کے نام پررکھاپھربھی گناہ کرتے ہوئے شرم نہیں آئی وہ بندہ اپنی گردن جھکاکراعتراف گناہ کرے گاتواللہ تعالیٰ اس سے فرمائیں گے کہ مجھے شرم آتی ہے کہ کسی بندے کانام میرے حبیب کے نام پرہوپھربھی میں اسے جہنم میں داخل کروں۔
    یہی نہیں بعض روایات سے معلوم ہوتاہے کہ جن اہم اموراورکاموں میں کسی محمدنامی شخص سے مشورہ لیاجائے اس میں خیرہوگی اورجس کام میں کسی محمدنامی فردسے مشورہ نہ لیاجائے اس میں خیرنہ ہوگی۔
    چنانچہ حضرت علی رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:
    جوجماعت کوئی مشورہ کرتی ہواوران کے ہمراہ احمدیامحمدنامی شخص ہوجس کووہ اپنے مشورہ میں شریک کرلیں تویہ ان کے لئے باعث خیرہے۔
    اورایک دوسری روایت میں نقل کیاہے کہ:
    جوجماعت مشورہ کے لئے اکٹھی ہواوراس میں محمدنامی شخص بھی ہواوروہ اس کواپنے مشورہ میں داخل نہ کرے توبرکت نہ ہوگی۔
    اسی طرح حضرت علی کرم اللہ وجہہ سے مروی ہے کہ جس دسترخوان پرمحمدیااحمدنامی کوئی شخص شریک ہوتووہ منزل دن میں دومرتبہ تسبیح وتقدیس بیان کرتی ہے ۔
    حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہاسے مروی ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشادفرمایا:
    جب بھی کوئی حلال کھاناکھایاجاتاہے اوراس میں وہ شخص بھی ہوجس کانام میرے نام پرہے توکھانے میں برکت دوچندہوجاتی ہے۔
    حضرت امام ابونعیم نے اپنی کتاب ’’حلیۃ الاولیاء‘‘میں حضرت نبیظ بن شریط رضی اللہ عنہ کی روایت نقل کی ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:کہ اللہ تعالیٰ نے فرمایاہے کہ مجھے اپنی عزت اورجلال کی قسم ہے جس کانام تمہارے نام پرہوگااسے دوزخ کاعذاب نہیں دوں گا۔
    حضرت انس بن مالکؓکی ایک روایت اس سے پہلے گزرچکی ہے ایک دوسری روایت میں نقل کرتے ہیں کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایاکہ اللہ تعالی ٰکاارشادہے :جس کانام میرے محبوب کے نام پرہواس کوعذاب دیتے ہوئے مجھے شرم آتی ہے۔
    حضرت شیخ عبدالحق محدث دہلویؒ نے مدارج النبوۃ میں ایک حدیث نقل کی ہے جس کامفہوم یہ ہے کہ جس شخص کانام محمدہوگا،نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم قیامت کے دن اس کی شفاعت فرمائیں گے۔
    سچ کہاہے محدث اعظم ؒ نے ؂
    محشرمیں گنہ گاروں کے لئے دامن کاسہاراکافی ہے
    دامن توبڑی شئی ہے مجھ کوتونام تمہاراکافی ہے
    سچ ہے سیدکابیکاررہا اس سے کوئی کام نہ ہوا
    ہمنام کے ذمہ دارہوتم تونام ہماراکافی ہے
    قاضی عیاض ؒ نے اپنی شفامیں لکھاہے کہ اللہ اوراس کے فرشتے بخشش ورحمت کرتے ہیں اس پرجس کانام محمدیااحمدہو۔(قصیدہ بردہ)
