بندہء مزدور کو جا کر مرا پيغام دے

گلاب خان

وفقہ اللہ
رکن
برترِ از انديشہء سود و زياں ہے زندگي
! ہے کبھي جاں اور کبھي تسليمِ جاں ہے زندگي

تو اسے پيمانہ امروز و فردا سے نہ ناپ
! جاوداں پيہم دواں، ہر دم جواں ہے زندگي

اپني دنيا آپ پيدا کر اگر زندوں ميں ہے
! سِرِّ آدم ہے ضميرِ کن فکاں ہے زندگي

زندگاني کي حقيقت کوہکن کے دل سے پوچھ
! جوئے شير و تيشہ و سنگِ گراں ہے زندگي

بندگي ميں گھٹ کے رہ جاتي ہے اک جوئے کم آب
اور آزادي ميں بحرِ بے کراں ہے زندگي

آشکارا ہے يہ اپني قوّتِ تسخير سے
گرچہ اک مٹّي کے پيکر ميں نہاں ہے زندگي

قلزمِ ہستي سے تو ابھرا ہے مانندِ حباب
اس زياں خانے ميں تيرا امتحاں ہے زندگي

خام ہے جب تک تو ہے مٹّي کا اک انبار تو
! پختہ ہو جائے تو ہے شمشير بے زنہار تو

ہو صداقت کے ليے جس دل ميں مرنے کي تڑپ
پہلے اپنے پيکرِ خاکي ميں جاں پيدا کرے

پھونک ڈالے يہ زمين و آسمانِ مستعار
اور خاکستر سے آپ اپنا جہاں پيدا کرے

زندگي کي قوّتِ پنہاں کو کر دے آشکار
تا يہ چنگاري فروغِ جاوداں پيدا کرے

خاکِ مشرق پر چمک جائے مثالِ آفتاب
تا بدخشاں پھر وہي لعلِ گراں پيدا کرے

سوئے گردوں نالہء شب گير کا بھيجے سفير
رات کے تارں ميں اپنے رازداں پيدا کرے

! يہ گھڑي محشر کي ہے تو عرصہء محشر ميں ہے
! پيش کر غافل عمل کوئي اگر دفتر ميں ہے


[size=x-large]
بندہء مزدور کو جا کر مرا پيغام دے
خضر کا پيغام کيا، ہے يہ پيامِ کائنات

اے کہ تجھ کو کھا گيا سرمايہ دارِ حيلہ گر
! شاخِ آہو پر رہي صديوں تلک تيري برات

دستِ دولت آفريں کو مزد يوں ملتي رہي
اہلِ ثروت جيسے ديتے ہيں غريبوں کو زکات

ساحرِ اَلمُوط نے تجھ کو ديا برگِ حشيش
! اور تو اے بے خبر سمجھا اسے شاخِ نبات

نسل، قوميت، کليسا، سلطنت، تہذيب، رنگ
’خواجگي’ نے خوب چن چن کے بنائے مُسکِرات

کٹ مرا ناداں خيالي ديوتاؤں کے ليے
سُکرکي لذت ميں تو لٹوا گيا نقدِ حيات

مکر کي چالوں سے بازي لے گيا سرمايہ دار
انتہائے سادگي سے کھا گيا مزدور مات

اٹھ کہ اب بزمِ جہاں کا اور ہي اندازہے
مشرق و مغرب ميں تيرے دور کا آغاز ہے

ہمتِ عالي تو دريا بھي نہيں کرتي قبول
! غنچہ ساں غافل ترے دامن ميں شبنم کب تلک

نغمہء بيدارئ جمہور ہے سامانِ عيش
قصّہء خواب آورِ اسکندر و جم کب تلک

آفتابِ تازہ پيدا بطنِ گيتي سے ہوا
! آسماں! ڈوبے ہوئے تاروں کا ماتم کب تلک

توڑ ڈاليں فطرتِ انساں نے زنجيريں تمام
دورئ جنت سے روتي چشمِ آدم کب تلک

باغبانِ چارہ فرما سے يہ کہتي ہے بہار
زخمِ گل کے واسطے تدبير مرہم کب تلک؟

کرمکِ ناداں طوافِ شمع سے آزاد ہو
! اپني فطرت کے تجلي زار ميں آباد ہو
 
Top