تسلیم کے معنیٰ

'غور کریں' میں موضوعات آغاز کردہ از احمدقاسمی, ‏مئی 10, 2015۔

  1. احمدقاسمی

    احمدقاسمی منتظم اعلی۔ أیدہ اللہ منتظم اعلی

    پیغامات:
    3,577
    موصول پسندیدگیاں:
    771
    صنف:
    Male
    جگہ:
    India
    تسلیم کے معنیٰ​
    آپ کے پڑوس میں ایک کمر جھکی بوڑھی رہتی ہے جن کا کوئی وارث نہیں آپ کبھی اگر کوئی ان کے آگے دو چار پیسے پھیکد یتے ہیں تو گویا اپنے نزدیک حاتم طائی کی سخاوت کو مات کر دیتے ہیں لیکن کبھی کبھی ساری عمرمیں یہ توفیق بھی آپ کو ہوتی ہے کہ ان کا کوئی کام اپنے ہاتھ سےخود کر دیتے ہیں ۔آپ کی ولدہ ماجدہ کا اب پیرانہ سالی کا زمانہ ہے ۔نہ اعضاء میں قوت باقی ہے نہ ہوش وحواس پوری طر ح باقی ہیں آپ اپنی ساری فضول خرچیوں کے مقابلے میں کوئی حقیر رقم انھیں بھی دیدیتے ہیں اور اس طرح گویا ان کے سارے احسانات سے بڑھ کر ان کے ساتھ جو سلوک کر چکتے ہیں یا اس سے بھی آگے بڑھے جو ان کی علالت کے وقت کسی ڈاکٹر یا حکیم کو بلا کر دکھا دیا اور اس طرح گویا سارے فرائضِ فرزندی سے سبکدوشی حاصل کر لی لیکن کئی مرتبہ آپنےان کا کام اپنے ہاتھ سے کیا کتنی بار آپ نے انھیں دوڑ کر پانی پلایا ہے ،کتنی بار آپ نے ان کی جو تیاں صاف کر کے انھیں دی ہیں ،کتنی بار ان کیلئے طشت اُگال دان صاف کر کے ان کے سامنے رکھا ہے اور راستے میں جاتے ہوتے ہیں ایک مزدور کو آپ دیکھتے ہیں کہ اس نے بوجھ سر سے اتارکر رکھ دیا ہے وہ اتنا بھاری ہے کہ بغیر کسی کے سہارا کے نہیں اُٹھ سکتا وہ بے کس چاروں طرف نگاہ دوڑا تا ہےآپ اس کی بے کسی کو اچھی طرح محسوس کر تے ہیں لیکن گزرتے ہو ئے چلے جاتے ہیں اس لئے کہ مزدور کے بوجھ میں سہارا دینا آپ کے نزدیک آپ کی شان ،آپ کے مرتبہ ،آپ کی عزت ،آپ کی شرافت ،آپ کی تعلیم کے منافی ہے ۔د وسروں کی خدمت کو جانے دیجئے خود اپنے کام کا اپنی ضروریات کو لیجئے آپ اپنے کام اپنے ہاتھ سے تو کر سکتے ہیں اپنی ضروریات کو بغیر دوسروں کے دست نگر ومحتاج ہوتے ہوئے ۔
    مولانانورالحسن انور نے اسے پسند کیا ہے۔

اس صفحے کو مشتہر کریں