    ابن ابی عاصم نے ابن ابی فدیک سے انہوں ے جہم بن عثمان سے انہوں نے ابن جثیب سے انہوں نے اپنے والدسے اورانہوں نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے روایت کیاہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:جس نے میرے نام پراپنانام رکھااورمجھ سے برکت کی امیدرکھی تواس کوبرکت حاصل ہوگی اوروہ برکت قیامت تک جاری رہے گی۔(خصائص الکبریٰ)
    بہت سے لوگ ایک گھرمیں ایک نام سے زائدنام کومعیوب سمجھتے ہیں حالانکہ اگرکسی گھرمیں محمدیااحمدنام کے ایک سے زائدافرادہوں تواس گھرمیں اللہ کی رحمتیں اوربرکتیں بہت زیادہ ہوں گی۔
    چنانچہ اس بارے میں بھی ابن سعدنے اپنی طبقات میں ایک روایت نقل کی ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:اگرتم میں سے کسی کے گھرمیں ایک ایک یادویاتین محمدہوں توکیاحرج ہے تمہارے گھرمیں توبہت برکت ہوگی۔
    اسلاف نے بتایاہے اورکتابوں میں بھی موجودہے کہ اگرکسی شخص کانام محمدہوتواس کی برکت صرف اس کے گھرتک ہی محدودنہیں رہتی بلکہ اس کے پاس پڑوس والے بھی اس برکت سے فیضیاب ہوتے ہیں، چنانچہ حضرت مالک بن انسؓ سے روایت ہے کہ میں نے مکہ مکرمہ والوں سے سناہے کہ جس گھرمیں محمدنامی کوئی آدمی رہتاہووہ گھربرکت والاہے اوراس کے ہمسایوں کوبغیرکسی خاص مشقت کے رزق ملتارہتاہے۔(احکام شریعت)
    مدارج النبوۃ میں ایک روایت نقل کی گئی ہے :کوئی گھرنہیں ہے جس میں محمدنام والے ہوں مگریہ کہ حق تعالیٰ انھیں برکت نہ دے۔
    کتابوں میں تویہاں تک لکھاہواہے کہ اللہ تعالیٰ کے رحمت کے کچھ فرشتے ایسے ہیں جوروئے زمین پرٹہلتے رہتے ہیں اورجب انھیں کوئی گھرایساملتاہے جس میں محمدیااحمدنام کاکوئی شخص ہوتووہ فرشتے وہیں رک جاتے ہیں۔
    چنانچہ اس روایت کوقاضی صاحبؒ نے اپنی شفامیں نقل کیاہے وہ لکھتے ہیں کہ ’’اللہ کے مقررکردہ بعض فرشتے ہیں جوزمین میں گھومتے پھرتے ہیں اورجس گھرمیں کوئی محمدیااحمدنام کا آدمی رہتاہواس میں ٹھہرجاتے ہیں۔
    اسی لئے قاضی صاحبؒ نے مشورہ دیاہے کہ ہرمسلمان کوچاہئے کہ اس کے گھرمیں ایک بلکہ دوبلکہ تین لوگ کم ازکم محمدنامی ہوں توزیادہ سے زیادہ برکتوں کاحصول ہوسکے۔
    اب سنئے!بہت سے لوگ محمدنامی افرادکے ساتھ عام لوگوں جیساسلوک اورمعاملہ کرتے ہیں اس سلسلہ میں بھی ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے واضح ارشادات موجودہیں ۔
    حضرت جعفررضی اللہ عنہ کی روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشادفرمایا:
    جب تم نے کسی شخص کانام محمدرکھ دیاہوتواس کی تعظیم وتوقیرکرواوراس کوذلیل ورسوانہ کرواورنہ اس کوحقیرسمجھو۔
