شیخ الحدیث حضرت مولانا سلیم اللہ خان صاحب دامت برکاتہم العالیہ

'معاصر شخصیات' میں موضوعات آغاز کردہ از محمدداؤدالرحمن علی, ‏دسمبر 6, 2015۔

  1. محمدداؤدالرحمن علی

    محمدداؤدالرحمن علی منتظم۔ أیده الله Staff Member منتظم رکن افکارِ قاسمی

    پیغامات:
    6,291
    موصول پسندیدگیاں:
    1,708
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    ﺷﯿﺦ ﺍﻟﺤﺪﯾﺚ ﺣﻀﺮﺕ ﻣﻮﻻﻧﺎ ﺳﻠﯿﻢ ﺍﻟﻠﻪ ﺧﺎﻥ ﺻﺎﺣﺐ
    ﺩﺍﻣﺖ ﺑﺮﮐﺎﺗﮩﻢ ﮐﯽ ﺷﺨﺼﯿﺖ ﺑﺮﺻﻐﯿﺮ ﭘﺎﮎ ﻭﮨﻨﺪ ﮐﮯ
    ﻋﻠﻤﯽ ﺣﻠﻘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﺗﻌﺎﺭﻑ ﮐﯽ ﻣﺤﺘﺎﺝ ﻧﮩﯿﮟ۔
    ﺣﻀﺮﺕ ﮐﮯ ﺍﺟﺪﺍﺩ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺟﺲ ﻋﻼﻗﮯ ﺳﮯ
    ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ﻣﻨﺘﻘﻞ ﮨﻮﺋﮯ ﺁﺝ ﻭﮦ ﻋﻼﻗﮧ ﺧﯿﺒﺮ ﺍﯾﺠﻨﺴﯽ ﻣﯿﮟ
    ﺗﯿﺮﺍﮦ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﭼﻮﺭﺍ ﮐﮩﻼﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺁﭖ 25 ﺩﺳﻤﺒﺮ 1926 ﺀ
    ﮐﻮ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺿﻠﻊ ﻣﻈﻔﺮ ﻧﮕﺮ ﮐﮯ ﻣﺸﮩﻮﺭ ﻗﺼﺒﮧ
    ﺣﺴﻦ ﭘﻮﺭﻟﻮﮨﺎﺭﯼ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﻣﻌﺰﺯ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺋﮯ،
    ﺁﭖ ﮐﺎ ﺗﻌﻠﻖ ﺁﻓﺮﯾﺪﯼ ﭘﭩﮭﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﻣﻠﮏ ﺩﯾﻦ
    ﺧﯿﻞ ﺳﮯ ﮨﮯ۔ ﺣﺴﻦ ﭘﻮﺭ ﻟﻮﮨﺎﺭﯼ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﺍﮐﺎﺑﺮﯾﻦ ﮐﺎ ﻣﺴﮑﻦ
    ﻭﻣﺮﺟﻊ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔ ﺣﻀﺮﺕ ﺣﺎﺟﯽ ﺍﻣﺪﺍﺩﺍﻟﻠﻪ ﻣﮩﺎﺟﺮﻣﮑﯽ
    ﺭﺣﻤۃ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﮐﮯ ﺷﯿﺦ ﻣﯿﺎﮞ ﺟﯽ ﻧﻮﺭ ﻣﺤﻤﺪ ﺻﺎﺣﺐ
    ﺭﺣﻤۃ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﺳﺎﺭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺍﺳﯽ ﮔﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮑﻮﻧﺖ
    ﭘﺬﯾﺮ ﺭﮨﮯ۔
    ﺁﭖ ﻧﮯ ﺍﺑﺘﺪﺍﺋﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺣﻀﺮﺕ ﺣﮑﯿﻢ ﺍﻻﻣﺖ ﺭﺣﻤۃ ﺍﻟﻠﮧ
    ﻋﻠﯿﮧ ﮐﮯ ﻣﺸﮩﻮﺭ ﺧﻠﯿﻔﮧ ﻣﻮﻻﻧﺎ ﻣﺴﯿﺢ ﺍﻟﻠﻪ ﺧﺎﻥ ﺻﺎﺣﺐ
    ﮐﮯ ﻣﺪﺭﺳﮧ ﻣﻔﺘﺎﺡ ﺍﻟﻌﻠﻮﻡ ﻣﯿﮟ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯽ۔ 1942ﺀﺀ ﻣﯿﮟ
    ﺁﭖ ﺍﭘﻨﮯ ﺗﻌﻠﯿﻤﯽ ﺳﻠﺴﻠﮯ ﮐﯽ ﺗﮑﻤﯿﻞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﺯﮨﺮ ﮨﻨﺪ،
