”لباس بھی گفتگو کرتا ہے“

'متفرق موضوعات(خواتین)' میں موضوعات آغاز کردہ از پیامبر, ‏جولائی 5, 2013۔

  1. پیامبر

    پیامبر وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    1,245
    موصول پسندیدگیاں:
    568
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    اس کا نام آمنہ ہے۔ وہ یونیورسٹی کی طالبہ ہے۔ وہ پہلے بھی میرے پاس آتی رہتی ہے۔ اورمجھ سے مختلف موضوعات پر گفتگو کرتی ہے۔ اس بار جب وہ میرے ہاں آئی تو کچھ الجھی ہوئی اور پریشان دکھائی دے رہی تھی، میں نے اس سے وجہ پوچھی تو کہنے لگی: مجھے ایک بات کی سمجھ نہیں آرہی۔ میں نے پوچھا: کس بات کی؟ بتائو، شاید میں تمھاری کچھ مدد کر سکوں۔ کہنے لگی: جب بھی میں بازار یا کسی مارکیٹ جانے کے لیے گھر سے نکلتی ہوں تو نوجوان مجھے گھورتے ہیں، جملے کستے ہیں اور مختلف حرکتوں اور باتوں کے ذریعے سے اپنی طرف راغب کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔ مجھے یہ سمجھ نہیں آتی کہ وہ ایسا کیوں کرتے ہیں، حالانکہ میں ایک معزز اور پاکباز لڑکی ہوں۔ مجھ میں اللہ کا خوف بھی ہے۔ میرے والدین نے میری اچھی تربیت کی ہے۔ پھر بھی نہ جانے میرے ساتھ تقریباً ہر بار ہی ایسا کیوں ہوتا ہے۔
    میں نے کہا: میں تمھیں ایک بات کہنا چاہتی ہوں مگر سوچ رہی ہوں کہ کہوں یا نہ کہوں۔ وہ کہنے لگی: سوچنا کیسا؟ جو کہنا چاہتی ہیں کہیں۔ میں نے کہا: دراصل اس بات کا تعلق تمھاری ذاتی زندگی اور شخصی آزادی سے ہے اور ہو سکتا ہے کہ میری بات تمھیں عجیب لگے۔ کہنے لگی: آپ جو کہنا چاہتی ہیں کھل کے کہیں۔ میں خود آپ کے پاس آئی ہوں اورآپ سے سوال کر رہی ہوں۔ میں نے کہا: اچھا ٹھیک ہے، پھر میری بات ذرا توجہ سے سننا۔
    تم نے ابھی اپنے بارے میں جو کچھ کہا وہ بالکل صحیح ہے مگر ایک چیز ایسی ہے جس کی طرف تم نے توجہ نہیں دی۔ اس نے پوچھا: وہ کیا؟ میں نے کہا: ’’تمھارا لباس۔‘‘ یہ سن کر اسے بہت حیرت ہوئی۔کہنے لگی: میرا لباس! بھلا اس بات کا میرے لباس سے کیا تعلق؟ بس یہ ہے کہ میرا لباس عمدہ اور خوبصورت ہوتا ہے۔ میں سکارف بھی پہنتی ہوں، میں نے کہا: تم صحیح کہہ رہی ہو۔ لیکن لڑکوں کی نظر اور لڑکیوں کی نظر میں فرق ہوتا ہے۔ کہنے لگی: کیا مطلب؟ اپنی بات ذرا کھول کر بیان کریں۔