    حضرت علی رضی اللہ عنہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کاارشادنقل کرتے ہیں کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشادفرمایا:
    جب تم بچہ کانام محمدرکھ دوتواس کااعزازواکرام کرواورمجلس میں اس کے لئے کشادہ ہوجاؤاوراس کے ساتھ بداخلاقی سے پیش نہ آؤ۔
    چنانچہ اس زمانہ میں جب کہ مشرقی تہذیب کاجنازہ نکل چکاہے،مغربی تہذیب نے اپنے پنجے گاڑلئے ہیں،کفرکی ہوائیں خرمن اسلام کواکھاڑپھینکناچاہتی ہیں،شیطانی موجیں اس کوشش میں ہیں کہ اسلام اوراسلامی نشیمن خس وخاشاک کی طرح بہ جائیں،انگریزی تعلیم اورتہذیب نے ادب کے مفہوم کوبدل کررکھ دیاہے،اب باپ اپنے بیٹے کے ساتھ،بیٹااپنے باپ کے ساتھ،ماں اپنی بیٹی کے ساتھ،بیٹی اپنی ماں کے ساتھ،بیٹااپنی ماں کے ساتھ،بھائی اپنی بہن کے ساتھ اوربہن اپنے بھائی کے ساتھ وہ محبت اوروہ مروت جومحبوب اورمطلوب تھی نہیں کرتے ،وہ نہیں کرتے جس سے ان کارب راضی اورخوش ہوجائے البتہ وہ کرتے ہیں جس سے ان کونئی تہذیب کاپروردہ ودلدادہ تصورکیاجائے،اللہ کی ناراضگی کوبھلاکرنئے ماحول اورنئی تہذیب میں مقبولیت حاصل کرناہی معراج سمجھ لیاگیاہے۔نئے نئے بے ہودہ فلمی اسٹائل کے نام رکھنے پرفخرکیاجاتاہے،قدیم ناموں کوبراسمجھاجانے لگاہے،ایسے ہی ناموں کوبگاڑنے اوربدل کرخراب کرنے کارواج چل پڑاہے،اچھے اچھے ناموں کی شکلیں اورحلیہ بگاڑدئے گئے،خودنام والوں کواپناصحیح نام معلوم نہیں ہے،اس میں اس جہالت کابھی دخل ہے جس کی وجہ سے ایسی برائیاں اوربیماریاں ہمیں نظرنہیں آتیں اورنظربھی کیسے آئیں گی ،مغربی تعلیم کو’’تعلیم‘‘سمجھاگیا،دینی تعلیم کو’’دقیانوسیت ‘‘کانام دیاگیا،قرآن صرف جہیزمیں دینے سے کام نہیں چل سکتا،مساجدمیں صرف قرآن رکھوانے سے کام نہیں چل سکتا،ضرورت ہے کہ صحیح انسان بناجائے اورصحیح انسان بننے کے لئے روئے زمین کے سب سے صحیح انسان حضرت محمدمصطفیٰ صلی اللہ علیہ وسلم کی تعلیمات کوسیکھناضروری ہے۔
    یادرکھئے جن لوگوں نے کسی کانام بگاڑایابگاڑنے کی کوشش کی،غلط ناموں سے پکاراتوایسے لوگ قرآن کی تعلیم کی صریح خلاف ورزی کرتے ہیں اورعنداللہ ماخوذہوں گے۔
    ناموں کااثرشخصیت پرپڑتاہے،جیسانام ہوگاویسے ہی اثرات نام والے میں آئیں گے اس لئے اگرچاہتے ہوکہ تمہاری ذات سے تمہارے لوگوں کوفیض اورفائدہ پہنچے تونام اچھارکھوتاکہ یہاں بھی اوروہاں بھی دونوں جگہ خیرہمارامقدرہوسکے۔
    اس موقع پرمجھے مشہورہندوستانی سلطان اورفاتح محمودغزنویؒ کاایک واقعہ یادآتاہے ،محمودغزنوی کے سب سے معتمداورسب سے خاص جلیس اورمصاحب ’’ایاز‘‘تھے،ایازکے بیٹے کانام ’’محمد‘‘تھا،محمودغزنوی جب بھی محمدکوبلاتے توغایت پیاراورشفقت سے پیش آتے ،ایک دفعہ محمودغزنوی نے اس کوبلاناچاہاتوبجائے نام کے ’’اے ایازکے بیٹے‘‘کہہ کرمخاطب کیا۔
