امام بخاری اور آثار صحابہ و تابعین

'بحث ونظر' میں موضوعات آغاز کردہ از imani9009, ‏اکتوبر 14, 2017۔

  1. imani9009

    imani9009 وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    149
    موصول پسندیدگیاں:
    77
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    اکثر لوگ یہی سمجھتے ہیں کہ صحیح بخاری میں صرف نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی احادیث شامل ہیں اور صحابہ و تابعین کے اقوال و افعال شامل نہیں۔ ہم چند ایک آثار کا تذکرہ کریں گے ۔
    زیادہ تر آثار ابواب میں لکھے گئے ہیں اور کچھ ان کے ذیل احادیث میں بھی ہیں۔ان آثار کےمطالعے سے یہ بات واضح ہو جاتی ہے کہ امام بخاری کے نزدیک اثر صحابی و تابعی حجت ہیں اور اکثر آثار کو نقل کرتے وقت وہ کوئی مستدل حدیث بھی نہیں لاتے۔ جبکہ غیر مقلدین آثار صحابہ و تابعین کو نہیں مانتے۔

    سب سے پہلا اثر ہم حماد عن ابراھیم نخعی نقل کرتے ہیں۔
    [​IMG]
    حضرت علی، شریح، عطاء اور ابن سیرین
    [​IMG]
    حضرت حسن اور عطاء
    [​IMG]
    حضرت ابو ہریرہ،جابر بن عبداللہ، عبداللہ بن عمر،عطاء، حسن بصری،طاؤس،محمد بن علی
    [​IMG]
    ابن المسیب اور امام مالک
    [​IMG]
    حضرت ابو بکر ،عمر و عثمان
    [​IMG]
    ابن عمر و انس
    [​IMG]
    انس بن مالک،عکرمہ، عطاء[​IMG]
  2. imani9009

    imani9009 وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    149
    موصول پسندیدگیاں:
    77
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    ابن عمر اور ابن عباس
    [​IMG]
    حضرت حسن
    [​IMG]
    حضرت عبداللہ بن عمر اور ابن عباس
    [​IMG]
    حضرت علی
    [​IMG]
    عطاء
    [​IMG]
    امام شافعی امام مالک،حسن بصری اور عمر بن عبدالعزیز
    [​IMG]
    عبداللہ بن مسعود،ابوجعفر،ابن سیرین،عطاء،حسن،زہری
    [​IMG]
  3. imani9009

    imani9009 وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    149
    موصول پسندیدگیاں:
    77
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    حضرت عبداللہ بن عمر،ابن اسحاق،امام مالک ،امام شافعی
    [​IMG]
    حضرت عبداللہ بن عمر،ابوہریرہ،حسن

    [​IMG]
    عبداللہ بن مسعود،حسن،اعمش،ابراہیم نخعی

    [​IMG]
    ابن عباس،ابن عمر،عطاء
    [​IMG]
    حضرت ابوبکر،عمر،ابن عباس،ابوالدرداء،حسن،عطاء،شعبی،شریح
    [​IMG]
    حضرت علی،ابن عباس،عمران بن حصین،حسن،ابن سیرین
    [​IMG]
    ابن سرین،ابراہیم نخعی،عطاء
    [​IMG]
  4. imani9009

    imani9009 وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    149
    موصول پسندیدگیاں:
    77
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    شریح،عمربن عبدالعزیز،طاؤس،عطاء،حسن ،شعبی،ابراھیم
    [​IMG]
    زہری،حماد،ابن سیرین،ابراھیم
    [​IMG]
    ابن عمر،ابن مسیب،شعبی
    [​IMG]
    حسن بصری،ابو العالیہ،عطاء
    [​IMG]
    حضرت علی،زہری،حسن
    [​IMG]

    ابن عباس،ابن المسیب،شعبی،مجاہد،طاؤس،عطاء

    [​IMG]
  5. imani9009

    imani9009 وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    149
    موصول پسندیدگیاں:
    77
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    اشماریہ صاحب کچھ ادھر بھی نظر کریں۔اور ہماری راہنمائی کریں
  6. اشماریہ