    میں نے کہا: تمھارا لباس تنگ، چست ہوتا اور زرق برق ہے۔ لڑکے جب کسی لڑکی کو اس طرح کے لباس میں دیکھتے ہیں جو تنگ اور چست ہو اوراس سے لڑکی کے جسم کے اعضا نمایاں ہوتے ہوں، تو وہ اس کا پیچھا کرتے ہیں۔ اس پر طرح طرح کے فقرے کستے اور ڈائیلاگ بولتے ہیں کہ شاید اس طرح وہ اس لڑکی سے دوستی کرنے میں کامیاب ہوجائیں یا اس سے کوئی تعلق بنالیں۔ کہنے لگی: میرے ساتھ جو ایسا ہوتا ہے کیا اس کی وجہ بھی یہی ہے؟ میں نے کہا: اگر تمھیں میری بات کا ثبوت چاہیے تو تجربہ کر کے دیکھ لو، ایک بار تم اسی طرح کا لباس پہن کر بازار جائو اور دوسری بار کھلا لباس پہن کر جس میں سادگی ہو اور جسم کے اعضا نمایاں نہ ہوں اور دونوں بار اپنے ساتھ پیش آنے والی صورت حال نوٹ کرو۔ تمھیں خود ہی اندازہ ہو جائے گا کہ دوسری بار تمھیں اپنے لباس کی وجہ سے اتنی پریشانی کا سامنا نہیں کرنا پڑا، جتنی پریشانی کا سامنا تنگ اور چست لباس کی صورت میں کرنا پڑا تھا۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ لباس بھی گفتگو کرتا ہے اور نوجوان لڑکوں سے یہ کہتا ہے: ’’آئو، مجھ سے باتیں کرو۔‘‘ اس نے بڑے تعجب سے کہا: بھلا یہ کیسے ہوسکتا ہے؟ میں نے کہا: دیکھو، مردوں میں خواتین کی خوبصورتی کی طرف میلان ایک فطری بات ہے۔ اسی لیے تو اللہ تعالیٰ نے بھی قرآن مجید میں یہ ارشاد فرمایا ہے: {زُیِّنَ لِلنَّاسِ حُبُّ الشَّھَوٰتِ مِنَ النِّسَآئِ} ’’لوگوں کے لیے خواہشات کی محبت مزین کردی گئی ہے، یعنی عورتوں سے…۔‘‘لیکن اس طبعی اور فطری میلان کا ایک طریقہ بھی بتا دیا گیا ہے، یعنی مرد اور عورت کا باہم ازدواجی رشتے سے منسلک ہوجانا۔ اس طبعی خواہش کی تکمیل کے لیے آتی جاتی لڑکیوں کو گھورنا، ان پر فقرے اچھالنا یا اسی طرح کے اور بھونڈے طریقے استعمال کرنا قطعاً درست نہیں۔
    دیکھو! لباس کی ہیئت و کیفیت، اس کی ڈیزائننگ اور رنگ ڈھنگ مرد کے عورت کی طرف فطری میلان کو مزید بڑھا دیتی ہیں… کچھ دیر توقف کے بعد میں نے پھر کہا: اچھا کبھی تم نے غور کیا کہ لباس باہم رابطے کا ایک ذریعہ ہے؟… میں شاید ایسے اپنی بات نہ سمجھا پائوں، لہٰذا میں تمھیں کچھ مثالیں دیتی ہوں۔ تم کسی شخص کو اس سے بات کیے بنا محض اس کی وردی سے پہچان سکتی ہو کہ یہ جہاز کا کیپٹن ہے، یہ ڈاکٹر ہے، یہ انجینئر ہے، یہ مکینک ہے اور یہ خاکروب وغیرہ ہے۔ ایسے ہی اگر تمھارے لیے کسی نوجوان کا رشتہ آئے تو تم محض اس کا لباس دیکھ کر اس کی شخصیت کے بارے میں بہت کچھ اندازہ لگا سکتی ہو، بالکل یہی صورت اس لڑکی کے ساتھ پیش آتی ہے جس پر لڑکے فقرے کستے ہیں اور اسے اپنی طرف متوجہ کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔ کیونکہ اس لڑکی کا لباس انھیں ایسا کرنے کو کہہ رہا ہوتا ہے۔ شیطان کا ہدف ہے کہ وہ نوجوان لڑکیوں کو بے لباسی کی طرف لائے۔ اس سلسلے میں اس کی ابتدائی چال یہ ہے کہ وہ تنگ لباس کو نہایت خوبصورت بنا کر پیش کرتا ہے تاکہ جذبات کو انگیخت ہو اور فتنہ پیدا ہو۔ اور یہی کچھ اس نے ہمارے ماں باپ آدم و حواiکے ساتھ کیا تھا کہ انھیں بے لباس کر دیا تھا۔ یہ بے لباسی اور عریانیت شیطان کے بنیادی اہداف میں سے ہیں۔