    ایازبہت دوراندیش،معاملہ فہم اورزیرک تھااس نے غورکیااورسمجھاکہ شایدمیری کسی بات پربادشاہ سلامت خفاہیں اس لئے معلوم کیااورناراضگی کی وجہ پوچھی تومحمودغزنویؒ نے کہاکہ میں کسی بات پرخفانہیں ہوں البتہ جب میں نے آپ کے بچے کوپکاراتونام لے کراس لئے نہیں پکاراکیونکہ اس وقت میراوضونہیں تھااورمیری غیرت نے گوارانہیں کیاکہ میں بغیروضوکے ایسانام لوں جوکونین کے سردارحضرت محمدصلی اللہ علیہ وسلم کے اسم گرامی پرہے۔یہ واقعہ مشہورتفسیرروح البیان میں موجودہے۔
    اسی کتاب روح البیان میں ایک اورروایت بھی موجودہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشادفرمایا:جس کسی نے اپنے بیٹے کانام میری محبت اورحصول برکت کے واسطے رکھاتووہ اوراس کابیٹادونوں جنت میں جائیں گے۔
    آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے نام نامی کی برکت سے بنی اسرائیل کے ایک گنہ گارکی مغفرت کاواقعہ مختلف کتابوں میں موجودہے ،خصائص الکبری اورروح البیان میں بھی اس واقعہ کونقل کیاگیاہے کہ ایک شخص تھاجوبہت گنہ گارتھاجب وہ مرگیاتولوگوں نے اس کودفن نہیں کیاکیونکہ اس کے گناہوں کی وجہ سے لوگوں کواس سے نفرت تھی،اس لئے اس کوکوڑے دن پرپھیک دیاگیا۔
    اللہ تعالیٰ نے حضرت موسیٰ علیہ السلام سے فرمایاکہ اے موسیٰ !اس شخص کونہلاؤڈکفناؤاوردفناؤ!
    حضرت موسیٰ علیہ السلام نے عرض کیاکہ یااللہ!وہ توبڑاگنہ گارہے ؟اللہ تعالیٰ نے فرمایاکہ واقعی گنہ گارہے لیکن یہ شخص جب بھی توریت کھولتااورمیرے محبوب کے نام احمدپرجب بھی اس کی نظرپڑتی تویہ شخص اس کواپنی آنکھوں سے لگاتااورپیارسے چومتاتھا۔
    علامہ سیوطیؒ کی حدیث دانی اورتاریخ دانی میں علماء کواعتمادہے انہوں نے نقل کیاہے کہ حضرت سلیمان علیہ السلام کے پاس جوانگوٹھی تھی اس پرکلمہ طیبہ کندہ تھا۔
    حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کویہ فرماتے ہوئے سناکہ جب مجھے معراج ہوئی اورمیں آسمان کے جس طبقہ پربھی گیاوہاں میں نے ’’محمدرسول اللہ‘‘لکھاہواپایا۔
    سیرت حلبی میں ہے کہ قیامت کے دن اعلان ہوگاکہ اے محمدصلی اللہ علیہ وسلم اٹھئے!بلاحساب وکتاب جنت الفردوس میں جائیے!حالانکہ یہ خطاب حضورنبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے لئے ہوگالیکن جن جن لوگوں کے نام محمدہیں وہ سب اٹھ کھڑے ہوں گے یہ سوچ کرکہ شایداس سے ان کی ذات مراہو۔
    اس وقت اللہ تعالیٰ کی محبت جوش میں آئے گی اورجن جن لوگوں کے نام محمدیااحمدہوں گے ان سبھی کواللہ تعالیٰ بغیرحساب وکتاب جنت میں داخلے کی سعادت بحش دے گا۔(معرفت اسم محمدصلی اللہ علیہ وسلم)
