غزل

'بزمِ غزل' میں موضوعات آغاز کردہ از احمدقاسمی, ‏اگست 13, 2013۔

  1. احمدقاسمی

    احمدقاسمی منتظم اعلی۔ أیدہ اللہ منتظم اعلی

    پیغامات:
    3,631
    موصول پسندیدگیاں:
    791
    صنف:
    Male
    جگہ:
    India
    غزل
    (محمد یوسف راناؔ)

    وہ ترا رنگین سراپا اور چوڑی کی کھنک
    وہ تری زلفوں کا بادل اور آنچل کی دھنک

    وہ بنا دیتی ہے مجھ کو بھی شرابی کی طرح
    بند کمرے میں مچلتی گرم سانسوں کی مہک

    ایک پل میں کر دے پاگل شاعرِ بدنام کو
    تیرے ہونٹوں کی حرارت تیرے گالوں کی للک

    ماہ وانجم محو حیرت ترے انوار سے
    دل کو روشن کر رہی ہے تیرے ماتھے کی چمک

    جان یوسف اس سے بہتر تو تیری پازیب ہے
    کچھ نہیں ہے اس کے آگے آبشاروں کی کھنک

    تو چلے تو یاد آتی ہے صبائے خوش خرام
    تجھ سے شرماتی ہے جاناں شاخِ گلشن کی لچک

    لفظ یوسفؔ کا ہوا ہے جیسے مصرعہ گیت کا
    میرے لہجے میں اتر آئی ترے رخ کی دھنک

  2. بنت حوا

    بنت حوا فعال رکن وی آئی پی ممبر

    پیغامات:
    4,572
    موصول پسندیدگیاں:
    458
    صنف:
    Female
    جگہ:
    Pakistan
    بہت خوب :->~~ :->~~
  3. محمد نبیل خان

    محمد نبیل خان وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    8,688
    موصول پسندیدگیاں:
    772
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    وہ ترا رنگین سراپا اور چوڑی کی کھنک
    وہ تری زلفوں کا بادل اور آنچل کی دھنک

    وہ بنا دیتی ہے مجھ کو بھی شرابی کی طرح
    بند کمرے میں مچلتی گرم سانسوں کی مہک

    اللہ خیر ہی کرے قاسمی صاحب ~^o^~
  4. احمدقاسمی

    احمدقاسمی منتظم اعلی۔ أیدہ اللہ منتظم اعلی

    پیغامات:
    3,631
    موصول پسندیدگیاں:
    791
    صنف:
    Male
    جگہ:
    India
    نبیل صاحب وجد میں کیوں آگئے؟یادِ ماضی عذاب ہے کیا؟

اس صفحے کو مشتہر کریں