    ﺩﺍﺭﺍﻟﻌﻠﻮﻡ ﺩﯾﻮﺑﻨﺪ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺋﮯ، ﺟﮩﺎﮞ ﺁﭖ ﻧﮯ ﻓﻘﮧ،
    ﺣﺪﯾﺚ ﻭ ﺗﻔﺴﯿﺮ ﻭ ﺩﯾﮕﺮ ﻋﻠﻮﻡ ﻭﻓﻨﻮﻥ ﮐﯽ ﺗﮑﻤﯿﻞ ﮐﯽ
    ﺍﻭﺭ 1947 ﺀ ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﻧﮯ ﺍﻣﺘﯿﺎﺯﯼ ﻧﻤﺒﺮﺍﺕ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﻨﺪ
    ﻓﺮﺍﻏﺖ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯽ۔
    ﺩﺍﺭﺍﻟﻌﻠﻮﻡ ﺩﯾﻮﺑﻨﺪ ﺳﮯ ﻓﺮﺍﻏﺖ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺁﭖ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻋﻼﻗﮯ
    ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﺳﺘﺎﺩ ﻭ ﻣﺮﺑﯽ ﺣﻀﺮﺕ ﻣﻮﻻﻧﺎ ﻣﺴﯿﺢ
    ﺍﻟﻠﻪ ﺧﺎﻥ ﺻﺎﺣﺐ ﺭﺣﻤﺔ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﯿﮧ، ﺧﻠﯿﻔﮧ ﺧﺎﺹ ﺣﻀﺮﺕ
    ﺣﮑﯿﻢ ﺍﻻﻣﺖ ﻣﻮﻻﻧﺎ ﺍﺷﺮﻑ ﻋﻠﯽ ﺗﮭﺎﻧﻮﯼ ﺭﺣﻤۃ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ
    ، ﮐﯽ ﺯﯾﺮ ﻧﮕﺮﺍﻧﯽ ﻣﺪﺭﺳﮧ ﻣﻔﺘﺎﺡ ﺍﻟﻌﻠﻮﻡ ﺟﻼﻝ ﺁﺑﺎﺩ ﻣﯿﮟ
    ﺗﺪﺭﯾﺴﯽ ﻭﺗﻨﻈﯿﻤﯽ ﺍﻣﻮﺭ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﯾﻨﮯ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯿﮯ۔ ﺁﭨﮫ
    ﺳﺎﻝ ﺗﮏ ﺷﺐ ﻭﺭﻭﺯ ﮐﯽ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﻣﺨﻠﺼﺎﻧﮧ ﻣﺤﻨﺖ ﮐﺎ ﯾﮧ
    ﻧﺘﯿﺠﮧ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺁﯾﺎ ﮐﮧ ﻣﺪﺭﺳﮧ ﺣﯿﺮﺕ ﺍﻧﮕﯿﺰ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺗﺮﻗﯽ
    ﮐﯽ ﺭﺍﮦ ﭘﺮ ﮔﺎﻣﺰﻥ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﺪﺭﺳﮧ ﮐﮯ ﻃﻠﺒﺎ ﮐﺎ ﺗﻌﻠﯿﻤﯽ
    ﺍﻭﺭ ﺍﺧﻼﻗﯽ ﻣﻌﯿﺎﺭ ﺍﺱ ﺩﺭﺟﮧ ﺑﻠﻨﺪﺍ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﺩﺍﺭﺍﻟﻌﻠﻮﻡ
    ﺩﯾﻮﺑﻨﺪ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﮕﺮ ﺑﮍﮮ ﺗﻌﻠﯿﻤﯽ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﯾﮩﺎﮞ ﮐﮯ
    ﻃﻠﺒﺎ ﮐﯽ ﺧﺎﺹ ﭘﺬﯾﺮﺍﺋﯽ ﮨﻮﻧﮯ ﻟﮕﯽ۔
    ﻣﺪﺭﺳﮧ ﻣﻔﺘﺎﺡ ﺍﻟﻌﻠﻮﻡ ﻣﯿﮟ ﺁﭨﮫ ﺳﺎﻝ ﮐﯽ ﺷﺒﺎﻧﮧ ﺭﻭﺯ
    ﻣﺤﻨﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺣﻀﺮﺕ ﺷﯿﺦ ﺍﻟﺤﺪﯾﺚ ﻣﺪﻇﻠﮧ، ﺷﯿﺦ
    ﺍﻻﺳﻼﻡ ﺣﻀﺮﺕ ﻣﻮﻻﻧﺎ ﺷﺒﯿﺮ ﺍﺣﻤﺪ ﻋﺜﻤﺎﻧﯽ ﺭﺣﻤﺔ ﺍﻟﻠﻪ
    ﻋﻠﯿﮧ ﮐﯽ ﻗﺎﺋﻢ ﮐﺮﺩﮦ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﻣﺮﮐﺰﯼ ﺩﯾﻨﯽ ﺩﺭﺱ
    ﮔﺎﮦ ﺩﺍﺭﺍﻟﻌﻠﻮﻡ ﭨﻨﮉﻭﺍﻟﮧ ﯾﺎﺭ ﺳﻨﺪﮪ ﻣﯿﮟ ﺗﺪﺭﯾﺴﯽ ﺧﺪﻣﺎﺕ
    ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺗﺸﺮﯾﻒ ﻟﮯ ﺁﺋﮯ۔ ﺗﯿﻦ ﺳﺎﻝ