    دلائل الخیرات کی ایک شرح میں ہے کہ قیامت کے دن کچھ حفاظ ایسے ہوں گے جن کے لئے جہنم میں جاناطے ہوجائے گا،حضرت محمدصلی اللہ علیہ وسلم کااسم گرامی ان حفاظ کے ذہنوں سے بھلادیاجائے گا۔لیکن پھراللہ کورحم آئے گااوراللہ تعالیٰ فرشتوں سے فرمائیں گے کہ ان لوگوں کومیرے محبوب کانام یاددلاؤ،چنانچہ جیسے ہی یہ نام پاک ان کے ذہنوں میں واپس آئے گا،نارجہنم فوراًسردہوجائے گی اورپھردوزخ سے آزادی کاپروانہ مل جائے گا۔(مطالع المسرات)
    مظاہرعلوم (وقف )سہارنپورکے ناظم حضرت مولانامحمداسعداللہ ؒ کے ملفوظات میں ہے کہ اگرکسی شخص کے بچہ نہ پیداہوتاہوتواس کوچاہئے کہ حمل کے شروع میں چالیس دنوں تک اپنی بیوی کے پیٹ پریہ دعاپڑھ کردم کر’’انی سمیت محمداًباسم نبیک صلی اللہ علیہ وسلم‘‘ان شاء اللہ لڑکاپیداہوگا۔
    میں ایک مدت تک سوچتارہاکہ یہ حضرت مولانامحمداسعداللہ ؒ کااپناتجربہ ہوگالیکن حیرت اس وقت ہوئی جب میں ایک دن انسان العیون نامی کتاب میں حضرت حسن رضی اللہ عنہ کایہ ارشادپڑھا:جس کی عورت حمل سے ہواوروہ نیت کرلے کہ جوبچہ پیداہوگااس کانام محمدرکھوں گاتوان شاء اللہ لڑکاہی پیداہوگا۔آگے حضرت حسنؓنے مزیدفرمایاکہ اگرحمل میں لڑکی بھی ہوگی تواس پاک نام کی برکت سے وہ لڑکی لڑکابن جائے گی۔
    حضرت امام اعظیم ابوحنیفہؒ فرماتے ہیں:جوشخص چاہے کہ اس کی عورت کے حمل میں لڑکاہوتواسے چاہئے کہ حاملہ کے پیٹ پرہاتھ رکھ کرعہدکرے کہ اگرلڑکاہوگاتواس کانام محمدرکھوں گااللہ کے فضل سے اس کے یہاں لڑکاہی پیداہوگا۔
    ابن ابی ملیکہ نے بروایت ابن جریج یہ حدیث نقل کی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:کہ جس کے یہاں حمل ہواوروہ پختہ ارادہ کرلے کہ میں اس کانام محمدرکھوں گاتواللہ تعالیٰ اسے لڑکاعطافرمائے گا۔
    بعض محدثین لکھتے ہیں کہ میں نے اس حدیث کاسات بارتجربہ کیااورالحمدللہ ہربارلڑکاہی ہوا۔
    اسی طرح ایک عورت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں ایک عورت حاضرہوئی اورعرض کیاکہ میراکوئی بچہ زندہ نہیں رہتامرجاتاہے توفرمایاکہ ارادہ کرلوکہ اب جولڑکاہوگاتواس کانام محمدرکھوں گی توان شاء اللہ لڑکاہی ہوگا۔اس عورت نے ایساہی کیااوراس کے بچہ ہوااورزندہ رہا۔
    مشہوربریلوی عالم اعلیٰ حضرت مولانااحمدرضاخان لکھتے ہیں کہ نام پاک سے انتساب اوربرکت کے حصول کے لئے میں نے اپنے تمام بچوں کے نام عقیقہ کے وقت محمدرکھے ،بعدمیں ان میں فرق اورتمیزکے لئے عرفیت کااضافہ کیا۔(احکام شریعت)
