حضرت اقدس مولانا شاہ حکیم محمد اختر نور الله مرقدہ کی وفات ۔۔۔الفاروق :: ٹائپنگ مکمل

'ماہنامہ افکارِ قاسمی شمارہ 9 برائے اگست 2013 مجّدِ' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد ارمغان, ‏جولائی 16, 2013۔

  1. محمد ارمغان

    محمد ارمغان وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    1,661
    موصول پسندیدگیاں:
    106
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    حضرت اقدس مولانا شاہ حکیم محمد اختر نور الله مرقدہ کی وفات
    2 جون بمطابق22 رجب 1434ھ بروز پیر کو حضرت مولانا حکیم اختر رحمۃ الله علیہ دار فناء کی بے ثباتیوں کو چھوڑ کر دارالبقاء سدھار گئے ۔رحمہ الله رحمۃ واسعۃ۔
    آپ1924ھ میں یوپی (انڈیا) کے شہر پڑتاب گڑھ کے گاؤں اٹھیہہ میں پیدا ہوئے، طب کی اعلیٰ تعلیم طبیہ کالج علی گڑھ سے حاصل کی ۔ حضرت مولانا فضل الرحمن گنج مراد آبادی اور جناب سید بدر علی شاہ جیسے عظیم کابر کی صحبت میں بچپن اور جوانی گذری۔
    جب کہ حضرت مولانا شاہ محمد احمد پڑتاب گڑھی، حضرت مولانا عبدالغنی پھول پوری اورحضرت اقدس شاہ ابرارالحق رحمہم الله ( خلفاء حضرت مولانا اشرف علی تھانوی رحمہ اللہ تعالیٰ) سے خلافت حاصل کی 1955ء میں پاکستان تشریف لائے اور ناظم آباد نمبر4 میں دینی خدمات انجام دیں بعد ازیں خانقاہ اشرفیہ گلشن اقبال کی بنیاد رکھی اور وہاں سے الله پاک نے ایک دنیا کے دلوں کو ذکر الہٰی سے منور رکھا۔ جامعہ اشرف المدارس ( گلستان جوہر) سمیت کئی مساجد ومدارس اور خانقاہیں یاد گار چھوڑیں۔150 سے زائد چھوٹی بڑی تصانیف مواعظ اور خطبات کی سی ڈیز اور کیسٹیس آپ کا جاری کیا گیا ”فیوض کا آب رواں“ ہیں الاختر ٹرسٹ کی لازاول خدمات ان شا ء الله ہمیشہ حضرت کے احسانات کی یاد دلاتی رہیں گی آپ کے پسماندگان میں ایک بیٹا حضرت مولانا حکیم محمد مظہر صاحب اور ایک صاحبزادی ہیں۔
    تعزیت: اگلے روز4 جون بروز منگل حضرت شیخ الحدیث زید مجدہ جامعہ اشرف المدارس تشریف لے گئے۔ جہاں آپ نے صاحبزادہ مولانا حکیم محمد مظہر صاحب سے ملاقات اور تعزیت فرمائی حضرت مولانا خلیل احمد صاحب ناظم تعلیمات جامعہ فاروقیہ کراچی مفتی حماد خالد صاحب اور مفتی عبدالرحیم صاحب رفیق شعبہ تصنیف بھی حضرت کے ہمراہ تھے۔
    (بشکریہ ماہنامہ الفاروق کراچی، رمضان المبارک ۱۴۳۴ھ)
  2. محمدداؤدالرحمن علی

    محمدداؤدالرحمن علی منتظم۔ أیده الله Staff Member منتظم رکن افکارِ قاسمی

    پیغامات:
    6,301
    موصول پسندیدگیاں:
    1,708
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    حضرت اقدس مولانا شاہ حکیم محمد اختر نور الله مرقدہ کی وفات

    2 جون بمطابق22 رجب 1434ھ بروز پیر کو حضرت مولانا حکیم اختر رحمۃ الله علیہ دار فناء کی بے ثباتیوں کو چھوڑ کر دارالبقاء سدھار گئے ۔رحمہ الله رحمۃ واسعۃ۔
    آپ1924ھ میں یوپی (انڈیا) کے شہر پڑتاب گڑھ کے گاؤں اٹھیہہ میں پیدا ہوئے، طب کی اعلٰی تعلیم طبیہ کالج علی گڑھ سے حاصل کی ۔ حضرت مولانا فضل الرحمن گنج مراد آبادی اور جناب سید بدر علی شاہ جیسے عظیم کابر کی صحبت میں بچپن اور جوانی گذری۔
    جب کہ حضرت مولانا شاہ محمد احمد پڑتاب گڑھی، حضرت مولانا عبدالغنی پھولپوری اورحضرت اقدس شاہ ابرارالحق رحمہم الله ( خلفاء حضرت مولانا اشرف علی تھانوی رحمہ اللہ تعالیٰ) سے خلافت حاصل کی 1955ء میں پاکستان تشریف لائے اور ناظم آباد نمبر4 میں دینی خدمات انجام دیں بعد ازیں خانقاہ اشرفیہ گلشن اقبال کی بنیاد رکھی اور وہاں سے الله پاک نے ایک دنیا کے دلوں کو ذکر الہٰی سے منور رکھا۔ جامعہ اشرف المدارس ( گلستان جوہر) سمیت کئی مساجد ومدارس اور خانقاہیں یاد گار چھوڑیں۔150 سے زائد چھوٹی بڑی تصانیف مواعظ اور خطبات کی سی ڈیز اور کیسٹیس آپ کا جاری کیا گیا ”فیوض کا آب رواں“ ہیں الاختر ٹرسٹ کی لازاول خدمات ان شا ء الله ہمیشہ حضرت کے احسانات کی یاد دلاتی رہیں گی آپ کے پسماندگان میں ایک بیٹا حضرت مولانا حکیم محمد مظہر صاحب اور ایک صاحبزادی ہیں۔
    تعزیت: اگلے روز4 جون بروز منگل حضرت شیخ الحدیث زید مجدہ جامعہ اشرف المدارس تشریف لے گئے۔ جہاں آپ نے صاحبزادہ مولانا حکیم محمد مظہر صاحب سے ملاقات اور تعزیت فرمائی حضرت مولانا خلیل احمد صاحب ناظم تعلیمات جامعہ فاروقیہ کراچی مفتی حماد خالد صاحب اور مفتی عبدالرحیم صاحب رفیق شعبہ تصنیف بھی حضرت کے ہمراہ تھے۔
    (بشکریہ ماہنامہ الفاروق کراچی، رمضان المبارک ۱۴۳۴ھ)

اس صفحے کو مشتہر کریں