    ﯾﮩﺎﮞ ﭘﺮ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺁﭖ ﻣﻠﮏ ﮐﮯ ﻣﻌﺮﻭﻑ ﺩﯾﻨﯽ
    ﺍﺩﺍﺭﮮ ﺩﺍﺭﺍﻟﻌﻠﻮﻡ ﮐﺮﺍﭼﯽ ﻣﯿﮟ ﺗﺸﺮﯾﻒ ﻻﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ
    ﻣﺴﻠﺴﻞ ﺩﺱ ﺳﺎﻝ ﺩﺍﺭﺍﻟﻌﻠﻮﻡ ﮐﺮﺍﭼﯽ ﻣﯿﮟ ﺣﺪﯾﺚ ،
    ﺗﻔﺴﯿﺮ، ﻓﻘﮧ، ﺗﺎﺭﯾﺦ ، ﺭﯾﺎﺿﯽ ، ﻓﻠﺴﻔﮧ ﺍﻭﺭ ﺍﺩﺏ ﻋﺮﺑﯽ
    ﮐﯽ ﺗﺪﺭﯾﺲ ﻣﯿﮟ ﻣﺸﻐﻮﻝ ﺭﮨﮯ ، ﺍﺳﯽ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﺁﭖ ﺍﯾﮏ
    ﺳﺎﻝ ﺣﻀﺮﺕ ﻣﻮﻻﻧﺎ ﻣﺤﻤﺪﯾﻮﺳﻒ ﺑﻨﻮﺭﯼ ﺭﺣﻤﺔ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﯿﮧ
    ﮐﮯ ﺍﺻﺮﺍﺭ ﭘﺮ ﺟﺎﻣﻌﺔ ﺍﻟﻌﻠﻮﻡ ﺍﻹﺳﻼﻣﯿﮧ ﺑﻨﻮﺭﯼ ﭨﺎﺅﻥ ﻣﯿﮟ
    ﺩﺍﺭﺍﻟﻌﻠﻮﻡ ﮐﯽ ﺗﺪﺭﯾﺲ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﻓﺎﺭﻍ ﺍﻭﻗﺎﺕ ﻣﯿﮟ
    ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺍﺳﺒﺎﻕ ﭘﮍﮬﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺗﺸﺮﯾﻒ ﻻﺗﮯ ﺭﮨﮯ۔
    ﻗﺪﺭﺕ ﻧﮯ ﺁﭖ ﮐﯽ ﻓﻄﺮﺕ ﻣﯿﮟ ﻋﺠﯿﺐ ﺩﯾﻨﯽ ﺟﺬﺑﮧ
    ﻭﺩﯾﻌﺖ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺑﺎﻋﺚ ﺁﭖ ﺷﺐ ﻭﺭﻭﺯ ﮐﯽ
    ﻣﺴﻠﺴﻞ ﺍﻭﺭ ﮐﺎﻣﯿﺎﺏ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﻣﻄﻤﺌﻦ ﻧﮩﯿﮟ
    ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﻋﻠﻤﯽ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻧﺌﯽ ﺩﯾﻨﯽ ﺩﺭﺱ ﮔﺎﮦ
    ( ﺟﻮ ﻣﻮﺟﻮﺩﮦ ﻋﺼﺮﯼ ﺗﻘﺎﺿﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﭘﻮﺭﺍ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﻮ )
    ﮐﯽ ﺗﺎﺳﯿﺲ ﮐﻮ ﺿﺮﻭﺭﯼ ﺧﯿﺎﻝ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﺗﮭﮯ۔
    ﭼﻨﺎﮞ ﭼﮧ23 ﺟﻨﻮﺭﯼ 1967 ﺀ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﺷﻮﺍﻝ1387 ﮪ ﻣﯿﮟ
    ﺁﭖ ﻧﮯ ﺟﺎﻣﻌﮧ ﻓﺎﺭﻭﻗﯿﮧ ﮐﺮﺍﭼﯽ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﺭﮐﮭﯽ۔ ﺁﭖ ﮐﯽ
    ﯾﮧ ﻣﺨﻠﺼﺎﻧﮧ ﮐﻮﺷﺶ ﺍﻟﻠﻪ ﺗﺒﺎﺭﮎ ﻭﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﮯ ﮨﺎﮞ ﺍﺗﻨﯽ
    ﻗﺒﻮﻝ ﮨﻮﺋﯽ ﮐﮧ ﺗﺎﺳﯿﺲ ﺟﺎﻣﻌﮧ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺳﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺍﺏ
    ﺗﮏ ﺟﺎﻣﻌﮧ ﻧﮯ ﺗﻌﻠﯿﻤﯽ ﻭﺗﻌﻤﯿﺮﯼ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﺗﺮﻗﯽ
    ﮨﮯ ﻭﮦ ﮨﺮ ﺧﺎﺹ ﻭﻋﺎﻡ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑﺎﻋﺚ ﺣﯿﺮﺕ ﮨﮯ ۔ ﻓﻠﻠﮧ
    ﺍﻟﺤﻤﺪ ﻋﻠﯽ ﺫﻟﮏ
    ﺁﺝ ﺍﻟﺤﻤﺪﻟﻠﻪ ﺟﺎﻣﻌﮧ ﻓﺎﺭﻭﻗﯿﮧ ﮐﺮﺍﭼﯽ ﺍﯾﮏ ﻋﻈﯿﻢ ﺩﯾﻨﯽ ﻭ
