ہندوؤں کا شانِ رسالت ﷺ کا اعتراف

'آؤ باتیں کریں' میں موضوعات آغاز کردہ از احمدقاسمی, ‏اگست 13, 2016۔

  1. احمدقاسمی

    احمدقاسمی وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    3,624
    موصول پسندیدگیاں:
    790
    صنف:
    Male
    جگہ:
    India
    ہندوؤں کا شانِ رسالت ﷺ کا اعتراف

    جیسا کہ رسالت مآب حضرت محمد ﷺتمام جہانوں کیلئے نبی اور رسول ہیں ۔آپ ﷺ تمام جہانوں کیلئے رحمت ہیں ، دنیا کی کسی بھی خطہ ، ملک یا سلطنت کی کسی بھی قوم کا ، دانشور جس نے حسد اور بغض کی عنیک کے بغیر سیرت رسول ﷺ کا مطالعہ کیا ہو وہ یہ بات کہنے پر مجبور ہو جاتا ہے کہ حضرت محد ﷺ وہ واحد ہستی ہیں کہ آپ ﷺ جیسا نہ کوئی ہوا ہے اور نہ قیامت ہو گا ۔آپ ﷺ اللہ کے آخری نبی اور رسول ہیں

    آپ ﷺ وہ عظیم واعلیٰ شخصیت ہیں جن کے آنے کا ذکر آسمانی والہامی کتب میں ہے ، جس کا تذکرہ اللہ پاک نے اپنی مقدس کتابِ مبین میں کیا ہے ۔اللہ تعالیٰ کی ذات عالیہ کا ارشاد گرامی ہے " اے محبوب ہم نے آپ کا ذکر بلند کر دیا " ( القرآن) آپ نور مجسم ﷺ کا ذکر اللہ تعالیٰ کی ذات با بر کت نے خود کیا ۔ آپ وہ ہستی ہیں جن پر درود وسلام ! پاک ذات نے خود آپ کی تعریف پیش کی تو ان کی عظمت ورفعت کون بیان کر سکتا ہے ؟ یہ کسی انسان یا جن کے بس کی بات نہیں کہ وہ تاجدار مدینہ کی شان اقدس بیان کر سکے۔

    ملک میں ایک کتاب بنام "کا لکی اوتار " شائع ہو ئی ہے ۔ کتاب کا مصنف " پنڈت وید پر کاش ہے " جو بر ہمن ہندو ہے ۔اس کتاب کا مصنف الہ آباد یو نیورسٹی سے منسلک ہے اور سنسکرت کا معروف محقق اور اسکالر ہے ۔

    مصنف اپنی تحقیقی کتاب " کالکی اوتار "کو مشہور ومعروف پنڈتوں جو ماہر تحقیق کار تھے ، کے سامنے پیش کیا ،یہ سبھی پنڈت اپنے شعبے میں ماہر تھے ۔ان سب نے کا لکی اوتار میں درج مضمون کا بغور مطالعہ کیا اور تحقیق کے بعد تما م حوالہ جات کو درست اور مستند قرار دیا ۔ مصنف نے اپنی کتاب کا نام ہندی میں " کا لکی اوتار رکھا " جس ما مطلب ہے "تما کا ئنات کا رہنما" ہندوؤں کی اہم مذہبی کتب میں ایک عظیم رہنما کا ذکر ہے جسے "اوتار"کا نام دیا گیا ہے ۔اس سے مراد حضرت محمد ﷺ ہیں جو مکہ میں پیدا ہو ئے ، چنا نچہ تما م ہندو جہاں کہیں بھی ہوں انہیں کا لکی اوتار کا مزید انتظار نہیں کر نا چاہئے بلکہ محض اسلام قبول کرنا ہے اور آخری رسول کے نقش قدم پر چلنا ہے جو بہت پہلے مشن کی تکمیل کے بعد اس دنیا سے تشریف لے گئے ہیں۔

