السلام علیکم کے بجائے ”سام علیکم“ کہنا

'احادیث نبوی ﷺ' میں موضوعات آغاز کردہ از محمدداؤدالرحمن علی, ‏فروری 5, 2017۔

  1. محمدداؤدالرحمن علی

    محمدداؤدالرحمن علی منتظم۔ أیده الله Staff Member منتظم رکن افکارِ قاسمی

    پیغامات:
    6,301
    موصول پسندیدگیاں:
    1,708
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    السلام علیکم کے بجائے ”سام علیکم“ کہنا!
    عن ابن عمر رضي الله عنهما يقول : قال رسول الله صلى الله عليه و سلم ( إن اليهود إذا سلموا على أحدكم إنما يقولون سام عليك فقل عليك )
    (صحیح البخاری: 65299 ، باب إذا عرض الذمي بسب النبي صلى الله عليه و سلم ولم يصرح)


    نبی کریم ﷺ نے ارشاد فرمایا:
    ”یہودی لوگ جب تم میں سے کسی کو سلام کرتے ہیں تو (دھوکہ دیتے ہوئے السلام علیک کے بجائے) سام علیک (تم پر ہلاکت ہو)کہتے ہیں،لہذاتم جواب میں” علیک“ (تم پر بھی) کہا کرو۔“
    (صحیح البخاری: 65299 ، باب إذا عرض الذمي بسب النبي صلى الله عليه و سلم ولم يصرح)
    ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
    مسلمان کا حق ہے کہ اسے پورے وقار اور سلیقے کے ساتھ السلام علیکم کہا جائے۔آج بہت سے سچے مسلمان بھی بےخیالی،لاعلمی اور جلد بازی میں السلام علیکم کے بجائے ”سام علیکم“ کہ جاتے ہیں جو کہ درست نہیں۔​
    محمد نبیل خان نے اسے پسند کیا ہے۔
  2. محمد نبیل خان

    محمد نبیل خان وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    8,688
    موصول پسندیدگیاں:
    772
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    بہت خوبصورت انداز میں خوبصورت بات رقم فرمائی ہے
    جزاک اللہ خیرا
    احمدقاسمی نے اسے پسند کیا ہے۔

اس صفحے کو مشتہر کریں