غزل

احمدقاسمی

منتظم اعلی۔ أیدہ اللہ
Staff member
منتظم اعلی
[align=center]غزل

چھو کر میرے ہو نٹوں کو مجھے پاگل کردو
اپنے احساس کی خوشبو سے مجھے صندل کردو

مجھ کو معلوم نہیں جذبہ آتش کیا ہے
اپنی سانسوں کی حرارت سے مجھے بیکل کردو

چاندنی اتری ہے ، میری آنکھوں میں دلھن بن کر
اپنی چاہت کا، میری آنکھوں میں کاجل کردو

ہے شب وصل ، اور یہ تشنگی کیسی
اس قدر ٹوٹ کر برسو مجھے جل تھل کردو

مجھ کو معلوم ہے تم حد سے گزر جاؤگے
میرے چہرے پہ مہکتا ہوا، آنچل کردو

یہ میرا جسم ہی کیا جاں بھی تمھاری ہے شمیم
اپنی آغوش میں بھر کر مجھے مکمل کردو

شمیم اختر
[/align]
 
Top