الفرق بين تخريج الحديث وتخريج الرواية التفسيرية

محمد نعمان

وفقہ اللہ
رکن
السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

مسئلہ عدم رفع یدین پر احناف علماء اپنی دلیل میں تفسیر ابن عباس پیش کرتے ہیں جس کی ایک آیت کی تفسیر میں نماز میں خشوع کا مطلب نماز میں رفع یدین نہ کرنا بھی مذکور ہے۔ اسی تفسیر ابن عباس پر غیر مقلدین اعتراض کرتے ہیں اور اس تفسیر کی سند کو سلسلۃ الکذب قرار دے کر اس تفسیر سے روایت لینے کو دھوکہ باور کراتے ہیں۔

ہمارے علماء نے اس اعتراض کا بھی جواب دیا جس کا خلاصہ یہ ہے کہ اس تفسیر کے راویوں پر جو جرح ہے وہ علم حدیث کے حوالے سے ہے اور تفسیر میں انہی روات سے روایت لینے کو جائز قرار دیا ہے۔

یہی اصول یحییٰ ابن سعید بن قطان وغیرہما سے پیش کیا جاتا ہے۔ اس پر ایک غیر مقلد نے جواب میں جواب دیا مگر وہ عربی میں ہے۔ مجحے اسکا ترجمہ یا اس مضمون کا خلاصہ اردو میں عنایت فرما دیں کہ اس میں کیا موقف اختیار کیا گیا ہے۔

مضمون یہ ہے:
الجواب للأخ خالد الشوربجي:
الحمد لله، والصلاة والسلام على رسول الله، وعلى آله وصَحْبِه ومن والاه، أمَّا بعدُ:
فإن الفارق بين تخريج الحديث - إذا كان في الأحكام أو غيرها - وبين تخريج الرواية التفسيرية عند أهل الشأن -: أن التَّحَرِّي في أسانيد التفسير ليس هو الطريقة المتبعة في منهج المحدثين، بخلاف أحاديث الأحكام - الحلال والحرام - والمرفوعات وغيرها، بل لقد نصُّوا على قبُول الروايات التفسيرية على ما فيها من ضعف، وعَمَلُ المحدثين والمفسرين على هذا.
ومن أمثلة ذلك تفسير الإمام أبي جعفر الطبري؛ حيث لا تجد عنده نقدَ أسانيد مرويات التفسير إلا نادرًا؛ لأن هذه الروايات مما تلقاه العلماء بِالْقَبُولِ، وعملوا بها في فَهم كلام الله، ولا يُعترَض عليها إلا في حالة وقوع نكارة، تدعو إلى تَحَرِّي الإسناد.
قال يحي بن سعيد - يعني القَطَّان -: "تساهلوا في التفسير عن قوم لا يوثقونهم في الحديث، ثم ذَكَر لَيْث بْن أَبِى سُلَيْمٍ وجُوَيْبِر بْن سَعِيدٍ والضَّحَّاك".
محمد بن السائب - يعني الكلبي – وقال: "هؤلاء [لا] يُحمد حديثهم ويُكتب".
قال عبد الرحمن بن مَهدي: "إذا روينا في الثواب والعقاب وفضائل الأعمال تساهلنا في الأسانيد، وتسامحنا في الرجال، وإذا روينا في الحلال والحرام والأحكام تشدَّدنا في الأسانيد وانتقدنا الرجال".
وإنما تساهلوا في أخذ التفسير عنهم؛ لأن تفسيرهم تشهد به لغات العرب.
قال الخطيب البَغدادي - في "الجامع لأخلاق الراوي وآداب السامع" ج2/ص194 -:
"إلا أن العلماء قد احتجُّوا في التفسير بقوم لم يحتجوا بهم في مُسند الأحاديث المُتَعَلِّقَةِ بالأحكام؛ وذلك لسوء حفظهم الحديث، وشغلهم بالتفسير؛ فهم بمثابة عاصِم بن أبي النَّجود حيث احتُجَّ به في القراءات دون الأحاديث المُسْنَدَات؛ لغَلَبَة عِلم القُرآن عليه؛ فصرف عنايته إليه".
وقال الذهبي في "ميزان الاعتدال في نقد الرجال" ج2/ص161 -: "قال أبو قدامة السَّرْخَسي: قال يحيى القطان: تساهلوا في أخذ التفسير عن القوم لا تولعوهم في الحديث ثم ذكر لَيْثَ بن أبي سُلَيْم وجُوَيْبِر والضَّحَّاك ومحمد بن السَّائِب وقال: هؤلاء لا يُحْمَد حديثهم، ويكتب التفسير عنهم".
وقال الحافظ في "تهذيب التهذيب" ج2/ص106-: "وقال أبو طالب عن أحمد: ما كان عن الضحاك فهو أيسر، وما كان يُسْنَد عن النبي - صلى الله عليه وسلم - فهو مُنْكَر. وقال عبد الله بن أحمد عن أبيه: كان وَكِيع إذا أتى على حديث جُوَيْبِر قال: سفيان عن رجل لا يسميه؛ استضعافًا. وقال الدُّورِي وغيره عن ابن معين: ليس بشيء. زاد الدُّورِي: ضعيف ما أقربه من جابر الجُعْفِي وعُبَيْدَة الضَّبِّي. وقال عبد الله بن علي بن المَدِيني: سألتُه - يعني أباه - عن جُوَيْبِر؛ فضعفه جدًا. قال: وسمعت أبي يقول: جُوَيْبِر أكثر على الضَّحَّاك، روى عنه أشياءَ مَنَاكير. وذكره يعقوب بن سفيان في باب "من يرغب عن الرواية عنهم". وقال الآجُرِّي عن أبي داود: جُوَيْبِر على ضعفه. وقال النَّسائي وعليُّ بن الجُنَيد والدارقطني: متروك. وقال النسائي في موضعٍ آخر: ليس بثقة. وقال بن عَدِي: والضعف على حديثه ورواياته بَيِّنٌ.
قلت: وقال أحمد بن سَيَّار المروَزِي: جُوَيْبِر بن سعيد كان من أهل بَلْخ وهو صاحب الضحاك، وله رواية ومعرفة بأيام الناس، وحاله حسن في التفسير، وهو لَيِّن في الرواية".
وقال في "البدر المنير" ج4/ص442: "وقال يحيى بن سعيد القطان: الضحاك عندنا ضعيف. وقال مَرَّةً أُخرى: تساهلوا في أخذ التفسير عن قوم لا يوثقوهم في الحديث، ثم ذكر ليثَ بن أبي سُلَيم وجُويبِرًا والضحاك ومحمد بن السائب، وقال: هؤلاء لا يُحْمَد حَدِيثُهُم، ويُكْتَبُ التَّفسير عنهم"،، والله أعلم.

