اولین شاگردان بانی درس نطامی ( ملا نظام الدین سہالوی

'فقہاء ومحدثین' میں موضوعات آغاز کردہ از احمدقاسمی, ‏جنوری 15, 2012۔

  1. احمدقاسمی

    احمدقاسمی منتظم اعلی۔ أیدہ اللہ منتظم اعلی

    پیغامات:
    3,627
    موصول پسندیدگیاں:
    790
    صنف:
    Male
    جگہ:
    India
    اولین شاگردانِ بانی درس نظامی ( ملا نظام الدین سہالوی)​


    ملانظام الدینؒ نے جس شمع کو جلایا تھا اس نے پورا متحدہ ہندوستان روشن کر دیا تھا اور اسکی روشنی میں نسلیں پروان چڑھے لگیں ۔اس نسل کے اولیں دوران کے علماء وفضلاء میں بحر العلوم ملا عبد العلی فرنگی محلی پیدائش 1142ھ ،مطابق 1729ء ۔وفات 12رجب 1225ھ مطابق 13اگست 1810ء ۔ملا محمد حسن المعروف بہ ملا حسن ( متوفی 1209ھ 30اگست 1894ء) ملا احمد انوار الحق (پیدائش 1155ھ مطابق 1442 ء وفات 29شعبان 1236ھ مطابق 29مئی 1821ء ) ملا مبین (پیدئش 1157 مطابق 1744ء ) وفات 29 ربیع الثانی 1225ھ مطابق 27مئی 1810 ) ملا نور الحق ابن مولانا انوار الحق (وفات 23 ربیع الاول 1238ھ مطابق 8دسمبر 1822 ء ) یہ وہ حضرات ہے جس عالم اسلام میں کوئی جواب نہ تھا اور جن سے تمام مسالک کے لوگ فیضیا ب ہوتے تھے ۔ان میں ملا عبد العلی ؒبحر العلوم اور ملا حسنؒ کا خصوصی رجحان معقولات کی طرف تھا ۔ملا حسن ابن قاضی غلام مصطفیٰ اپنے والد کے نامور چچا استاذ الہند ملا نظام الدین سہالویؒ کے شاگرد تھے اور علوم معقولات میں ابو سینائے عصر سمجھے جاتے تھے ۔ایک زمانہ تک فر نگی محل میں درس وتدریس اور تا لیفات کا سلسلہ جاری رکھنے کے بعد کچھ خاص حالات اور مقامی سیاست کے تحت لکھنؤ چھوڑ کر شاہجہاں پور رہے ۔شاہجہاں پور سے رام پور تشریف لائے یہاں کا مدرسہ آپ کے سپر کیا گیا اور یہیں آپ کا انتقال ہوا اور جہاں دفن ہوئے وہ پورا علاقہ آج بھی انہیں کے نام سے موسوم ہے۔
    ایک پلند پایہ استاد ہونے کے علاوہ ملاحسنؒ ایک اہم مصنف بھی تھے جن کی مختلف شرحین اور حاشیے مثلا شرح مسلم العلوم ، شرح مسلم الثبوت ، حواشی صدرا ، حواشی زوائد ثلٰثہ ، حاشیہ شمش بازغہ ، معارج العلوم اور مدارج العلوم علمی دنیا میں ایک علمی مقام ہے ۔
    ملک العلماء ملا عبد العلی بحر العلوم صحیح معنوں میں علم کا ایسا سمندر تھے جس تھاہ لگانا مشکل تھا ۔ ملا نظام الدین ؒ کے شاگر رشید ملا کمال الدین سے تکمیل علم کے بعد ، فاضل بے نظیر اور جامع معقول ومنقول ، علام ظاہر وباطن ہوئے اور مدت تک لکھنؤ میں فیض علمی جاری رکھا اور اس کے بعد انہیں حالات کے تحت جن میں ملا حسنؒ کو لکھنؤ چھوڑنا پڑاتھا انہیں بھی ترک وطن کرنا پڑا ۔وہ اول شاہجہاں پور پھر رامپور تشریف لے گئے اور وہاں سے بوہارضلع بردوان(بنگال) پہنچے جہاں شایان شان قدر افزائی ہوئی ۔ پھر نواب ارکاٹ نے مدراس بلوالیا۔جہاں ان کی وہ قدر دانی ہوئی جو چند علماء ہی کے حصہ میں آئی ہے ۔نواب ارکاٹ نے انہیں ملک العلماء کا خطاب عطا فر مایا ۔بحر العلوم کا خطاب انہیں مشہور زمانہ بزرگ شاہ عبد العزیز ؒ سے عطا ہواتھا