    اپنے اس دعوے کی دلیل میں پنڈت وید پر کا ش نے ہندوؤں کی مذہبی کتاب وید سے درج ذیل حوالے دلیل کے ساتھ پیش کئے ہیں ۔(۱) وید میں لکھا ہے کہ کا لکی اوتار بھگوان کا آخری اوتار ہو گا جو پوری دنیا کو راستہ دکھائے گا (۲) پیشین گو ئی کے مطابق کالکی اوتار ایک جزیرے میں پیدا ہوں گے اور یہ عرب کا علاقہ ہے جسے جزیرۃ العرب کہا جاتا ہے ۔(۳) مقدس کتاب میں لکھا ہے کہ کالکی اوتار کے والد کا نام "وشنو بھگت "اور والدہ کا نام "سومانب" ہو گا ۔سنسکرت زبان میں وشنو اللہ کے معنیٰ میں استعمال ہو تا اور بھگت کے معنیٰ غلام اور بندے کے ہیں ۔ چنانچہ عربی زبان میں وشنو بھگت کا مطلب اللہ کا بند ہ یعنی عبد اللہ ہے ۔سنسکرت میں "سومانب" کا مطلب امن ہے جو عربی زبان میں آمنہ ہو گا اور آخری رسول کے والد کا نام عبد اللہ اور والدہ کا نام آمنہ ہے ۔(۴) وید میں لکھا ہے کہ کالکی اوتار زیتون اور کھجور استعمال کر ے گا ۔یہ دونوں پھل حضور اکرم ﷺ کو مر غوب تھے اوہ اپنے قول میں سچا اور دیانتدار ہو گا ۔ ،مکہ میں حضور اکرم ﷺ کیلئے امین اور صادق کا لقب استعمال ہو تا تھا (۵) وید کے مطابق کا لکی ا وتار اپنی سر زمین کے معزز خاندان میں سے ہو گا اور یہ بھی نبی کریم ﷺ کے بارے میں شچ ثابت ہو تا ہے ۔قریش کے معزز قبیلے میں سے تھے ، جن کی مکہ میں بیحد عزت تھی(۶) ہماری کتاب کہتی ہے کہ بھگوان کا لکی اوتارکو اپنےخصوصی قاصد کے ذریعہ ایک غار میں پڑھا ئے گا ۔ یہ بھی درست ہے حضرت محمد ﷺ مکے کی وہ واحد شخصیت تھے جنہیں اللہ تعالیٰ نے غارِ حرا میں اپنے خاص فرشتے حضرت جبرئیل کے ذریعہ وحی بھیجی یعنی تعلیم دی۔(۷) ہمارے بنیادی عقیدے کا مطابق بھگوان کا لکی اوتار کی بہت مدد کرے گا اور اسے بہت قوت عطا کرے گا جس پر سوار ہو کر زمین اور سات آسمانوں کی سیر کرائے گا ۔(۸) ہمیں یقین ہے بھگوان کالکی اوتار کی بہت مدد کرے گا اور اسے بہت قوت عطا کرے گا ۔ ہم جانتے ہیں یہ جنگ بدر میں اللہ تعالیٰ نے حضرت محمد ﷺ کی فرشتوں سے مدد فر مائی ۔(۹) ہماری ساری مذہبی کتا بوں کے مطابق کا لکی اوتار گھڑ سواری، تیر اندازی اور تلوار زنی میں ماہر ہو گا ۔

    پنڈت وید پر کاش نے اس پر جو تبصرہ کیا ہے وہ بہت اہم اور قابل غور ہے ۔ وہ لکھتے ہیں کہ گھوڑوں، تلواروں اور نیزوں کا زمانہ بہت پہلے گزر چکا ۔اب ٹینک ،توپ اور میزائل جیسے ہتھیار استعمال ہو تے ہیں۔ لہذا یہ عقلمندی نہیں ہے کہ ہم تلواروں ، تیروں اور بر چھیوں سے مسلح کالکی اوتار کا انتطار کرتے رہیں حقیقت یہ ہے کہ مقدس کتابوںمیں کالکی اوتار کے واضح اشارے حضرت محمد ﷺ کے بارے میں ہیں جو ان تمام عربی فنون میں کمال مہارت رکھتے تھے۔ ۔(ڈاکڑخالد انجم ۔اخبار مشرق۱۲؍اگست ۲۰۱۶)
    محمد شعیب نواز نے اسے پسند کیا ہے۔

اس صفحے کو مشتہر کریں