السؤال
السلام عليكم، أرجو من حضراتكم إفادتي في أسرع وقت ببيان الفرق بين تخريج الحديث وتخريج الرواية التفسيرية، والحكم على كلٍّ منهما, مع بيان طريقة ذلك بالشرح والتوضيح؛ وذلك لعدم معرفتي بها على الرغم من حاجتي إليها في رسالتي.
وجزيتم خيرًا .
الجواب
الحمد لله، والصلاة والسلام على رسول الله، وعلى آله وصَحْبِه ومن والاه، أمَّا بعدُ:
فإن الفارق بين تخريج الحديث - إذا كان في الأحكام أو غيرها - وبين تخريج الرواية التفسيرية عند أهل الشأن -: أن التَّحَرِّي في أسانيد التفسير ليس هو الطريقة المتبعة في منهج المحدثين، بخلاف أحاديث الأحكام - الحلال والحرام - والمرفوعات وغيرها، بل لقد نصُّوا على قبُول الروايات التفسيرية على ما فيها من ضعف، وعَمَلُ المحدثين والمفسرين على هذا.
ومن أمثلة ذلك تفسير الإمام أبي جعفر الطبري؛ حيث لا تجد عنده نقدَ أسانيد مرويات التفسير إلا نادرًا؛ لأن هذه الروايات مما تلقاه العلماء بِالْقَبُولِ، وعملوا بها في فَهم كلام الله، ولا يُعترَض عليها إلا في حالة وقوع نكارة، تدعو إلى تَحَرِّي الإسناد.
قال يحي بن سعيد - يعني القَطَّان -: "تساهلوا في التفسير عن قوم لا يوثقونهم في الحديث، ثم ذَكَر لَيْث بْن أَبِى سُلَيْمٍ وجُوَيْبِر بْن سَعِيدٍ والضَّحَّاك"[1].
محمد بن السائب - يعني الكلبي – وقال: "هؤلاء [لا] يُحمد حديثهم ويُكتب"[2].
قال عبد الرحمن بن مَهدي: "إذا روينا في الثواب والعقاب وفضائل الأعمال تساهلنا في الأسانيد، وتسامحنا في الرجال، وإذا روينا في الحلال والحرام والأحكام تشدَّدنا في الأسانيد وانتقدنا الرجال"[3].
وإنما تساهلوا في أخذ التفسير عنهم؛ لأن تفسيرهم تشهد به لغات العرب.
قال الخطيب البَغدادي - في "الجامع لأخلاق الراوي وآداب السامع" ج2/ص194 -:
"إلا أن العلماء قد احتجُّوا في التفسير بقوم لم يحتجوا بهم في مُسند الأحاديث المُتَعَلِّقَةِ بالأحكام؛ وذلك لسوء حفظهم الحديث، وشغلهم بالتفسير؛ فهم بمثابة عاصِم بن أبي النَّجود حيث احتُجَّ به في القراءات دون الأحاديث المُسْنَدَات؛ لغَلَبَة عِلم القُرآن عليه؛ فصرف عنايته إليه".
وقال الذهبي في "ميزان الاعتدال في نقد الرجال" ج2/ص161 -: "قال أبو قدامة السَّرْخَسي: قال يحيى القطان: تساهلوا في أخذ التفسير عن القوم لا تولعوهم في الحديث ثم ذكر لَيْثَ بن أبي سُلَيْم وجُوَيْبِر والضَّحَّاك ومحمد بن السَّائِب وقال: هؤلاء لا يُحْمَد حديثهم، ويكتب التفسير عنهم".
وقال الحافظ في "تهذيب التهذيب" ج2/ص106-: "وقال أبو طالب عن أحمد: ما كان عن الضحاك فهو أيسر، وما كان يُسْنَد عن النبي - صلى الله عليه وسلم - فهو مُنْكَر. وقال عبد الله بن أحمد عن أبيه: كان وَكِيع إذا أتى على حديث جُوَيْبِر قال: سفيان عن رجل لا يسميه؛ استضعافًا. وقال الدُّورِي وغيره عن ابن معين: ليس بشيء. زاد الدُّورِي: ضعيف ما أقربه من جابر الجُعْفِي وعُبَيْدَة الضَّبِّي. وقال عبد الله بن علي بن المَدِيني: سألتُه - يعني أباه - عن جُوَيْبِر؛ فضعفه جدًا. قال: وسمعت أبي يقول: جُوَيْبِر أكثر على الضَّحَّاك، روى عنه أشياءَ مَنَاكير. وذكره يعقوب بن سفيان في باب "من يرغب عن الرواية عنهم". وقال الآجُرِّي عن أبي داود: جُوَيْبِر على ضعفه. وقال النَّسائي وعليُّ بن الجُنَيد والدارقطني: متروك. وقال النسائي في موضعٍ آخر: ليس بثقة. وقال بن عَدِي: والضعف على حديثه ورواياته بَيِّنٌ.
قلت: وقال أحمد بن سَيَّار المروَزِي: جُوَيْبِر بن سعيد كان من أهل بَلْخ وهو صاحب الضحاك، وله رواية ومعرفة بأيام الناس، وحاله حسن في التفسير، وهو لَيِّن في الرواية".
وقال في "البدر المنير" ج4/ص442: "وقال يحيى بن سعيد القطان: الضحاك عندنا ضعيف. وقال مَرَّةً أُخرى: تساهلوا في أخذ التفسير عن قوم لا يوثقوهم في الحديث، ثم ذكر ليثَ بن أبي سُلَيم وجُويبِرًا والضحاك ومحمد بن السائب، وقال: هؤلاء لا يُحْمَد حَدِيثُهُم، ويُكْتَبُ التَّفسير عنهم"،، والله أعلم.
ـــــــــــــــــــــ
[1] "دلائل النبوة" ج1/ص36.
[2] "دلائل النبوة" ج1/ص37.
[3] "دلائل النبوة" ج1/ص43.
رابط الموضوع:
http://www.alukah.net/fatawa_counsels/0/14193/#ixzz2WNNCYV84
 

