مولانا حکیم شاہ محمد اختر کو سپرد خاک کر دیا گیا ۔۔۔ روزنامہ جنگ کراچی

'ماہنامہ افکارِ قاسمی شمارہ 9 برائے اگست 2013 مجّدِ' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد ارمغان, ‏جولائی 21, 2013۔

  1. محمد ارمغان

    محمد ارمغان وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    1,661
    موصول پسندیدگیاں:
    106
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    مولانا حکیم شاہ محمد اختر کو سپرد خاک کر دیا گیا
    روزنامہ جنگ کراچی


    [​IMG]
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
  2. پیامبر

    پیامبر وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    1,245
    موصول پسندیدگیاں:
    568
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    مولانا حکیم شاہ محمد اختر کو سپرد خاک کردیا گیا۔
    13 سال سے علیل تھے، منور حسن مولانا فضل الرحمن اور دیگر کا اظہار تعزیت
    کراچی (اسٹاف رپورٹر) ممتاز عالم دین مولانا حکیم شاہ محمد اختر کو پیر کی صبح جامعہ اشرف المدارس گلستان جوہر میں سپرد خاک کردیا گیا۔ مولانا شاہ محمد حکیم اختر اتوار کی شام کو گلشن اقبال میں واقع اپنی خانقاہ میں 13 سالہ طویل علالت کے بعد انتقال کرگئے تھے۔ ان کی انتقال کی خبر ملتے ہی پاکستان اور بیرون دنیا سے عقیدت مندوں، شاگردوں، خلفاء اور چاہنے والے کی بڑی تعداد نماز جنازہ میں شرکت کے لیے کراچی پہنچی۔ مولانا کی نماز جنازہ ان کے قائم کردہ دینی ادارے جامعہ اشرف المدارس سندھ بلوچ سوسائٹی گلستان جوہر میں ان کی وصیت کے مطابق ان کے فرزند مولانا حکیم محمد مظہر کی اقتدا میں ادا کی گئی۔ نماز جنازہ میں جید علماء مولانا سلیم اللہ خان، مفتی رفیع عثمانی، سینیٹر عبد الغفور حیدری، مولاناعبد الکریم عابد، مفتی ابو زر محی الدین، مولانا اورنگزیب فاروقی سمیت مختلف سیاسی و مذہبی قائدین سمیت ایک لاکھ سے زائد افراد نے شرکت کی۔ بعد ازاں ہزاروں سوگواروں کی موجودگی میں مولانا کو جامعہ اشرف المدارس کے مقامی قبرستان میں سپرد خاک کردیا گیا۔ اس موقع پر ہر آنکھاشکبار تھی اور شاگر، خلفاء، مریدین، عقیدت مند اور عام شہری بھی مولانا کی عقیدت میں اشکبار تھے۔ علاوہ ازیں جے یو آئی کے سربراہ مولانا فضل الرحمن، مولانا سمیع الحق، جماعت اسلامی کے امیر سید منور حسن، مفتی تقی عثمانی، مفتی رفیع عثمانی، مولانا عبد الرزاق سکندر، مولانا سلیم اللہ خان، مفتی زر ولی خان، مولانا اسفندیارولی، مفتی ولی خان المظفر، مفتی ابو ہریرہ محی الدین، مولانا حماد اللہ، حاجی مسعود پاریکھ، مفتی عثمان یار خان، یحی پولای، پاسبان کے صدر الطاف شکور، اجمیر گلستان جوہر کے مکینوں نے حکیم شاہ محمد اختر کے انتقال کو عظیم سانحہ اور ناقابل تلافی نقصان قرار دیا ہے اور دلی افسوس کا اظہار کرتے ہوئے مرحوم کی مغفرت کی دعا کی ہے۔
  3. محمدداؤدالرحمن علی

    محمدداؤدالرحمن علی منتظم۔ أیده الله Staff Member منتظم رکن افکارِ قاسمی

    پیغامات:
    6,290
    موصول پسندیدگیاں:
    1,707
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    مولانا حکیم شاہ محمد اختر کو سپرد خاک کر دیا گیا
    روزنامہ جنگ کراچی

    13 سال سے علیل تھے، منور حسن مولانا فضل الرحمن اور دیگر کا اظہار تعزیت
    کراچی (اسٹاف رپورٹر) ممتاز عالم دین مولانا حکیم شاہ محمد اختر کو پیر کی صبح جامعہ اشرف المدارس گلستان جوہر میں سپرد خاک کردیا گیا۔ مولانا شاہ محمد حکیم اختر اتوار کی شام کو گلشن اقبال میں واقع اپنی خانقاہ میں 13 سالہ طویل علالت کے بعد انتقال کرگئے تھے۔ ان کے انتقال کی خبر ملتے ہی پاکستان اور بیرون دنیا سے عقیدت مندوں، شاگردوں، خلفاء اور چاہنے والے کی بڑی تعداد نماز جنازہ میں شرکت کے لیے کراچی پہنچی۔ مولانا کی نماز جنازہ ان کے قائم کردہ دینی ادارے جامعہ اشرف المدارس سندھ بلوچ سوسائٹی گلستان جوہر میں ان کی وصیت کے مطابق ان کے فرزند مولانا حکیم محمد مظہر کی اقتدا میں ادا کی گئی۔ نماز جنازہ میں جید علماء مولانا سلیم اللہ خان، مفتی رفیع عثمانی، سینیٹر عبد الغفور حیدری، مولاناعبد الکریم عابد، مفتی ابو زر محی الدین، مولانا اورنگزیب فاروقی سمیت مختلف سیاسی و مذہبی قائدین سمیت ایک لاکھ سے زائد افراد نے شرکت کی۔ بعد ازاں ہزاروں سوگواروں کی موجودگی میں مولانا کو جامعہ اشرف المدارس کے مقامی قبرستان میں سپرد خاک کردیا گیا۔ اس موقع پر ہر آنکھ اشکبار تھی اور شاگر، خلفاء، مریدین، عقیدت مند اور عام شہری بھی مولانا کی عقیدت میں اشکبار تھے۔ علاوہ ازیں جے یو آئی کے سربراہ مولانا فضل الرحمن، مولانا سمیع الحق، جماعت اسلامی کے امیر سید منور حسن، مفتی تقی عثمانی، مفتی رفیع عثمانی، مولانا عبد الرزاق سکندر، مولانا سلیم اللہ خان، مفتی زر ولی خان، مولانا اسفندیارولی، مفتی ولی خان المظفر، مفتی ابو ہریرہ محی الدین، مولانا حماد اللہ، حاجی مسعود پاریکھ، مفتی عثمان یار خان، یحییٰ پولانی، پاسبان کے صدر الطاف شکور، اجمیر گلستان جوہر کے مکینوں نے حکیم شاہ محمد اختر کے انتقال کو عظیم سانحہ اور ناقابل تلافی نقصان قرار دیا ہے اور دلی افسوس کا اظہار کرتے ہوئے مرحوم کی مغفرت کی دعا کی ہے۔

اس صفحے کو مشتہر کریں