دل بدل دے دوسری قسط

مولانانورالحسن انور

رکن مجلس العلماء
رکن مجلس العلماء
دل انسانی وجود کا ہم رکن ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اللہ تعالی نے بھی دل کا ذکر قرآن پاک میں متعدد بار کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کہیں فر مایا ہم نے ہر انسان میں دودل نہیں ایک دل رکھا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کہیں کفار ومشرکین کے ذکر میں ۔۔۔۔۔۔ ختم اللہ علی قلوبھم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اللہ نے ان کے دلوں پر مھر کردی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔` کہیں ان اکرمکم عنداللہ اتقکم ۔۔۔۔ اللہ کے نزدیک شرف والا وہ ہے جو سب سے زیادہ متقی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تقوی کے بارے رحمت عالم صل اللہ علیہ وسلم نے فر مایا۔۔۔۔۔ التقوی ھھنا۔۔۔۔۔۔۔ تقوی یہاں ہے اور آپ نے دل کی طرف اشارہ فر مایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کہیں فر مایا۔۔۔۔۔۔۔ ان فی ذالک لذکری لمن کان لہ قلب بے شک قرآن نصیحت ہے اس کے لئے جس کے پاس سوچنے سمھجنے والا دل ہے(ق37)اور صحابہ کے دل کے متعلق اللہ نے فر مایا ۔۔۔۔۔۔۔۔ولکن اللہ حبب الیکم الایمان وزینہ فی قلوبکم ۔۔۔۔۔۔اللہ نے محبت ڈالدی تمھارے دل میں ایمان کی اور اسکو تمھارے دلوں میں مرغوب کر دیا (حجرات8) اور فر مایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اولئک الذین امتحن اللہ قلوبھم للتقوی۔۔۔۔۔۔۔۔ وہی ہیں جن کے دلوں کو اللہ نے جانچ لیا ہے تقوی کے لئے (حجرات3) صحابہ بیعت کر رہے تھے تواللہ نے فر مایا اللہ راضی ہوا ایمان والوں سے جب بیعت کر نے لگے تجھ سے اس درخت کے نیچے۔۔۔۔۔۔۔ فعلم مافی قلو بھم پھر معلوم کیا جو ان کے دلوں میں تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اگر غور کیا جاے تو دل ہی مورد نبوت ہے دماغ نہیں کیو نکہ نبوت کسی انسان کی سوچ کی پیداوار نہیں ہو تی اور نہ کسی قوت متخیلہ کا نتیجہ ہو تی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ بلکہ نبوت براہ راست دل پر اتر تی ہے دماغ پر نہیں ۔۔۔۔۔۔ اللہ تعالی نے فر مایا نزل بہ الروح الا مین ہ علی قلبک لے کر اترا اسکو فرشتہ معتبر آپ کے دل پر( سورۃ شعرا) فانہ نزلہ علی قلبک (بقرہ) سو اس جبریل امین نے اتارا ہے یہ کلام آپ کے دل پر اللہ کے حکم سے ۔۔۔۔ اگر نبوت کا مورد دماغ ہوتا تو اللہ کبھی نہ فر ماتا علی قلبک اور شیخ ابن عربی رحمۃ اللہ فر ماتے ہیں ا علم ان الوحی لا ینزل بہ الملک علی غیر قلب نبی اصلا ( فتوحات مکہ ص38 ج3)اور تم جان لو کہ فرشتہ وحی لے کر اس دل پہ نہیں اترتا جو نبی نہیں ۔۔۔۔۔۔ دلوں پہ اتر نے والے فرشتے کا نام جبریل ہے اور دماغ پر اتر نے والے ساے کو ٹیچی ٹیچی کہتے ہیں یہ فرشتہ قادیانی کا تھا( تذکرہ ا وہام ص13 )
اللہ تعالی نے کچھ وہ احکام دئے جن کا جسم سے ہے نماز روزہ زکوۃ جھاد۔۔۔۔۔۔ اسی طرح بہت سے فرائض ہماری روح باطن دل سے متعلق ہیں تواضع د ل کا فعل ہے
اخلاص دل کی ایک کیفت کا نام ہے
شکر دل کا عمل ہے
صبر
تقوی
توکل
جاری ہے
 

محمد نبیل خان

وفقہ اللہ
رکن
اللہ تعالی نے کچھ وہ احکام دئے جن کا جسم سے ہے نماز روزہ زکوۃ جھاد۔۔۔۔۔۔ اسی طرح بہت سے فرائض ہماری روح باطن دل سے متعلق ہیں تواضع د ل کا فعل ہے

جزاک اللہ خیرا ۔
 
Top