    ﻋﻠﻤﯽ ﻣﺮﮐﺰﮐﯽ ﺣﯿﺜﯿﺖ ﺳﮯ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﺑﯿﺮﻭﻥ
    ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮨﺮ ﺟﮕﮧ ﻣﻌﺮﻭﻑ ﻣﺸﮩﻮﺭ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺍﻟﻠﻪ ﺗﺒﺎﺭﮎ
    ﻭﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﮯ ﻓﻀﻞ ﻭﺍﺣﺴﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﺣﻀﺮﺕ ﺷﯿﺦ ﺍﻟﺤﺪﯾﺚ
    ﻣﻮﻻﻧﺎ ﺳﻠﯿﻢ ﺍﻟﻠﻪ ﺧﺎﻥ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﯽ ﻣﺨﻠﺼﺎﻧﮧ ﺟﺪﻭﺟﮩﺪ ﮐﺎ
    ﻧﺘﯿﺠﮧ ﮨﮯ۔
    ﺣﻀﺮﺕ ﺷﯿﺦ ﺍﻟﺤﺪﯾﺚ ﺯﯾﺪ ﻣﺠﺪﮦ ﮐﺎ ﻭﻓﺎﻕ ﺍﻟﻤﺪﺍﺭﺱ ﺳﮯ
    ﻻﺯﻭﺍﻝ ﺗﻌﻠﻖ
    ﺣﻀﺮﺕ ﺷﯿﺦ ﺍﻟﺤﺪﯾﺚ ﻣﺪﻇﻠﮧ ﮐﯽ ﺗﻌﻠﯿﻤﯽ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﮐﻮ
    ﺳﺮﺍﮨﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ 1980 ﺀ ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﻮ ﻭﻓﺎﻕ ﺍﻟﻤﺪﺍﺭﺱ
    ﺍﻟﻌﺮﺑﯿﮧ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﺎ ﻧﺎﻇﻢ ﺍﻋﻠﯽٰ ﻣﻘﺮﺭ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺁﭖ ﻧﮯ
    ﻭﻓﺎﻕ ﮐﯽ ﺍﻓﺎﺩﯾﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﺪﺍﺭﺱ ﻋﺮﺑﯿﮧ ﮐﯽ ﺗﻨﻈﯿﻢ ﻭﺗﺮﻗﯽ
    ﺍﻭﺭ ﻣﻌﯿﺎﺭ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮐﮯ ﺑﻠﻨﺪﯼ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺟﻮ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﺳﺮﺍﻧﺠﺎﻡ
    ﺩﯼ ﮨﯿﮟ ﻭﮦ ﻭﻓﺎﻕ ﮐﯽ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻗﺎﺑﻞ ﺫﮐﺮ ﺭﻭﺷﻦ
    ﺑﺎﺏ ﮐﯽ ﺣﯿﺜﯿﺖ ﺭﮐﮭﺘﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﺁﭖ ﻧﮯ ﻭﻓﺎﻕ ﺍﻟﻤﺪﺍﺭﺱ
    ﺍﻟﻌﺮﺑﯿﮧ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺟﻮ ﮔﺮﺍﮞ ﻗﺪﺭ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﯾﮟ ﻭﮦ
    ﺩﺭﺝ ﺫﯾﻞ ﮨﯿﮟ :
    ﺁﭖ ﻧﮯ ﻭﻓﺎﻕ ﮐﮯ ﻃﺮﯾﻘﮧ ﺍﻣﺘﺤﺎﻧﺎﺕ ﮐﻮ ﺑﮩﺘﺮ ﺷﮑﻞ ﺩﯼ ،
    ﺑﮩﺖ ﺳﯽ ﺑﮯ ﻗﺎﻋﺪﮔﯿﺎﮞ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﻥ ﺍﻣﺘﺤﺎﻧﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺍ
    ﮐﺮﺗﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺧﺘﻢ ﮐﯿﺎ۔
    ﭘﮩﻠﮯ ﻭﻓﺎﻕ ﻣﯿﮟ ﺻﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﺍﻣﺘﺤﺎﻥ ﺩﻭﺭﮦ ﺣﺪﯾﺚ ﮐﺎ ﮨﻮﺍ
    ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺁﭖ ﻧﮯ ﻭﻓﺎﻕ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﺭﮦ ﺣﺪﯾﺚ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ
    ﺳﺎﺩﺳﮧ ( ﻋﺎﻟﯿﮧ ) ، ﺧﺎﻣﺴﮧ ، ﺭﺍﺑﻌﮧ ، ﺛﺎﻟﺜﮧ ( ﺛﺎﻧﻮﯾﮧ ﺧﺎﺻﮧ )
    ﺛﺎﻧﯿﮧ ( ﺛﺎﻧﻮﯾﮧ ﻋﺎﻣﮧ ) ، ﻣﺘﻮﺳﻄﮧ ، ﺩﺭﺍﺳﺎﺕ ﺩﯾﻨﯿﮧ ﺍﻭﺭ
    ﺩﺭﺟﺎﺕ ﺗﺤﻔﯿﻆ ﺍﻟﻘﺮﺁﻥ ﺍﻟﮑﺮﯾﻢ ﮐﮯ ﺍﻣﺘﺤﺎﻧﺎﺕ ﮐﻮ ﻻﺯﻣﯽ
    ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺎ۔
    ﻧﺌﮯ ﺩﺭﺟﺎﺕ ﮐﮯ ﺍﻣﺘﺤﺎﻧﺎﺕ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﺁﭖ ﻧﮯ ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ
    ﻣﺬﮐﻮﺭﮦ ﺩﺭﺟﺎﺕ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻧﺌﯽ ﺩﯾﺪﮦ ﺫﯾﺐ ﻋﺎﻟﻤﯽ ﻣﻌﯿﺎﺭ
    ﮐﯽ ﺳﻨﺪﯾﮟ ﺟﺎﺭﯼ ﮐﺮﻭﺍﺋﯿﮟ۔
    ﻭﺯﺍﺭﺕ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺍﺳﻼﻡ ﺁﺑﺎﺩ ﺳﮯ ﻃﻮﯾﻞ ﻣﺬﺍﮐﺮﺍﺕ ﮐﯿﮯ ﺟﻦ
    ﮐﮯ ﻧﺘﯿﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﻐﯿﺮ ﮐﺴﯽ ﻣﺰﯾﺪ ﺍﻣﺘﺤﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺷﺮﮐﺖ
    ﮐﯿﮯ ﻭﻓﺎﻕ ﮐﯽ ﺍﺳﻨﺎﺩ ﮐﻮ ﺑﺎﻟﺘﺮﺗﯿﺐ ﺍﯾﻢ ﺍﮮ، ﺑﯽ ﺍﮮ، ﺍﻧﭩﺮ،
    ﻣﯿﭩﺮﮎ، ﻣﮉﻝ ﺍﻭ ﺭﭘﺮﺍﺋﻤﺮﯼ ﮐﮯ ﻣﺴﺎﻭﯼ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ۔
    ﻓﻀﻼﺋﮯ ﻗﺪﯾﻢ ﺟﻮ ﻭﻓﺎﻕ ﮐﯽ ﺍﺳﻨﺎﺩ ﮐﮯ ﻣﻌﺎﺩﻟﮯ ﮐﮯ ﻧﺘﯿﺠﮯ
    ﻣﯿﮟ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻓﻮﺍﺋﺪ ﺳﮯ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﺗﮭﮯ ﺍﻥ ﮐﮯ
    ﻟﯿﮯ ﺧﺼﻮﺻﯽ ﺍﻣﺘﺤﺎﻧﺎﺕ ﮐﺎ ﺍﮨﺘﻤﺎﻡ ﮐﺮﺍﯾﺎ ﺗﺎﮐﮧ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺑﮭﯽ
    ﻭﻓﺎﻕ ﮐﯽ ﺳﻨﺪﯾﮟ ﻓﺮﺍﮨﻢ ﮐﯽ ﺟﺎﺳﮑﯿﮟ۔
    ﻭﻓﺎﻕ ﺳﮯ ﻣﻠﺤﻖ ﻣﺪﺍﺭﺱ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻠﮯ ﺳﮯ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻗﻠﯿﻞ
    ﺗﻌﺪﺍﺩ ﮐﻮ ﺟﻮ ﭼﻨﺪ ﺳﻮ ﭘﺮ ﻣﺸﺘﻤﻞ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ
    ﻣﻠﮏ ﮐﮯ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﻗﺎﺑﻞ ﺫﮐﺮ ﻣﺪﺍﺭﺱ ﺷﺎﻣﻞ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﮯ
    ﺍﭘﻨﯽ ﺻﻼﺣﺘﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﻗﺎﺑﻞ ﺗﻌﺮﯾﻒ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﺗﮏ ﭘﮩﻨﭽﺎﯾﺎ۔
    ﺍﺏ ﯾﮧ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﺍﭨﮭﺎﺭﮦ ﮨﺰﺍﺭ ﺳﮯ ﺯﺍﺋﺪ ﻣﺪﺍﺭﺱ ﻭﺟﺎﻣﻌﺎﺕ ﭘﺮ
    ﻣﺸﺘﻤﻞ ﮨﮯ۔ ﺟﺲ ﮐﯽ ﺑﻨﺎ ﭘﺮ ﺍﺏ ﻭﻓﺎﻕ ﺍﻟﻤﺪﺍﺭﺱ ﺍﻟﻌﺮﺑﯿﮧ
