تین دن کے بھوکے طالب علم اور اللہ کی غیبی مدد

'افکارِ قاسمی شمارہ 6: مئی 2013' میں موضوعات آغاز کردہ از پیامبر, ‏مئی 14, 2013۔

  1. پیامبر

    پیامبر وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    1,245
    موصول پسندیدگیاں:
    568
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    <div style="direction:rtl;"><TABLE border="1" width="800">
    <table border="1" width="600" align="center">
    <tr>
    <td style="text-align:center; font-size:36px; padding:20px;">
    تین دن کے بھوکے طالب علم اور اللہ کی غیبی مدد
    </td>
    </tr>
    <tr>
    <td style="text-align:center; font-size:26px; padding:20px;">
    محمد داود الرحمن علی
    </td>
    </tr>
    <tr>
    <td style="text-align:justify; font-size:22px; padding:20px;">
    طلب علم کے راستے میں ۔۔۔۔ ہمارے اکابرین کو مجاہدے بھی کرنے پڑے ۔۔۔۔۔۔ وقت کی مشقتیں بھی اٹھانی پڑیں ۔۔۔۔۔۔ ان کو سہولتیں بھی میسر نہیں تھیں ۔۔۔۔۔۔ حضرت سفیان ثوری رحمہ اللہ ۔۔۔۔۔ اپنے دو ساتھیوں کے ساتھ علم کی پیاس بجھانے ۔۔۔۔۔۔ ایک محدث کی خدمت میں پہنچے ۔۔۔۔۔۔۔ حضرت سفیان ثوری رحمہ اللہ فرماتے ہیں ہمارے پاس صرف پینے کے لیے ستو تھا ۔۔۔۔ ہم ستو کو تھوڑا تھوڑا کرکے استعمال کرتے رہے ۔۔۔۔۔۔۔ فرماتے ہیں ہمارے اسباق ختم ہونے میں ابھی تین دن باقی تھے ۔۔۔۔۔۔ کہ ہمارے پاس کھانے پینے کو کچھ نہ رہا ۔۔۔۔۔۔۔ ہم نے آپس میں مشورہ کیا ۔۔۔۔۔۔ کہ دو آدمی استاد کے درس میں شرکت کریں گے ۔۔۔۔۔۔۔ اور ایک محنت مزدوری کرکے کھانے کا انتظام کرے گا ۔۔۔۔۔۔ تاکہ باقی تین دن کھانے کا کچھ انتظام ہو سکے ۔۔۔۔۔۔۔ اور یوں تین دن گزر جائیں گے ۔۔۔۔۔۔ فرماتے ہیں ہم تو درس سننے چلے گئے ۔۔۔۔۔۔ اور جس آدمی نے مزدوری پر جانا تھا ۔۔۔۔ وہ مسجد چلا گیا ۔۔۔۔۔۔ سوچنے لگا مجھے مخلوق کی مزدوری کرنے سے کیا فائدہ ۔۔۔۔ کیوں نہ اپنے خالق اور مالک کے سامنے سجدہ ریز ہو جاؤں ۔۔۔۔۔۔۔ چنانچہ انہوں نے نفل نماز کی نیت کی اور نماز شروع کردی ۔۔۔۔۔ سارے دن نفل پڑھتے رہے ۔۔۔۔۔ اور اللہ رب العزت سے دعا کرتے رہے ۔۔۔۔۔۔۔ سارا دن مسجد میں گزار کر رات کو واپس آگئے ۔۔۔۔۔۔ حضرت سفیان ثوری رحمہ اللہ فرماتے ہیں ہم نے پوچھا ہاں کو انتظام ہو ا۔۔۔؟ کہنے لگے میں نے ایک ایسے مالک کی مزدوری کی ہے ۔۔۔۔۔۔ جو پورا پورا حساب دیتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ فرماتے ہیں دوسرے دن دوسرے ساتھی کی باری تھی ۔۔۔۔۔ اس نے بھی اپنی سوچ کے مطابق اسی راستے کو اپنایا ۔۔۔۔۔۔ مسجد چلے گئے اور سارا دن اللہ رب العزت کی عبادت کرتے رہے اور دعائیں مانگتے رہے ۔۔۔۔۔ شام کو ہم نے پوچھا کوئی انتظام ہوا ۔۔۔۔۔ جواب ملا میں نے ایک ایسے مالک کی مزدوری کی ہے ۔۔۔۔۔۔۔ جو کسی کا قرض رہنے نہیں دیتا ۔۔۔۔۔۔ اور پورا پورا ادا کرتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ اور اس کا وعدہ ہے تمہیں تمہارا اجر ضرور مل کے رہے گا ۔۔۔۔۔۔ فرماتے ہیں تیسرے دن میں نے بھی یہی عمل کیا ۔۔۔۔۔ اللہ کی شان تیسرے دن حاکم سویا ۔۔۔۔ تو اس نے خواب میں ایک عجیب سے چیز دیکھی ۔۔۔۔۔۔ اس نے اپنا پنجہ اٹھایا ۔۔۔۔۔۔۔ اور حاکم وقت سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔ سفیان ثوری رحمہ اللہ اور اس کے ساتھیوں کا خیال کرو ۔۔۔۔۔۔ یہ منظر دیکھتے ہی حاکمِ وقت کی آنکھ کھل گئی ۔۔۔۔۔۔ اور اس نے ہر طرف اپنی فوج دڑا دی ۔۔۔۔۔۔ کہ معلوم کرو سفیان ثوری رحمہ اللہ کون ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ اور دیناروں درہموں سے بھری تھیلیاں بھی دیں اور کہا جب ان کو تلاش کرلو گے یہ ان کو میری طرف سے دے دینا ۔۔۔۔۔۔ بعد میں مجھے اطلاع بھیجو گے ۔۔۔۔۔۔ تاکہ میں ان کے لیے خزانوں کے منہ کھول دوں ۔۔۔۔۔۔۔۔ حضرت سفان ثوری رحمہ اللہ فرماتے ہیں یہاں ہماری تعلیم مکمل ہوئی ۔۔۔۔۔ اور وہاں فوج تلاش کرتی کرتی ہم تک پہنچ گئی ۔۔۔۔۔ اور پوچھا: یہاں سفیان ثوری رحمہ اللہ کون ہیں ۔۔۔۔ حاکم وقت کو ایک خواب آیا ہے ۔۔۔۔۔۔ اسی نے ہمیں یہاں بھیجا ہے ۔۔۔۔۔۔ حضرت سفیان ثوری رحمہ اللہ نے اپنے ساتھیوں سے مشورہ کیا کہ اب ہمارے سامنے دو دروازے ہیں ۔۔۔۔۔۔ اہک مالک حقیقی کا دروازہ ۔۔۔۔۔۔۔ اور ایک حاکم وقت کا دروازہ ۔۔۔۔۔ فرماتے ہیں ہم نے جو علم سیکھا ہے ۔۔۔۔۔۔ اس میں یہی پڑھا ہے ۔۔۔۔۔۔ کہ مالک حقیقی سے مانگنا ہے اور اسی سے لینا ہے ۔۔۔۔۔ لہزا ہماری علمی غیرت کہ گوارا نہیں کرتی کہ ہم حاکم وقت کے دروازے پے جائیں ۔۔۔۔۔ اللہ اکبر!!!!
    تین دن کے بھوکے تھے ۔۔۔۔۔۔۔ مگر حاکم وقت کے دروازے پر جانا گوارا نہیں کیا ۔۔۔۔۔۔ اور اسی حالت میں اپنے وطن واپسی کا سفر کیا ۔۔۔۔۔ یہ تھے وہ طلباء ۔۔۔۔۔۔ جن کی نظر اللہ رب العزت پر ہوتی تھی ۔۔۔۔۔۔ اور دین کے علم کو حاصل کرنے کے لیے مشقتیں برداشت کیا کرتے تھے ۔۔۔۔۔۔ اور اللہ رب العزت کی مدد اور نصرت بھی نازل ہوا کرتی تھی۔

