ایک تازہ وارداتِ غزل۔۔۔رہا دربدر پھر اکُو بکُو ۔۔۔ محمد ذیشان نصر

'اصلاح سخن' میں موضوعات آغاز کردہ از ذیشان نصر, ‏دسمبر 22, 2012۔

  1. ذیشان نصر

    ذیشان نصر ناظم۔ أیده الله ناظم

    پیغامات:
    634
    موصول پسندیدگیاں:
    28
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    السلام علیکم !
    ایک تازہ غزل آج ہی وارد ہوئی ہے سو ہدیہ قارئین ہے ۔۔۔۔!
    رہا دربدر پھر ا کُو بکُو
    رہی عمر بھر یہی آرزو

    ملے مجھ کو بھی کوئی ہم نفس
    کوئی مہ جبیں کوئی خوبرو

    ملاہم سفر، مجھے جب نصرؔ
    ہوئی ختم پھر مری جستجو

    نہ میں کہہ سکا مرا حالِ دل
    نہ ہی ہو سکی کوئی گفتگو

    نہ ہی چھُپ سکا کبھی ان سے میں
    نہ ہی ہو سکا کبھی رُوبَرُو

    مری تشنگی رہی عمر بھر
    نہ میں ہو سکا کبھی سَرخرو

    ہوئی ختم یوں مری داستاں
    نہ میں وہ رَہا نہ وہ ماہ رُو

    محمد ذیشان نصر
    22 دسمبر 2012
  2. احمدقاسمی

    احمدقاسمی وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    3,624
    موصول پسندیدگیاں:
    790
    صنف:
    Male
    جگہ:
    India
    لے مجھ کو بھی کوئی ہم نفس
    کوئی مہ جبیں کوئی خوبرو:->~~ :->~~ :->~~
  3. مفتی ناصرمظاہری

    مفتی ناصرمظاہری کامیابی توکام سے ہوگی نہ کہ حسن کلام سے ہوگی منتظم اعلی

    پیغامات:
    1,731
    موصول پسندیدگیاں:
    207
    صنف:
    Male
    جگہ:
    India
    جستجوختم ہونے بعداگلامرحلہ کیاپیش آیا۔نصر!
  4. ذیشان نصر

    ذیشان نصر ناظم۔ أیده الله ناظم

    پیغامات:
    634
    موصول پسندیدگیاں:
    28
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    بتایا تو ہے مولانا صاحب۔۔۔!

    نہ میں کہہ سکا مرا حالِ دل
    نہ ہی ہو سکی کوئی گفتگو

    مری تشنگی رہی عمر بھر
    نہ میں ہو سکا کبھی سَرخرو

    ہوئی ختم یوں مری داستاں
    نہ میں وہ رَہا نہ وہ ماہ رُو

اس صفحے کو مشتہر کریں