تجارت ترک نہ کرو

'غور کریں' میں موضوعات آغاز کردہ از احمدقاسمی, ‏دسمبر 22, 2018۔

  1. احمدقاسمی

    احمدقاسمی منتظم اعلی۔ أیدہ اللہ منتظم اعلی

    پیغامات:
    3,631
    موصول پسندیدگیاں:
    791
    صنف:
    Male
    جگہ:
    India
    تجارت ترک نہ کرو
    عبداللہ بن مبارک رحمۃ اللہ علیہ فرمایا کرتے تھے جو شخص تجارت ترک کردیتا ہے اس کے اندر مروت باقی نہیں رہتی ہے وہ بداخلاق ہوجاتا ہے۔
    ابراہیم بن یوسف رحمۃاللہ علیہ نے محمد بن سلمان رحمۃ اللہ علیہ سے فرمایا بازار کو ضروری سمجھیں یعنی کاروبار کرتے رہو اسی میں تمہاری اور اہل و عیال کی عزت ہے۔
    جابربن عبداللہ نے حضور اقدس صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد نقل کیا ہے کہ انسان کے لگائے ہوئے پودے یا کھیت میں سے آدمی یا پرندے یا جانورجوکچھ کھاتے ہیں وہ صدقہ ہے یعنی اس پر صدقے کا ثواب ملتا ہے۔
    حضرت مکحول رضی اللہ تعالی عنہ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان نقل کرتے ہیں لوگو! یہ مناسب نہیں کہ تم عیب نکالنے والے ،زیادہ تعریفیں کرنے والے اور طعنہ دینے والے بنو اور نہ مردوں کی طرح (بے حس و حرکت) ہوجاؤ حاصل کرنے کے لئے محنت و تجارت نہ کرو۔
    ایک تنومند نوجوان کو دیکھ کر حضرت عمر رضی اللہ تعالی عنہ نے فرمایا کاش اس کی جوانی اللہ کے راستے میں لگتی۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ جملہ سنا تو فرمایااگریہ اپنے بوڑھے ماں باپ اور خود کو لوگوں سے بے نیاز کرنے کے لیے تجارت اور محنت کررہا ہے تو اللہ ہی کے راستے میں ہے البتہ اگر اس کی تجارت نام و نمود فخر و غرور کے لیے ہے تو شیطان کے راستے میں ہے (غالی دین دیندار اس پر ذرا خاص توجہ دیں)
    عبداللہ بن عمر رضی اللہ تعالی عنہ فرمایا کرتے تھے اللہ تعالی اس تندرست بے کار آدمی کے مقابلے میں جو نہ دنیا کا کام کرتا ہو نہ آخرت کا۔ اس صاحب اولاد باپ کو زیادہ پسند فرماتا ہے جو اپنی اولاد کی پرورش کے لئے روزی کماتا ہے
    روضۃا لصالحین صفحہ 68

اس صفحے کو مشتہر کریں