احمدقاسمی

منتظم اعلی۔ أیدہ اللہ
Staff member
منتظم اعلی
داؤد بھائی سے عرض ہے کہ اپنے مدرسہ کے کسی استاذ سے اس عبارت کا تر جمہ کرا کے محمد نعمان صاحب کو ارسال کردیں ۔
 

محمدداؤدالرحمن علی

منتظم اعلی۔ أیدہ اللہ
Staff member
منتظم اعلی
السلام علیکم

جناب قاسمی بھائی ۔ ہمارے ہاں مدارس میں چھٹیاں ہوچکی ہیں۔ کوئی استاد اس وقت یہاں موجود نہیں ہے۔ اور میں خود سفر میں ہوں۔ ورنہ بھائیوں سے یا والد صاحب سے کرا دیتا۔ اس لیے میں معذرت خواہ ہوں۔

والسلام
 

خادمِ اولیاء

وفقہ اللہ
رکن
یہ لیں جی ترجمہ جو میں نے گوگل کی مدد سے حاصل کیا
میرے پاس بھی وقت نہایت محدود ہوتاہے ورنہ بحمدہ تعالیٰ پورا ترجمہ کرسکتاہوں
البۃ اگر چند ایام مل جائیں تو ترجمہ حاضر کردوں گا۔ ان شاء اللہ۔ اس لیے کہ تھوڑا وقت نکال کر کچھ تھوڑا تھوڑا کرکے ترجمہ کرتاہوں گا۔
والسلام:​
بھائی کا جواب Shorbaji خالد:
اللہ للہ، اور امن و علیہ وسلم اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم اور ان کی آل اور صحابہ اور اتحادیوں، صلی اللہ علیہ وسلم لیکن بعد:
گریجویشن کی بات کے درمیان فرق - فیصلے یا دوسرے میں تو - اور لوگ سمجھتے جب وضاحتی ناول کے گریجویشن: - حلال اور حرام - - تشریح کی بنیاد میں تحقیقات مکالمات دفعات کے برعکس، جدت کے نصاب میں استعمال کا طریقہ نہیں ہے اور یہ کہ اس Almerfoat اور دوسروں کو، لیکن میں قبول کرنے کے لئے نصوا ہے وضاحتی ڈبل پر کہانیاں، اور اس پر جدید مبصرین کے کام.
مثال کے طور پر امام ابو جعفر الطبری کا فرمان ہے شامل ہیں؛ شرائط صرف شاذ و نادر ہی اس مرويات تشریح تنقید کی بنیادوں کو تلاش نہیں ہے، سائنسدانوں کو موصول ہوئی ہے جس میں ان کے ناول، قبول کر لیا، اور صرف نكارة کی صورت میں اس کے خلاف نہیں خدا کا وعدہ، کی سمجھ میں کام کیا، انتساب کی تحقیقات کے لئے بلاتا ہے.
یحیی بن سعید رحمہ اللہ - کا مطلب-Qattan -: "لوک کی تشریح میں Tsahluwa بات کرنے کے لئے Aothagounam نہیں ہے، تو پھر Laith بن ابی سلیم اور جويبر بن نے کہا کہ Dahhaak نے کہا کہ".
محمد بن بلک - معنی کینائن - اور کہا: "یہ ان باتوں کی تعریف اور لکھنے [نہیں]."
عبد الرحمان بن مہدی نے کہا: "تو ثواب اور عذاب فضائل کاروبار بنیادوں میں Tzhlna، اور مردوں میں رواداری میں Rowena، اور اگر Rowena حلال اور حرام اور بنیاد تنقید کا نشانہ بنایا اور مردوں میں دفعات تشددنا."
لیکن ان کی تشریح کرنے میں Tsahluwa؛ ان کی تشریح عرب زبانوں طرف سے تصدیق شدہ ہے.
خطیب بغدادی رحمہ اللہ تعالی نے کہا - "پورے راوی اخلاقیات اور سننے کی اخلاقیات" C 2 / r کی 194 میں: -
