غزل

'بزمِ غزل' میں موضوعات آغاز کردہ از احمدقاسمی, ‏مئی 27, 2013۔

  1. احمدقاسمی

    احمدقاسمی منتظم اعلی۔ أیدہ اللہ منتظم اعلی

    پیغامات:
    3,631
    موصول پسندیدگیاں:
    791
    صنف:
    Male
    جگہ:
    India
    غزل
    عزیز بلگامی

    ہر شب یہ فکر چاند کے ہالے کہاں گئے
    ہر صبح یہ خیال اجالے کہاں گئے

    یا ہے شراب پر یا داوواؤں پہ انحصار
    جو نیند بخش دیں وہ نوالے کہاں گئے

    وہ التجائیں میری تہجد کی کیا ہوئیں
    تھی عرش تک رسائی وہ نالے کہاں گئے

    منزل پہ آپ دھوم مچانے لگے جناب
    مجھ کو یہ فکر، پاؤں کے چھالے کہاں گئے

    دستِ قلم میں آج بھی اخلاق سوزیاں
    کردار ساز تھے جو رسالے ، کہاں گئے

    گلشن کے بیچ کھلنے لگے ہیں کنول عزیزؔ
    کیچڑ میں ڈھونڈتا ہوں کہ لالے کہاں گئے
  2. بنت حوا

    بنت حوا فعال رکن وی آئی پی ممبر

    پیغامات:
    4,572
    موصول پسندیدگیاں:
    458
    صنف:
    Female
    جگہ:
    Pakistan
  3. محمدداؤدالرحمن علی

    محمدداؤدالرحمن علی منتظم۔ أیده الله Staff Member منتظم رکن افکارِ قاسمی

    پیغامات:
    6,291
    موصول پسندیدگیاں:
    1,708
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    واہ واہ۔ کیا بات ہے۔ بھت کوب
  4. ابو دجانہ

    ابو دجانہ وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    57
    موصول پسندیدگیاں:
    2
    صنف:
    Male
    جگہ:
    United Arab Emirates
    وہ التجائیں میری تہجد کی کیا ہوئیں
    تھی عرش تک رسائی وہ نالے کہاں گئے

    منزل پہ آپ دھوم مچانے لگے جناب
    مجھ کو یہ فکر، پاؤں کے چھالے کہاں گئے

    ۔
    ۔
    جزاک اللہ۔۔
    ۔
    بہت ہی عمدہ۔۔ بہت ہی زبردست۔۔
    ۔

اس صفحے کو مشتہر کریں