    مفکراسلام حضرت مولانامحمدرابع حسنی ندوی مدظلہ اوران کے عظیم خانوادہ میں آج بھی الحمدللہ بچوں کے نام رکھنے میں اسم گرامی احمداورمحمدکواولیت دی جاتی ہے چنانچہ خاندان کے اکثرعلماء اوراسلاف کے علاوہ موجودہ نسل کے نوجوان بچوں کے نام احمد،محمد،محمودوغیرہ ہیں۔
    مظاہرعلوم (وقف) سہارنپورکے موجودہ ناظم حضرت مولانامحمدسعیدی مدظلہ جوبلاشبہ اکابرواسلاف کے امین اورفقیہ الاسلام حضرت مولانامفتی مظفرحسینؒ کے جانشین ہیں انہوں نے بھی اپنے تمام بچوں کے نام محمدرکھے ہیں ،البتہ ان کی عرفیت کے لئے دیگرناموں کااضافہ کیا۔
    کچھ دن پہلے اخبارات اورانٹرنیٹ پرایک خبرتواترکے ساتھ شائع ہوئی کہ یورپی ملک انگلینڈ میں ہرسال اعدادوشمارکے ذریعہ پتہ لگایاجاتاہے کہ اس سال وہاں کے معاشرہ میں سب سے مقبول نام کون ساتھا،چنانچہ ۲۰۱۳ء میں وہاں کاسب سے زیادہ پسندیدہ نام محمدتھاکیونکہ لوگوں نے سب سے زیادہ اپنے بچوں کے نام آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے نام نامی اسم گرامی پررکھے تھے۔
    قدیم اسلاف میں بھی اس کی بہت سی نظیریں اورمثالیں ملتی ہیں جن کے نام محمدیااحمدرکھے گئے بلکہ ترمذی شریف کے سبق میں حضرت مولانارئیس الدین بجنوریؒ نے کسی محدث کانام ارشادفرمایاتھااوربتایاتھاکہ چودہ پشتوں تک سب کے نام محمدتھے۔
    ہمیں بھی چاہئے کہ ہم بھی اپنے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی سیرت اورتعلیمات کواپنی زندگیوں میں شامل کریں کیونکہ نجات اورفلاح اسی میں مضمرہے۔
    محمدداؤدالرحمن علی، بنت حوا اور عامر نے اسے پسند کیا ہے۔
  3. محمد ارمغان

    محمد ارمغان وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    1,661
    موصول پسندیدگیاں:
    106
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    جزاک اللہ خیرا۔۔۔
    اللہ تعالیٰ اسمِ مبارک ’’محمد اور احمد‘‘ کی کامل معرفت، محبت اور عظمت نصیب فرمائے، آمین۔
    بنت حوا اور عامر .نے اسے پسند کیا ہے۔
  4. محمد نبیل خان

    محمد نبیل خان وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    8,697
    موصول پسندیدگیاں:
    775
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    ثم آمین
    بنت حوا، عامر اور محمد ارمغان نے اسے پسند کیا ہے۔
  5. hodekarnoor

    hodekarnoor خوش آمدید مہمان گرامی

    آمین ۔ ۔ یا رب العالمین
  6. بنت حوا

    بنت حوا فعال رکن وی آئی پی ممبر

    پیغامات:
    4,572
    موصول پسندیدگیاں:
    459
    صنف:
    Female
    جگہ:
    Pakistan
    جزاک اللہ خیرا۔۔۔
    اللہ تعالیٰ اسمِ مبارک ’’محمد اور احمد‘‘ کی کامل معرفت، محبت اور عظمت نصیب فرمائے، آمین
    عامر اور محمدداؤدالرحمن علی .نے اسے پسند کیا ہے۔

اس صفحے کو مشتہر کریں