"تاہم، سائنسدانوں کھجور کی بات چیت سے متعلق دفعات میں ان کو پکارتے نہیں کیا کسی قوم کی تشریح میں احتجاج کیا ہے اور اتنی بیمار ان سے، ان کا کام تشریح بات کو بچانے کے، سائنس قرآن پاک اس کی برتری کے لئے؛ مکالمات predicates بغیر ریڈنگ میں احتجاج کیا جہاں عاصم بن ابی highlands کے طور پر افہام و تفہیم فصرف ان کی توجہ اس کے کرنے کے لئے" .
"سنن ابو Qudamah Sarkhasi نے کہا کہ: یحیی Qattan نے کہا کہ: Tsahluwa تو بات کرنے کے لئے Tolauhm نہیں لوگوں کے لئے وضاحت لینے اور Laith بن ابی آواز اور جويبر اور Dahhaak اور محمد بن بلک اور کہا کہ نے کہا کہ: وہ ایسا نہیں کرتے -: وہ سنہری" مردوں کی تنقید میں اعتدال پسندی کے توازن، "ج / 2 ص 161 نے کہا کہ ان باتوں کی تعریف، اور ان کی تشریح لکھتے ہیں. "
"ٹھیک دھن تہذیب" میں حافظ ج 2 / P 106: - "امام احمد ابو Taleb نے کہا: تمام Dahhaak ACER ہے تھا، اور نبی صلی اللہ علیہ تفویض کیا گیا تھا کیا - صلی اللہ علیہ وسلم - وہ برا اورشریر ہے، اپنے والد سے عبداللہ بن احمد نے کہا: وہ اور کآ آپ جويبر بات کرنے کے لئے آئے ہیں تو انہوں نے کہا کہ: ایک آدمی کے لئے سفیان کال نہیں رکھتا؛ کمزور لیگ اور دیگر مخصوص from'm نے کہا کہ:. یہ کچھ نہیں ہے میں اضافہ ہوا لیگ: جابر Aljafee اور Obeida Dabbi کے غریب کیا Oqrabh عبداللہ بن علی بن شہری نے کہا: میں نے اس سے پوچھا - میرا مطلب ہے، ان کے والد - . "ان کے بارے میں ناول کی خواہشات کے". مزید جويبر بھی Vdafh نے کہا: میں نے اپنے والد کو کہتے سنا جويبر Dahhaak پر زیادہ، روایت چیزوں کے منکر بھی دروازے میں یعقوب بن سفیان کی طرف سے ذکر کیا گیا تھا Aajurri ابو داود رحمہ اللہ سے کہا: جويبر کمزوری پر خواتین اور علی بن نے کہا ہے کہ جنید اور Daaraqutni: اپ خواتین دوسری جگہ میں نے کہا: نہیں اعتماد بیٹے کے ساتھ ادی نے کہا: ان کے ناولوں پر کمزوری.
میں نے کہا: احمد بن Sayar Marwazi نے کہا کہ:. جويبر بن بلخ کے عوام ایک Dahhaak مالک کی طرف سے کیا گیا تھا، لوگوں کو معلوم کرنے کے لئے ایک ناول اور چند دنوں ہے، اور فرمان ہے، ناول میں ایک لائن میں اچھی صورت حال نے کہا کہ "
"یحیی بن سید امام Qattan نے کہا: انہوں نے کہا کہ ج 4 / P 442" بدر روشن "میں کہا ہے کہ Dahhaak ہماری کمزور دوبارہ نے کہا: Tsahluwa بات کرنے کے لئے Aothagohm نہیں کرتے لوگوں کے لیے جو وضاحت لینے کے لئے، پھر Laith بن ابی آواز اور Joibera اور Dahhaak اور محمد بن بلک کہا، اور کہا کہ: انہوں نے اپنی بات کی تعریف، اور ان کی تشریح لکھتے ہیں، "اور خدا سب سے بہتر جانتا ہے کہ نہیں ہے.