    اور اس کا قصہ یہ ہے کہ ملا حسنؒ کے قیام دہلی کے دوران شاہ عبد العزیزؒ کے ایک شاگرد ان سے بحث میں الجھ گئے ، لیکن ملاحسنؒ کے جوابوں سے وہ اتنا متاثر ہوئے کہ شاہ صاحبؒ کے پاس واپس ہو کر انہوں نے ملا حسنؒ کے علم وفضل کی تعریف کی ۔جس کے جواب میں شاہ صاحبؒ نے فر مایاکہ یہ معقولی قرآن وحدیث سے بے خبر ہوتے ہیں ۔ کسی نے یہ گفتگو کی اطلاع ملا عبد العلی ؒ کو دے دی ۔ جنہوں نے علم فقہ میں ارکان اربعہ لکھ کر شاہ صاحبؒ کو روانہ کردی ، جسے پڑھ کر شاہ صاحبؒ اتنا متاثر ہوئے کہ انہوں نے اپنے خط میں ملا عبد العلیؒ کو بحر العلوم کے خطاب سے یاد فر مایا اور اس وقت سے یہ خطاب نام سے زیادہ مشہور ہو گیا ۔
    ملا بحر العلوم کو عربی وفارسی دونوں زبانوں پر مکمل عبور حاصل تھا اور ان دونوں زبانوں میں ان کی تالیفات موجود ہیں جن کی تعداد ایک سو سے زیادہ ہے اور یہ تالیفات معقولات ومنقولات وتصوف ہر فن میں ہیں ،ان میں چند یہ ہیں ۔
    ہدایت الصرف ،شرح فقہ اکبری، ( دونوں فارسی میں مطبوعہ ( شرح مسلم العلوم ( مطبوعہ ) شرح مسلم الثبوت (مطبوعہ) حواشی بر زوائد ثلٰثہ ، حاشیہ رسالہ میر زاہد،(مطبوعہ ) تحرا الاصول ، شرح مثنوی معنوی ( متعددمطبوعہ جلدیں) حواشی بر میر زاہد شرح موافق ، حاشیہ صدرا ( مطبوعہ) شرح فارسی منار وحدۃ الوجود پر تین رسالے ، رسالے بر احوال 2قیامت ،ارکان اربعہ یا رسائل الارکان( مطبوعہ)
    مولانا کی تصانیف سے اندازہ ہوتا کہ بقول مفتی عنایت اللہ صاحبؒ وہ معقولات میں ابن ہمام ، جلال الدین دوانی اور صدرا شیرازی سے کم نہ تھے ۔

  2. محمد نبیل خان

    محمد نبیل خان وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    8,688
    موصول پسندیدگیاں:
    772
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    بہت خوب ۔۔ ۔ مفید پوسٹ ہے
    جزاک اللہ خیرا
  3. خادمِ اولیاء

    خادمِ اولیاء وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    405
    موصول پسندیدگیاں:
    29
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    جزاک اللہ بہت دل خوش ہوا
    اولٰئک اٰبائی فجئنی بمثلھم
  4. اسداللہ شاہ

    اسداللہ شاہ وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    5,318
    موصول پسندیدگیاں:
    48
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    جزاک اللہ فی الدارین

اس صفحے کو مشتہر کریں