    قرآن سے علم طب کے انکشافات
    خلیفہ ہارون رشید کے درباری حکیموں میں ایک نصرانی حکیم تھا ۔۔۔۔۔ جو خلیفہ کا معتمد تھا ۔۔۔۔۔۔۔ ایک دن اس نے بھرے دربار میں ۔۔۔۔۔۔۔ اس وقت کے جید عالم دین حضرت علی بن حسین بن واقد رحمہ اللہ سے سوال کیا ۔۔۔۔۔ تمہاری کتاب قرآن شریف میں کہیں علم طب کا ذکر نہیں ہے ۔۔۔۔ حالانکہ علوم میں سب سے بلند اور ممتاز تو ہی علم ہیں ۔۔۔۔ ایک ہے علم الدنیا ۔۔۔۔۔ اور دوسرا ہے علم الابدان ۔۔۔۔۔۔۔
    حضرت علی بن حسین رحمہ اللہ نے برجستہ جواب دیا اور فرمایا ۔۔۔۔۔۔ تمہیں کیا معلوم اللہ رب العزت نے ۔۔۔۔۔ پورا علم طب قرآن پاک کی آدھی آیت میں جمع فرمادیا ہے ۔۔۔۔ نصرانی حکیم بڑا حیران ہوا اور پوچھا وہ کون سی آیت ہے۔ حضرت علی بن حسین رحمہ اللہ نے جواب میں قرآن پاک کی یہ آیت تلاوت کی ۔۔۔
    کلو واشرابو ولا تسرفو
    ترجمہ: کھاؤ پیو اور حد سے زیادہ نہ بڑھو
    یہ سن کر نصرانی طبیب حیران رہ گیا ۔۔۔۔۔۔۔ اس کے بعد حضرت علی بن حسین رحمہ اللہ سے کہنے لگا یہ بتاؤ کہ تمہارے پیغمر صلی اللہ علیہ وسلم نے بھی کوئی اصول طب کے بارے میں ارشاد فرمایا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔؟ حضرت علی بن حسین رحمہ اللہ نے فرمایا ہمارے پیغمر صلی اللہ علیہ وسلم نے بھت کچھ ارشاد فرمایا ہے ۔۔۔۔۔۔ مگر میں اس ٹائم تمہارے سامنے ایک حدیث بیان کرتا ہوں اسے سن لو
    المعدۃ بیت الداع والحمیہ راس کل دواء وعودوا کل جسم ما اعتاد
    معدہ تمام امراض کی کوٹھری ہے اور پرہیز تمام دواؤں کا سردار ہے ہر جسم سے وہی کام لو جس کا وہ عادی ہے- یہ سن کر نصرانی طبیب فرط حیرت سے حضرت علی بن حسین رحمہ اللہ کو دیکھنے لگا ۔۔۔۔ اور کہنے لگا ۔۔۔۔۔۔
    ماترک کتاب کم وانبی کم اجالینوس طبا
    تماری کتاب اور تمہارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے جعلی نواس کے لیے کوئی طب چھوڑی ہی نہیں -(روح البیان ج 2 ص 155)
    </td>
    </tr>
    </table></div>

اس صفحے کو مشتہر کریں