انداز

زنیرہ عقیل

منتظم اعلی۔ أیدہ اللہ
Staff member
منتظم اعلی

سنتے ہیں اس گلی میں

اک شخص منحنی سا

کچھ رنگ گندمی سا

ہونٹوں پہ مسکراہٹ

آنکھوں میں کچھ نمی سی

باتوں میں زندگی سی

کچھ دن سے آبسا ہے

تم جس کو ڈھونڈتے ہو

یہ شخص وہ نہیں ہے

وہ شخص اب کہاں ہے؟​
 

احمدقاسمی

منتظم اعلی۔ أیدہ اللہ
Staff member
منتظم اعلی

سنتے ہیں اس گلی میں

اک شخص منحنی سا

کچھ رنگ گندمی سا

ہونٹوں پہ مسکراہٹ

آنکھوں میں کچھ نمی سی

باتوں میں زندگی سی

کچھ دن سے آبسا ہے

تم جس کو ڈھونڈتے ہو

یہ شخص وہ نہیں ہے

وہ شخص اب کہاں ہے؟​
وہ شخص تیر جفا کا شکار بستی بستی، نگری نگری گاؤں گاؤں پھرتا ہے مارا مارا
 

زنیرہ عقیل

منتظم اعلی۔ أیدہ اللہ
Staff member
منتظم اعلی
نگری نگری پھرا مسافر گھر کا رستا بھول گیا
کیا ہے تیرا کیا ہے میرا اپنا پرایا بھول گیا
کیا بھولا کیسے بھولا کیوں پوچھتے ہو بس یوں سمجھو
کارن دوش نہیں ہے کوئی بھولا بھالا بھول گیا
 

احمدقاسمی

منتظم اعلی۔ أیدہ اللہ
Staff member
منتظم اعلی
نگری نگری پھرا مسافر گھر کا رستا بھول گیا
کیا ہے تیرا کیا ہے میرا اپنا پرایا بھول گیا
کیا بھولا کیسے بھولا کیوں پوچھتے ہو بس یوں سمجھو
کارن دوش نہیں ہے کوئی بھولا بھالا بھول گیا
واہ واہ ۔بھولا بھالا بھول گیا
نگری نگری پھرا مسافر گھر کا رستا بھول گیا
 

احمدقاسمی

منتظم اعلی۔ أیدہ اللہ
Staff member
منتظم اعلی
عالم یا علم زاد کا شیشہ دیکھنے میں کیا قباحت ہے جس کی تلاش ہے خود کو وہیں پا لیں گے
ہمارے یہاں بطور طنز ،میاں شیشہ دیکھو مستعمل ہے۔خصوصا جب ایک جوان دوشیزہ دوسرے خوبرو کو کہے۔ویسے اس طرح کی لڑکیوں کو کلوز کر دینا چاہئیے جو بد مزگی کا سبب ھوں
 
Top