زندگی ہم نے مر کے پائی ہے (عرفان محبت)

'پسندیدہ کلام' میں موضوعات آغاز کردہ از احمدقاسمی, ‏فروری 5, 2013۔

  1. احمدقاسمی

    احمدقاسمی منتظم اعلی۔ أیدہ اللہ منتظم اعلی

    پیغامات:
    3,627
    موصول پسندیدگیاں:
    790
    صنف:
    Male
    جگہ:
    India
    زندگی ہم نے مر کے پائی ہے (عرفان محبت)

    یاد دل میں تیری بسائی ہے
    حسرتِ دید رنگ لائی ہے

    رٹ تیرے نام کی لگائی ہے
    اس سے تسکین دل نے پائی ہے

    غیر کی یاد جب بھلائی ہے
    تب تیری یاد دل کو چھائی ہے

    باغِ دل میں بہار آئی ہے
    رحمتیں بے شمار لائی ہے

    مرحبا، مرحبا ، مبارک ہو
    دل میں آج ان کی یاد آئی ہے

    جس نے دیکھا ، وہی ہوا قرباں
    واہ کیا شان دلربائی ہے

    جام الفت نہیں پیا جس نے
    اس میں کیا خاک پارسائی ہے

    اس پہ قربان کیوں نہ ،ہوں جس نے
    مئے الفت مجھے پلائی ہے

    دونوں عالم نثار کر دے گا
    لذتِ قرب جس نے پائی ہے

    میرے دل میں ہے آج کیوں دھڑکن
    کیا صبا کچھ پیام لائی ہے

    سبز گنبد کے دیکھنے والے
    دولتِ قرب تو نے پائی ہے

    میں کہاں، اور کہاں دیارِ حبیب
    تیری رحمت ہی کھینچ لائی ہے

    مجھ سے راضی ہیں وہ بحمد للہ
    مژدہ لے کر صبا یہ آئی ہے

    ذکر ہوتا رہے مدینہ کا
    بات یہ میرے دل کو بھائی ہے

    دوستو! ہو گیا خدا جس کا
    سچ یہ ہے اس کی کُل خدائی ہے

    یاد میں تیرے جو ہوا مشغول
    لذتِ دید اس نے پائی ہے

    اس کو حاصل نہ ہوگا چین کبھی
    غیر سے جس نے لو لگائی ہے

    کلمہ لا الٰہ الا اللہ

    ساز دل سے صدا یہ آئی ہے

    اب نہ در آپ کا میں چھوڑوں گا
    بات دل میں یہی سمائی ہے

    آتش عشق نے جلا ڈالا
    زندگی ہم نے مر کے پائی ہے

    عمر غفلت میں ہو گئی بر باد
    میرے مال تیری دُہائی ہے

    میں وہ عاصی ہوں ، دیکھ کر جس کو
    رحمتِ حق بھی مسکرائی ہے

    ہے اشارہ کچھ ان کی جانب سے
    اس لئے یہ غزل سرائی ہے

    تجھ کو اپنا بنائیں کیوں احمد
    ہائے جب تجھ میں خود نمائی ہے ​
  2. محمد ارمغان

    محمد ارمغان وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    1,661
    موصول پسندیدگیاں:
    106
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    جزاک اللہ خیرا
  3. بنت حوا

    بنت حوا فعال رکن وی آئی پی ممبر

    پیغامات:
    4,572
    موصول پسندیدگیاں:
    458
    صنف:
    Female
    جگہ:
    Pakistan
    کلمہ لا الٰہ الا اللہ
    ساز دل سے صدا یہ آئی ہے

    اب نہ در آپ کا میں چھوڑوں گا
    بات دل میں یہی سمائی ہے

    آتش عشق نے جلا ڈالا
    زندگی ہم نے مر کے پائی ہے
  4. محمد نبیل خان

    محمد نبیل خان وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    8,688
    موصول پسندیدگیاں:
    772
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    جزاک اللہ خیرا

اس صفحے کو مشتہر کریں