سوال
اپنے خط میں علم کی کمی کی وجہ سے میں کرنے کی ضرورت ہے اگرچہ؛ ہیلو، میں وضاحت اور وضاحت اس طرح کے ایک اشارہ کے ساتھ، اپنے آپ کو جدید گریجویشن کی اور گریجویشن وضاحتی بیان کے درمیان فرق پر ایک بیان کے طور پر جیسے ہی میں مجھے مشورہ دے، اور ایک دوسرے کا فیصلہ کر سکتے ہیں امید ہے.
اور Dzeetm اچھا ہے.
جواب
اللہ للہ، اور امن و علیہ وسلم اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم اور ان کی آل اور صحابہ اور اتحادیوں، صلی اللہ علیہ وسلم لیکن بعد:
گریجویشن کی بات کے درمیان فرق - فیصلے یا دوسرے میں تو - اور لوگ سمجھتے جب وضاحتی ناول کے گریجویشن: - حلال اور حرام - - تشریح کی بنیاد میں تحقیقات مکالمات دفعات کے برعکس، جدت کے نصاب میں استعمال کا طریقہ نہیں ہے اور یہ کہ اس Almerfoat اور دوسروں کو، لیکن میں قبول کرنے کے لئے نصوا ہے وضاحتی ڈبل پر کہانیاں، اور اس پر جدید مبصرین کے کام.
مثال کے طور پر امام ابو جعفر الطبری کا فرمان ہے شامل ہیں؛ شرائط صرف شاذ و نادر ہی اس مرويات تشریح تنقید کی بنیادوں کو تلاش نہیں ہے، سائنسدانوں کو موصول ہوئی ہے جس میں ان کے ناول، قبول کر لیا، اور صرف نكارة کی صورت میں اس کے خلاف نہیں خدا کا وعدہ، کی سمجھ میں کام کیا، انتساب کی تحقیقات کے لئے بلاتا ہے.
یحیی بن سعید رحمہ اللہ - کا مطلب-Qattan -: "لوک کی تشریح میں Tsahluwa بات کرنے کے لئے Aothagounam نہیں کرتے، پھر Laith بن ابی سلیم اور جويبر بن نے کہا کہ اور Dahhaak" [1].
محمد بن بلک - معنی کینائن - اور کہا کہ: [2] "یہ تعریف بولنے والے [نہیں]، اور لکھتے ہیں".
عبد الرحمان بن مہدی نے کہا: "تو ثواب اور عذاب فضائل کاروبار بنیادوں میں Tzhlna، اور مردوں میں رواداری میں Rowena، اور اگر Rowena حلال اور حرام اور بنیاد میں دفعات تشددنا اور تنقید کا نشانہ بنایا مردوں" [3].
لیکن ان کی تشریح کرنے میں Tsahluwa؛ ان کی تشریح عرب زبانوں طرف سے تصدیق شدہ ہے.
خطیب بغدادی رحمہ اللہ تعالی نے کہا - "پورے راوی اخلاقیات اور سننے کی اخلاقیات" C 2 / r کی 194 میں: -
"تاہم، سائنسدانوں کھجور کی بات چیت سے متعلق دفعات میں ان کو پکارتے نہیں کیا کسی قوم کی تشریح میں احتجاج کیا ہے اور اتنی بیمار ان سے، ان کا کام تشریح بات کو بچانے کے، سائنس قرآن پاک اس کی برتری کے لئے؛ مکالمات predicates بغیر ریڈنگ میں احتجاج کیا جہاں عاصم بن ابی highlands کے طور پر افہام و تفہیم فصرف ان کی توجہ اس کے کرنے کے لئے" .