    ﮐﻮ ﻣﻠﮏ ﮐﯽ ﻭﺍﺣﺪ ﻧﻤﺎﺋﻨﺪﮦ ﺗﻨﻈﯿﻢ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ۔
    ﻣﺪﺍﺭﺱ ﻋﺮﺑﯿﮧ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻧﻈﺎﻡ ﮐﻮ ﺑﮩﺘﺮ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ
    ﺁﭖ ﻧﮯ ﻧﺼﺎﺏ ﺩﺭﺱ ﺍﺻﻼﺣﯽ ﮐﯽ ﻣﮩﻢ ﺷﺮﻭﺡ ﮐﯽ ﭼﻨﺎﮞ
    ﭼﮧ ﺍﺏ ﭘﻮﺭﮮ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﯾﮑﺴﺎﮞ ﻧﺼﺎﺏ ﭘﻮﺭﮮ ﺍﮨﺘﻤﺎﻡ
    ﺳﮯ ﭘﮍﮬﺎﯾﺎ ﺟﺎﺭﮨﺎ ﮨﮯ ۔ﺟﺒﮑﮧ ﭘﮩﻠﮯ ﺻﻮﺭﺕ ﺣﺎﻝ ﻧﮩﺎﯾﺖ ﺍﺑﺘﺮ
    ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ﮨﺮ ﻣﺪﺭﺳﮧ ﮐﺎ ﺍﭘﻨﺎ ﺍﻟﮓ ﺍﻟﮓ ﻧﺼﺎﺏ ﮨﻮﺍ
    ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔
    ﻭﻓﺎﻕ ﮐﮯ ﻣﺎﻟﯿﺎﺗﯽ ﻧﻈﺎﻡ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺁﭖ ﻧﮯ ﺑﮩﺘﺮ ﮐﯿﺎ ﺟﺐ ﮐﮧ
    ﭘﮩﻠﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﺪﺭﺳﮧ ﺍﭘﻨﯽ ﻓﯿﺲ ﯾﺎ ﺩﯾﮕﺮ ﻭﺍﺟﺒﺎﺕ ﺍﺩﺍ ﮐﺮﻧﮯ
    ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﮨﺘﻤﺎﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺏ ﺁﭖ ﮐﯽ ﻣﺴﻠﺴﻞ
    ﺗﻮﺟﮧ ﮐﮯ ﻧﺘﯿﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﻭﻓﺎﻕ ﺍﯾﮏ ﻣﺴﺘﺤﮑﻢ ﺍﺩﺍﺭﮦ ﺑﻦ
    ﭼﮑﺎ ﮨﮯ۔
    ﺁﭖ ﻧﮯ ﻭﻓﺎﻕ ﮐﯽ ﻣﺮﮐﺰﯼ ﺩﻓﺎﺗﺮ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺑﮭﯽ ﺗﻮﺟﮧ
    ﻓﺮﻣﺎﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑﮩﺘﺮ ﻭﻣﺴﺘﻘﻞ ﻋﻤﺎﺭﺕ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻈﺎﻡ
    ﮐﺮﺍﯾﺎ ﺟﺐ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻣﻌﺎﻣﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻠﯽ ﻋﺎﺭﺿﯽ ﺑﻨﺪﻭﺑﺴﺖ
    ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔
    ﺁﭖ ﮐﯽ ﺍﻧﮩﯽ ﮔﺮﺍﮞ ﻗﺪﺭ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﮐﻮ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ
    ﺁﭖ ﮐﻮ 1989 ﻣﯿﮟ ﻭﻓﺎﻕ ﮐﺎ ﺻﺪﺭ ﻣﻨﺘﺨﺐ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ ﮔﯿﺎ،
    ﺟﺐ ﺳﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺁﺝ ﺗﮏ ﺁﭖ ﺑﺤﯿﺜﯿﺖ ﺻﺪﺭ ﻭﻓﺎﻕ ﮐﯽ
    ﺧﺪﻣﺎﺕ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﯾﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﺼﺮﻭﻑ ﮨﯿﮟ۔
    ﺍﻟﻠﻪ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺳﮯ ﺩﻋﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺣﻀﺮﺕ ﺷﯿﺦ ﺍﻟﺤﺪﯾﺚ
