صحیح بخاری میں ابواب اور احادیث میں عدم مطابقت

'بحث ونظر' میں موضوعات آغاز کردہ از imani9009, ‏نومبر 7, 2017۔

  1. imani9009

    imani9009 وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    149
    موصول پسندیدگیاں:
    77
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    اس موضوع کے لکھنے کا مقصد صرف ان لوگوں کی اصلاح ہے جو ہر مسئلے میں صحیح بخاری کے ابواب پیش کرتے ہیں کہ اسکا باب تو یہ ہے۔اس موضوع کا مقصد ہر گز امام بخاری کی شان کو گھٹانا نہیں۔
    امام بخاری بے شک امیر المومنین فی الحدیث ہیں

    صحیح بخاری میں لکھا ہے کہ کھڑے اوربیٹھ کر پیشاب کرنا۔ لیکن امام صاحب نےبیٹھ کر پیشاب کرنے پر کوئی حدیث پیش نہیں کی۔
    [​IMG]
    صحیح بخاری میں باب لکھا ہے عید کی نماز نہ ملے تو دو رکعت تنہا پڑھ لے۔ لیکن جو حدیث پیش کی اس میں ایسی کوئی بات ہی نہیں
    [​IMG]

    صحیح بخاری میں باب لکھا ہے مقتدی کا اونچی آواز سے آمین کہنا لیکن جو حدیث پیش کی اس میں اونچی آواز سے آمین کا کوئی تذکر ہ نہیں
    [​IMG]
    صحیح بخاری میں باب باندھا ہے کہ حضور نے اس شخص کو جس نے رکوع پوری طرح نہیں کیا تھا دوبارہ نما ز پڑھنے کا حکم ۔ لیکن جو حدیث پیش کی اس میں پوری نماز ٹھیک طرح سے نہیں پڑھی گئی تھی نہ کہ صرف رکوع
    [​IMG]
    صحیح بخاری میں باب باندھا ہے کہ عید گاہ میں دسویں تاریخ کو قربانی ۔ لیکن جو حدیث پیش کی اس میں دسویں تاریخ کی کوئی بات نہیں
    [​IMG]
    صحیح بخاری میں باب باندھا ہے کہ بچے عید گاہ میں۔ اور جو حدیث پیش کی ہے اس میں عورتوں کا ذکر ہے بچوں کا نہیں[​IMG]
    صحیح بخاری میں باب باندھا ہے کہ اشاروں سے نماز پڑھنا ۔لیکن جو حدیث پیش کی اس میں اشاروں کا ذکر ہی نہیں ہے۔
    [​IMG]
    صحیح بخاری میں باب باندھا ہے قصر نمازکی مسافت کتنی ہوگی(ابن عمر اور ابن عباس کا اثر اس بارے میں لکھا ہے)، اور جو حدیث پیش کی اس میں عورت کے محرم کے بغیر سفر کا بیان ہے
    [​IMG]
    احمد پربھنوی اور اشماریہ .نے اسے پسند کیا ہے۔
  2. اشماریہ

    اشماریہ رکن مجلس العلماء رکن مجلس العلماء

    پیغامات:
    439
    موصول پسندیدگیاں:
    274
    صنف:
    Male
    عنوان تبدیل کر دیا گیا ہے.
    ابن عثمان اور imani9009 .نے اسے پسند کیا ہے۔

اس صفحے کو مشتہر کریں