آہ پھر نغمہ بنا چاہتی ہے : ناصر کاظمی

admin

منتظم اعلی۔ أیدہ اللہ
منتظم اعلی


آہ پھر نغمہ بنا چاہتی ہے
خامشی طرزِ ادا چاہتی ہے

آج پھر وسعتِ صحراۓ جنوں
پرسشِ آبلہ پا چاہتی ہے

دیکھ کیفیّتِ طوفانِ بہار
بوۓ گل رنگِ ہوا چاہتی ہے

موت آرائشِ ہستی کے لۓ
خندۂ زخمِ وفا چاہتی ہے

دل میں اب خارِ تمنّا بھی نہیں
زندگی برگ و نوا چاہتی ہے

سوچ اے دشمنِ اربابِ وفا
کیوں تجھے خلقِ خدا چاہتی ہے

اک ہمیں بارِ چمن ہیں ورنہ
غنچے غنچے کو صبا چاہتی ہے


ناصر کاظمی​
 
Top