    اشماریہ رکن مجلس العلماء رکن مجلس العلماء

    پیغامات:
    439
    موصول پسندیدگیاں:
    274
    صنف:
    Male
    السلام علیکم و رحمۃ اللہ و برکاتہ
    ایمانی بھائی مجھے ابھی تک ایسا کوئی شخص نہیں ملا جو بخاری میں آثار کے ہونے کا ہی قائل نہ ہو. اور اگرچہ بعض اہل حدیث حضرات یہ کہتے ہیں کہ آثار صحابہ حجت نہیں ہیں لیکن میں نے یہ دیکھا ہے کہ عملا وہ اس بات کا اطلاق اس وقت کرتے ہیں جب حدیث اور اثر میں تعارض آجائے. ایسی صورت میں بعض علماء کا یہ مسلک ہے کہ اعتبار روایت کا ہوگا.
    و اللہ اعلم
  7. imani9009

    imani9009 وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    149
    موصول پسندیدگیاں:
    77
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    ویسے اگر آپ غیر مقلدوں کے ویب ساءٹس کا مطالعہ کریں تو آپ کو ایسے الفاظ ملیں گے ۔ کہ امام بخاری نے اپنی کتاب میں صرف نبی کی احادیث جمع کی ہیں۔ ایسے لوگو ں کے جواب میں یہ پوسٹ لکھی گئی ہے۔ اور خاص طور پر آثار کی حجیت کے لیے آپ اس پوسٹ میں دیکھ سکتے ہیں کہ کئی آثار کے نیچے متعلقہ حدیث نہیں ہے جوامام بخاری کی آثار کےحجیت کے قائل ہونے پر دلالت کرتی ہے۔
    میرانام عبداللہ ہے۔ یہ توآئیڈی ہے
  8. اشماریہ

    اشماریہ رکن مجلس العلماء رکن مجلس العلماء

    پیغامات:
    439
    موصول پسندیدگیاں:
    274
    صنف:
    Male
    عبد اللہ بھائی
    جہلاء دونوں فریقوں میں انتہائی مزاج رکھتے ہیں۔ مقلدین میں ایسے حضرات بھی ہیں جو امام ابو حنیفہؒ کی مدح اور تقلید میں اس قدر آگے چلے جاتے ہیں کہ اگر کوئی ان کی تقلید نہ کرے تو اسے برا بھلا کہنے سے بھی باز نہیں آتے۔ اسی طرح تارکین تقلید میں بعض لوگ مخالف سمت میں انتہاء تک چلے جاتے ہیں۔ ایسے لوگ یہ کہنا شروع ہو جاتے ہیں کہ دین صرف قران و حدیث ہے اور اس کے علاوہ اجماع اور قیاس بھی کچھ نہیں۔
    ہمیں علم حاصل کرنا چاہیے اور اس علم کو جہلاء کو خاموش کرانے کے لیے حاصل نہیں کرنا چاہیے بلکہ علماء کی باتیں سمجھنے کے لیے حاصل کرنا چاہیے۔
    نبی کریم ﷺ کا ارشاد گرامی ہے: "جس شخص نے علم اس لیے حاصل کیا کہ وہ اس کے ذریعے علماء میں فخر کرے گا یا جہلاء سے جھگڑے گا یا لوگوں کے چہروں کو اپنی جانب پھیر دے گا تو اللہ اس کو جہنم میں داخل کرے گا۔" (او کما قال، رواہ ابن ماجہ)
    اس لیے جہلاء کی باتوں کا جواب دینے اور ان کے لیے محنت کرنے میں کافی احتیاط کرنی چاہیے۔ ہم سے اپنے عمل کی پرسش ہونی ہے۔
    احمد پربھنوی اور عمر اثری .نے اسے پسند کیا ہے۔

اس صفحے کو مشتہر کریں