پنڈ دی کُڑی

اسداللہ شاہ

وفقہ اللہ
رکن
پنڈ کی پیپل چھاں تھلے
ہم عشق لڑایا کرتے تھے
وہ پانڈے دھونے آتی تھی
ہم مج نوایا کرتے تھے
وہ ہر اک کام میں آگے تھی
ہم ہر اک کام میں پیچھے تھے
وہ سبق مُکا بھی جاتی تھی
ہم پنسل گھڑیا کرتے تھے
گرمیوں کی شکر دوپہرے
جدوں امب پے چڑھیا کرتے تھے
منہ سُجھ کے پرولہ ہوتا تھا
جب ڈیموں لڑیا کرتے تھے
جب بھی پنڈ کے کھوہ پے
وہ مجھ سے ملنے آتی تھی
شیدا، گاما، کامی، طیفا
مفت میں سڑیا کرتے تھے​
 

اسداللہ شاہ

وفقہ اللہ
رکن
محمد شہزاد حفیظ نے کہا ہے:
اسد بھیا جب آپ ہر کام میں پیچھے ہی رہ جاتے تھے تو پنڈ کی کڑی کا دل کیسے جیت جاتے ؟
بھائی اسی وجہ سے میں نے دل ہی نہیں لگایا
 

سیفی خان

وفقہ اللہ
رکن
اسداللہ شاہ نے کہا ہے:
محمد شہزاد حفیظ نے کہا ہے:
اسد بھیا جب آپ ہر کام میں پیچھے ہی رہ جاتے تھے تو پنڈ کی کڑی کا دل کیسے جیت جاتے ؟
بھائی اسی وجہ سے میں نے دل ہی نہیں لگایا
بڑا چنگا کیتا جے ۔ ۔۔ ۔ :->~~ :->~~ :->~~
 
Top