    میری یہ باتیں سن کر وہ کہنے لگی: آپ کی باتیں مجھے بہت عجیب لگ رہی ہیں۔ میں نے کہا: یہ عجیب نہیں ہیں،حقیقت یہ ہے کہ جو لڑکی سمجھدار ہوتی ہے وہ خود کو شیطانی افکار کا شکار نہیں ہونے دیتی۔ وہ ایسا نہیں کرتی کہ وہ خود کو شہوات کے بازار میں لاکر پیش کر دے۔ بلکہ وہ اپنی نفسانی وجسمانی خوبصورتی کی حفاظت کرتی ہے۔ وہ روحانی طور پر خود کو مکمل کرنے کی کوشش کرتی ہے۔ ان دو نوجوانوں میں کتنا فرق ہے جن میں سے ایک اخلاقی بلندیوں پر فائز ہو اور دوسرا اخلاقی گراوٹ اور پستیوں کا شکار ہو! تمھیں چاہیے کہ تمھارا شمار اخلاق و کردار کے اعتبار سے بلند لوگوں میں ہو۔
    کہنے لگی: مگر میں برہنہ تو نہیں ہوتی۔ میں نے کہا:تمھیں اندازہ ہے کہ چست اور تنگ لباس عریانیت کی بہ نسبت نوجوانوں کو زیادہ برانگیختہ کرتا ہے۔ اس سے جسم کے خدوخال نمایاں ہوجاتے ہیں جس سے نوجوانوں میں مزید حصوں کو دیکھنے کے شیطانی خیالات جنم لینے لگتے ہیں۔ اس طرح لباس انھیں اکسانے کا باعث بنتا ہے اور باقی کسر حرکات اورجملے بازی پوری کر دیتے ہیں۔ میری یہ باتیں سن کر وہ کچھ سوچنے لگی۔ پھر جب وہ بولی تو کہا: آپ کی باتوں نے مجھے یہ سوچنے پر مجبور کردیا ہے کہ میں اپنے لباس کا انداز بدل لوں۔
    میں نے اپنی بات کو اورزیادہ واضح کرنے کے لیے اس سے کہا: اچھا مجھے یہ بتائو کہ ایک چھوٹا بچہ تمھارے پاس آئے، اس کا لباس پھٹا پرانا ہو تو تم اس کے بارے میں کیا سوچو گی؟ کہنے لگی: یہی کہ یہ فقیر اور ضرورت مند ہے، میں نے کہا: ٹھیک ہے، پھراس کے بعد کیا کرو گی؟ کہنے لگی: میں اسے کوئی صدقہ، خیرات وغیرہ دے دوں گی۔ میں نے کہا: دیکھا، تم صرف اس کے لباس سے اندازہ کر لو گی کہ یہ فقیر ہے اوراسے صدقہ وغیرہ دو گی، حالانکہ اس نے تم سے کچھ کہا نہیں، اپنی ضرورت اپنی زبان سے بیان نہیں کی مگر تمھیں پتا چل گیا ، بالکل ایسے ہی جب نوجوان لڑکے لڑکیوں کو اس قسم کا لباس پہنے دیکھتے ہیں تو وہ طرح طرح کے جملے بازی کرتے ہیں۔ لہٰذا لباس پر توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ ان لڑکیوں کا احترام اپنی جگہ مگر یہ بھی ایک حقیقت ہے کہ ان کا لباس ان نوجوان لڑکوں کو یہ دعوت دے رہا ہوتا ہے کہ ’’آئو! ہمیں دیکھو۔‘‘ جبکہ انھیں اس کا احساس ہی نہیں ہوتا، یہ سب لاشعوری طور پر ہو رہا ہوتا ہے۔یہی وجہ ہے کہ وہ ان لڑکیوں کے ساتھ ایسا رویہ اپناتے ہیں۔
    میری اس تفصیلی وضاحت پر اس نے میرا شکریہ ادا کیا۔ اوربالآخر ہم دونوں کی گفتگو اس خلاصے پر ختم ہوئی کہ ’’لباس بھی گفتگو کرتا ہے۔‘‘
  2. احمدقاسمی