"سنن ابو Qudamah Sarkhasi نے کہا کہ: یحیی Qattan نے کہا کہ: Tsahluwa تو بات کرنے کے لئے Tolauhm نہیں لوگوں کے لئے وضاحت لینے اور Laith بن ابی آواز اور جويبر اور Dahhaak اور محمد بن بلک اور کہا کہ نے کہا کہ: وہ ایسا نہیں کرتے -: وہ سنہری" مردوں کی تنقید میں اعتدال پسندی کے توازن، "ج / 2 ص 161 نے کہا کہ ان باتوں کی تعریف، اور ان کی تشریح لکھتے ہیں. "
"ٹھیک دھن تہذیب" میں حافظ ج 2 / P 106: - "امام احمد ابو Taleb نے کہا: تمام Dahhaak ACER ہے تھا، اور نبی صلی اللہ علیہ تفویض کیا گیا تھا کیا - صلی اللہ علیہ وسلم - وہ برا اورشریر ہے، اپنے والد سے عبداللہ بن احمد نے کہا: وہ اور کآ آپ جويبر بات کرنے کے لئے آئے ہیں تو انہوں نے کہا کہ: ایک آدمی کے لئے سفیان کال نہیں رکھتا؛ کمزور لیگ اور دیگر مخصوص from'm نے کہا کہ:. یہ کچھ نہیں ہے میں اضافہ ہوا لیگ: جابر Aljafee اور Obeida Dabbi کے غریب کیا Oqrabh عبداللہ بن علی بن شہری نے کہا: میں نے اس سے پوچھا - میرا مطلب ہے، ان کے والد - . "ان کے بارے میں ناول کی خواہشات کے". مزید جويبر بھی Vdafh نے کہا: میں نے اپنے والد کو کہتے سنا جويبر Dahhaak پر زیادہ، روایت چیزوں کے منکر بھی دروازے میں یعقوب بن سفیان کی طرف سے ذکر کیا گیا تھا Aajurri ابو داود رحمہ اللہ سے کہا: جويبر کمزوری پر خواتین اور علی بن نے کہا ہے کہ جنید اور Daaraqutni: اپ خواتین دوسری جگہ میں نے کہا: نہیں اعتماد بیٹے کے ساتھ ادی نے کہا: ان کے ناولوں پر کمزوری.
میں نے کہا: احمد بن Sayar Marwazi نے کہا کہ:. جويبر بن بلخ کے عوام ایک Dahhaak مالک کی طرف سے کیا گیا تھا، لوگوں کو معلوم کرنے کے لئے ایک ناول اور چند دنوں ہے، اور فرمان ہے، ناول میں ایک لائن میں اچھی صورت حال نے کہا کہ "
"یحیی بن سید امام Qattan نے کہا: انہوں نے کہا کہ ج 4 / P 442" بدر روشن "میں کہا ہے کہ Dahhaak ہماری کمزور دوبارہ نے کہا: Tsahluwa بات کرنے کے لئے Aothagohm نہیں کرتے لوگوں کے لیے جو وضاحت لینے کے لئے، پھر Laith بن ابی آواز اور Joibera اور Dahhaak اور محمد بن بلک کہا، اور کہا کہ: انہوں نے اپنی بات کی تعریف، اور ان کی تشریح لکھتے ہیں، "اور خدا سب سے بہتر جانتا ہے کہ نہیں ہے.