    ﻣﻮﻻﻧﺎ ﺳﻠﯿﻢ ﺍﻟﻠﻪ ﺧﺎﻥ ﺻﺎﺣﺐ ﻣﺪﻇﻠﮩﻢ ﮐﮯ ﺑﮯ ﺑﺎﯾﺎﮞ
    ﻓﯿﻮﺽ ﮐﻮ ﺻﺤﺖ ﻭﺳﻼﻣﺘﯽ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻟﯿﮯ ﺍﻭﺭ
    ﺳﺎﺭﮮ ﻋﺎﻟﻢ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻗﺎﺋﻢ ﻭﺩﺍﺋﻢ ﺭﮐﮭﯿﮟ۔ ﺁﻣﯿﻦ۔
    ﺍﻟﻠﻪ ﺗﺒﺎﺭﮎ ﻭﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﻧﮯ ﺣﻀﺮﺕ ﮐﻮ ﺗﺪﺭﯾﺴﯽ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ
    ﺟﻮ ﮐﻤﺎﻝ ﻋﻄﺎﺀ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﻗﺪﺭﺕ ﮐﯽ ﻋﻨﺎﯾﺎﺕ ﮐﺎ
    ﺣﺼﮧ ﮨﮯ ﺁﭖ ﮐﯽ ﺗﺪﺭﯾﺴﯽ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ﻧﺼﻒ ﺻﺪﯼ ﭘﺮ
    ﻣﺤﯿﻂ ﮨﮯ، ﺑﮯ ﺷﻤﺎﺭ ﻟﻮﮒ ﺁﭖ ﮐﮯ ﭼﺸﻤﮧٴ ﻓﯿﺾ ﺳﮯ
    ﺳﯿﺮﺍﺏ ﮨﻮﺋﮯ ﮨﯿﮟ، ﻗﺪﺭﺕ ﻧﮯ ﺁﭖ ﮐﻮ ﻓﺼﺎﺣﺖ ﻭﺑﻼﻏﺖ ﮐﺎ
    ﻭﺍﻓﺮ ﺣﺼﮧ ﻋﻄﺎ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮨﮯ، ﻣﺸﮑﻞ ﺑﺤﺚ ﮐﻮ ﻣﺨﺘﺼﺮ ﺍﻭﺭ
    ﻭﺍﺿﺢ ﭘﯿﺮﺍﮮ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮﻧﺎ ﺁﭖ ﮨﯽ ﮐﯽ ﺧﺼﻮﺻﯿﺖ ﮨﮯ۔
    ﮔﺰﺷﺘﮧ ﮐﺌﯽ ﺳﺎﻟﻮﮞ ﺳﮯ ﺁﭖ ﮐﮯ ﺗﻘﺮﯾﺮﯼ ﻭﺩﺭﺳﯽ ﺫﺧﯿﺮﮮ
    ﮐﻮ ﻣﺮﺗﺐ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﺳﻠﺴﻠﮧ ﺟﺎﺭﯼ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺁﭖ ﮐﮯ ﺻﺤﯿﺢ
    ﺍﻟﺒﺨﺎﺭﯼ ﮐﮯ ﺩﺭﻭﺱ ﮐﺸﻒ ﺍﻟﺒﺎﺭﯼ ﺍﻭﺭ ﻣﺸﮑﻮٰﺓ ﺍﻟﻤﺼﺎﺑﯿﺢ
    ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺁﭖ ﮐﯽ ﺗﻘﺎﺭﯾﺮ ﻧﻔﺤﺎﺕ ﺍﻟﺘﻨﻘﯿﺢ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﺷﺎﺋﻊ
    ﮨﻮ ﮐﺮ ﻋﻠﻤﺎﺀ ﻭﻃﻠﺒﺎ ﻣﯿﮟ ﻣﻘﺒﻮﻟﯿﺖ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮ ﭼﮑﯽ ﮨﯿﮟ،
    ﺍﺏ ﺗﮏ ﮐﺸﻒ ﺍﻟﺒﺎﺭﯼ ﮐﯽ 15 ﺟﻠﺪﯾﮟ ﺍﻭﺭ ﻧﻔﺤﺎﺕ ﺍﻟﺘﻨﻘﯿﺢ
    ﮐﯽ ﺗﯿﻦ ﺟﻠﺪﯾﮟ ﻣﻨﺼﮧ ﺷﮩﻮﺩ ﭘﺮ ﺁﭼﮑﯽ ﮨﯿﮟ ﺟﺐ ﮐﮧ
    ﺑﻘﯿﮧ ﺟﻠﺪﻭﮞ ﭘﺮ ﮐﺎﻡ ﺟﺎﺭﯼ ﮨﮯ۔
    محمد یوسف اور احمدقاسمی .نے اسے پسند کیا ہے۔
  2. محمد یوسف

    محمد یوسف منتظم۔ أیده الله منتظم

    پیغامات:
    220
    موصول پسندیدگیاں:
    185
    صنف:
    Male
    جگہ:
    India
    2012 میں ۔میں اور میرے دو ساتھی حرم میں بیٹھے شیخ مکی صاحب کا بیان سن رہے تھے کہ ایک صاحب ویل چیر پر بیان سنے کے لئے آئے انکی ویل چیر میرے ساتھی کو لگی وہ صاحب اور انکے خادم نے معافی چاہی ساتھی نے انکے نورانی چہرے کو دیکھ کر کہا کہ حضرت کوئی بات نہیں ۔ ایک دومنٹ کے بعد وہ صاحب چلئے گے ہم نے آپس میں ایک دوسرے سے پوچھا کہ کون صاحب ہیں ابھی یہ بات کر ہی رہے تھے کہ ایک دم لوگوں ان صاحب سے مصافحہ کے لئے ٹوٹ پڑے ۔ میں نے کسی سے پوچھا کہ یہ کون صاحب ہیں تو اس نے کہا یہ ﺣﻀﺮﺕ ﻣﻮﻻﻧﺎ ﺳﻠﯿﻢ ﺍﻟﻠﻪ ﺧﺎﻥ ﺻﺎﺣﺐ ﺩﺍﻣﺖ ﺑﺮﮐﺎﺗﮩﻢ ہیں ۔
