خیر'اظہار تمنامیں خسارہ ہی سہی

جمشید

وفقہ اللہ
رکن
غزل​

درد، ایک حد سے گزر کر ہی مزادیتاہے
یہ ہے توفیق جسے چاہے خدا دیتاہے

خیر'اظہار تمنامیں خسارہ ہی سہی
صبر یہ کب ہے کہ دیکھیں کہ وہ کیادیتاہے​

کوئی شے اورہے وہ دست حنائی اے چشم!
ایسی ٹھنڈک بھی کوئی شعلہ بھلادیتاہے

قید مکتب ہوں طفلان غم دنیا جب
ایک تصورتراگھنٹی سی بجادیتاہے​

مرض عشق میں بہترہے دوا سے پرہیز
ہرعلاج اس میں مرض اوربڑھادیتاہے

اب نہ بیمارہی ہم ہوتے ہیں پہلے جیسے
اورنہ عطار کا لڑکاہی دوایتاہے​
 

راجہ صاحب

وفقہ اللہ
رکن
یہ ہے توفیق جسے چاہے خدا دیتاہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

واہ کیا خوب کہا ہے
 

سیما

وفقہ اللہ
رکن
درد، ایک حد سے گزر کر ہی مزادیتاہے
یہ ہے توفیق جسے چاہے خدا دیتاہے

بہت خوب
 
Top