    احمدقاسمی منتظم اعلی۔ أیدہ اللہ منتظم اعلی

    پیغامات:
    3,671
    موصول پسندیدگیاں:
    793
    صنف:
    Male
    جگہ:
    India
    “ان لڑکیوں کا احترام اپنی جگہ مگر یہ بھی ایک حقیقت ہے کہ ان کا لباس ان نوجوان لڑکوں کو یہ دعوت دے رہا ہوتا ہے کہ ’’آئو! ہمیں دیکھو۔‘‘ جبکہ انھیں اس کا احساس ہی نہیں ہوتا، یہ سب لاشعوری طور پر ہو رہا ہوتا ہے۔یہی وجہ ہے کہ وہ ان لڑکیوں کے ساتھ ایسا رویہ اپناتے ہیں“

    صحیح بالکل صحیح اللھم انی اعوذ بک من فتنہ النساء
  3. محمد ارمغان

    محمد ارمغان وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    1,661
    موصول پسندیدگیاں:
    106
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    ماشاء اللہ۔۔۔عمدہ کاوش ہے۔
  4. پیامبر

    پیامبر وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    1,245
    موصول پسندیدگیاں:
    568
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    ارمغان بھائی یہ ایک انتخاب تھا۔
  5. محمد نبیل خان

    محمد نبیل خان وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    8,688
    موصول پسندیدگیاں:
    772
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ جب اتنی دیدہ دلیری سے دعوت نظارہ ملے گی تو اس دور کے سب نوجوان ولی اللہ تو ہیں نہیں کہ لاحول ولاقوۃ الا باللہ پڑھ کر آنکوں کو جھکالیں اور جب شہد کو کھلے عام لے کر گھوما جائے گا تو مکھیاں تو ضرور بیھٹیں گی اور اگر شہد کو اچھی طرح سے ڈھانپ کے لیجایا جائے گا تو مکھیوں سے محفوظ رہے گا یہی حال لڑکیوں کا ہے اگروہ اچھی طرح پردہ کر کے گھر سے باہر نکلیں تو نگاہ بد سے محفوظ رہ سکتی ہیں ۔

    شئیرنگ پہ شکریہ
  6. بنت حوا

    بنت حوا فعال رکن وی آئی پی ممبر

    پیغامات:
    4,572
    موصول پسندیدگیاں:
    458
    صنف:
    Female
    جگہ:
    Pakistan
    شئیرنگ پہ شکریہ
  7. محمدداؤدالرحمن علی

    محمدداؤدالرحمن علی منتظم اعلی۔ أیدہ اللہ Staff Member منتظم اعلی رکن افکارِ قاسمی

    پیغامات:
    6,303
    موصول پسندیدگیاں:
    1,710
    صنف:
    Male
    جگہ:
    Pakistan
    بھت ہی زبردست انتخاب کیا آپ نے پیامبر بھائی ۔ جزاک اللہ خیرا
  8. أضواء

    أضواء وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    2,522
    موصول پسندیدگیاں:
    23
    صنف:
    Female
    جگہ:
    Saudi Arabia
    اللهم احفظنا من شرور الفتن ماظهر منها ومابطن

    شئیرنگ پر آ پکا بیحد شکریہ
  9. رجاء

    رجاء وفقہ اللہ رکن

    پیغامات:
    1,198
    موصول پسندیدگیاں:
    8
    صنف:
    Female
    جگہ:
    Pakistan
    اللهم احفظنا من شرور الفتن ماظهر منها ومابطن

    شئیرنگ پر آ پکا بیحد شکریہ

اس صفحے کو مشتہر کریں