    بس حضرت کو زیارت ہوسکی مصافحہ نہ ہوسکا مجمع کی کثرت کو دیکھ کر مصافحہ کر نا منا سب نہ لگا
    محمدداؤدالرحمن علی نے اسے پسند کیا ہے۔
  3. محمدداؤدالرحمن علی

    محمدداؤدالرحمن علی منتظم۔ أیده الله Staff Member منتظم رکن افکارِ قاسمی

    پیغامات:
    6,291
    موصول پسندیدگیاں:
    1,708
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    2010 میں جب عمرہ کی سعادت حاصل کرنے کے بعد ہم مدینہ منورہ مسجد نبوی صلی اللہ علیہ وسلم میں نماز عشاء کے بعد حلقہ احباب میں بیٹھے تو یک دم بڑے بھائی مولانا عبیدالرحمن صاحب کی نظر ایک نورانی شخصیت پر پڑی ۔ جو نماز عشاء ادا کرکے مسجد نبوی صلی اللہ علیہ وسلم باب فہد سے باہر جا رہے تھے ۔ بھائی نے میری طرف دیکھا اور پوچھا داؤد وہ سامنے ویل چئیر پر جو شخصیت جا رہی ہے پہچانا؟ میں نے کہا حضرت کا چہرہ کچھ ڈھکا چھپا ہے اس لیے نہیں پہچان پا رہا تو بھائی کہنے لگے یہ مولانا سلیم اللہ خان صاحب ہیں۔ ساتھ بیٹھے میرے استاد اور چچا زاد بھائی مولانا یسین احمد عثمانی رحمہ اللہ(جو 2013 میں شدید علالت کے بعد رمضان المبارک میں اس دار فانی سے کوچ فرما گئے ہیں) کہنے لگے کہ نہیں حلیہ اتنا تبدیل ہے یہ مولانا سلیم اللہ خان صاحب نہیں ہو سکتے۔ بھائی نے کہا آپ نہ مانو یہ مولانا سلیم اللہ خان صاحب ۔ خیر بھائی دوڑ کر گئے خادم سے پوچھا کون ہیں اس نے بہت دھیمی انداز میں بتایا مولانا سلیم اللہ خان ہیں۔ بھائی نے مصافحہ کیا واپس آکر بتایا کہ وہ مولانا سلیم اللہ خان صاحب ہی ہیں۔ استاد محترم اور تایا زاد بھائی مولانا یسین احمد عثمانی رحمہ اللہ نے کہا جلدی کرو حضرت کے پاس جاتے ہیں اور کہتے ہیں حضرت آپ حضرت مدنی رحمہ اللہ کے شاگرد ہیں ہم چند طلباء ہیں اگر آپ ہمیں اصحاب صفہ والی جگہ پر ایک چھوٹی سی حدیث پڑھا دیں تو حضرت مدنی رحمہ اللہ کی یاد تازہ ہو جائے گی اور ہمارے لیے ایک اعزاز ہوگا۔ ہم حضرت کی طرف دوڑے پر حضرت اس وقت تک جا چکے تھے۔ اور ہماری یہ خواہش بلکہ ایک حسرت تھی جو دل میں ہی رہ گئی ۔
    محمد یوسف نے اسے پسند کیا ہے۔

اس صفحے کو مشتہر کریں