[1] "نبوت کی نشانیوں" C 1 / r کی 36.
[2] "نبوت کی نشانیوں" C 1 / r کی 37.
[3] "کی پیشن گوئی کی نشانیاں" C 1 / r کی 43.
 

احمدقاسمی

منتظم اعلی۔ أیدہ اللہ
Staff member
منتظم اعلی
اللہ آپ کے علم اور عمل میں برکت عطا فر مائے ۔حسب فرصت ترجمہ کر ہی دیجئے ۔گوگل کا ترجمہ اس طرح ہے:زبان یا ر من ترکی ومن ترکی نمی دانم۔
 

محمد نعمان

وفقہ اللہ
رکن
بہت شکریہ محترم، اگر گوگل اتنا قابل ہوتا اس معاملے میں تو یقین جانئیے میں خوامخواہ کسی کو اتنی تکلیف دیتا ہی نہ۔

ویسے اگر یہاں کوئی مفتی صاحب مجھے اس تفسیر ابن عباس کی حیثیت کے بارے میں بتا سکتا ہے؟ کیوں کہ ہمارے کئی علماء اور مفتیان اس تفسیر کی حیثیت کو تسلیم نہیں کرتے جبکہ ہمارے ہردلعزیز مولانا امین صفدر اوکاڑوی اور آجکل کے ان کے تقش قدم پر چلنے والے مولانا الیاس گھمن صاحب اس تفسیر سے استدلال کرتے ہیں۔ یہ گتھی کوئی سلجھا دے۔ شکریہ
 
Top